ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

سپریم کورٹ میں فوجی افسران کو لے کر مرکزی حکومت کی دلیل ملک کی ہر خاتون کی توہین : راہل گاندھی

ادھر پرینکا گاندی واڈرا نے کہا کہ سپریم کورٹ کے تاریخی فیصلے نے ملک کی خواتین کی پرواز کو نئے پنکھ دیئے ہیں ۔ خواتین اہل ہیں ۔ فوج میں ، بہادری میں اور بحر و بر و فضاؤں میں ۔ متعصبانہ ہوکر خواتین کی طاقت کی مخالفت کرنے والی مودی حکومت کو یہ سخت جواب ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Feb 17, 2020 05:55 PM IST
  • Share this:
سپریم کورٹ میں فوجی افسران کو لے کر مرکزی حکومت کی دلیل ملک کی ہر خاتون کی توہین : راہل گاندھی
راہل گاندھی ۔ فائل فوٹو ۔

کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی اور پارٹی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے سپریم کورٹ کی خاتون فوجی افسران کو مستقل کمیشن دینے کےفیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے پیر کو حکومت پر نشانہ سادھا اور کہا کہ عدالت میں حکومت نے اس معاملہ میں جو دلیل دی ، اس سے ملک کی ہر خاتون کی بےعزتی ہوئی ہے۔ راہل گاندھی نے ٹوئٹ کیا کہ سپریم کورٹ میں دی گئی سرکار کی دلیل نےملک کی ہر خاتون کی توہین کی ہے۔


راہل گاندھی کے مطابق حکومت نے عدالت میں کہا تھا کہ خواتین کمانڈ پوسٹ یا مستقل سروس کیلئے مناسب نہیں ہیں ، کیونکہ مردوں کے مقابلے میں خواتین کمزور ہیں ۔ میں ہندوستانی خواتین کو مضبوطی کے ساتھ کھڑے ہونے اور حکومت کی دلیل کو غلط ثابت کرنے کیلئے مبارک باد دیتا ہوں۔




ادھر پرینکا گاندی واڈرا نے کہا کہ سپریم کورٹ کے تاریخی فیصلے نے ملک کی خواتین کی پرواز کو نئے پنکھ دیئے ہیں ۔ خواتین اہل ہیں ۔ فوج میں ، بہادری میں اور بحر و بر و فضاؤں میں ۔ متعصبانہ ہوکر خواتین کی طاقت کی مخالفت کرنے والی مودی حکومت کو یہ سخت جواب ہے۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نےاپنے فیصلے میں کہا ہے کہ کمبیٹ برانچوں کو چھوڑ کر دیگر شاخوں میں خاتون فوجی افسران کو مستقل کمیشن دینا ضروری ہے ۔ خواتین کو مستقل کمیشن نہیں دینا قدیم روایتوں اور خواتین کےتئیں متعصبانہ ہے ، کیونکہ مردوں کے ساتھ خواتین کندھے سے کندھا ملا کر کام کرتی ہیں۔
First published: Feb 17, 2020 05:55 PM IST