உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرناٹک: دو فرقوں کے درمیان پُرتشدد جھڑپ، 18 افراد حراست میں، کیرورو شہر میں دفعہ 144 نافذ

    Communal Violence, Karnataka Violence: افسران نے بتایا کہ انتظامیہ کے ذریعہ سی آر پی سی کی دفعہ 144 کے تحت حکم امتناعی نافذ کئے جانے کے بعد سے اسکول اور کالج جمعہ تک کے لئے بند کردیئے گئے ہیں۔ جے پرکاش نے کہا کہ یہ جھڑپ چھیڑخانی کے سبب ہوئی۔

    Communal Violence, Karnataka Violence: افسران نے بتایا کہ انتظامیہ کے ذریعہ سی آر پی سی کی دفعہ 144 کے تحت حکم امتناعی نافذ کئے جانے کے بعد سے اسکول اور کالج جمعہ تک کے لئے بند کردیئے گئے ہیں۔ جے پرکاش نے کہا کہ یہ جھڑپ چھیڑخانی کے سبب ہوئی۔

    Communal Violence, Karnataka Violence: افسران نے بتایا کہ انتظامیہ کے ذریعہ سی آر پی سی کی دفعہ 144 کے تحت حکم امتناعی نافذ کئے جانے کے بعد سے اسکول اور کالج جمعہ تک کے لئے بند کردیئے گئے ہیں۔ جے پرکاش نے کہا کہ یہ جھڑپ چھیڑخانی کے سبب ہوئی۔

    • Share this:
      باگل کوٹ: باگل کوٹ ضلع کے کیرورو شہر (Karnataka kerur) میں چھیڑ چھاڑ کے ایک معاملے  کی وجہ سے دو فرقوں کے درمیان ہوئے پُرتشدد تصادم کے بعد جمعہ تک لوگوں کے اکٹھا جمع ہونے پر پابندی لگا دی گئی اور حکم امتناعی نافذ کردی گئی ہے۔ افسران نے یہ جانکاری دی۔

      باگل کوٹ کے پولیس سپرنٹنڈنٹ ایس پی جے پرکاش نے صحافیوں کو بتایا کہ بدھ کی شام کو بادامی تالک کے کیرورو شہر میں چھیڑ خانی کو لے کر ہوئے تصادم میں دو بھائیوں سمیت چار لوگ زخمی ہوگئے تھے۔ بعد میں آگ زنی اور توڑ پھوڑ شروع ہوگئی، جس سے شہر کے بازار کا اہم حصہ بند کرنا پڑا۔

      انہوں نے کہا، ’ہم نے اجتماعی تصادم کے سلسلے میں 18 افراد کو حراست میں لیا ہے اور چار معاملے درج کئے ہیں۔ بادامی کے تحصیل دار نے کل رات آٹھ بجے تک حکم امتناعی نافذ کردی ہے‘۔

      انہوں نے یہ بھی کہا کہ معاملے میں شامل کچھ دیگر ملزمین کی تلاش کی جا رہی ہے۔ زخمیوں کو اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے، جہاں ان کی حالت مستحکم بتائی جارہی ہے۔

      افسران نے بتایا کہ انتظامیہ کے ذریعہ سی آر پی سی کی دفعہ 144 کے تحت حکم امتناعی نافذ کئے جانے کے بعد سے اسکول اور کالج جمعہ تک کے لئے بند کردیئے گئے ہیں۔ جے پرکاش نے کہا کہ یہ جھڑپ چھیڑخانی کے سبب ہوئی۔

      پولیس افسر نے لوگوں سے تعاون کرنے اور قانون اپنے ہاتھ میں نہیں لینے کی اپیل کی۔ پولیس سپرنٹنڈنٹ نے آگاہ کرتے ہوئے کہا، ’معاملہ صرف چھیڑ خانی سے جڑا ہے اور سوشل میڈیا کے ذریعہ کوئی بھی غلط اطلاع نہیں پھیلائی جانی چاہئے‘۔ جے پرکاش نے کہا کہ لا اینڈ آرڈر بنائے رکھنے کے لئے متاثرہ علاقوں میں اضافی سیکورٹی فورس کو تعینات کیا گیا ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: