ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

بھوپال: پٹرول اور ڈیزل کی مہنگائی کے خلاف کانگریسیوں نے مانگی بھیک

مدھیہ پردیش کانگریس کمیٹی کے نائب صدر ابھینو پرولیا کہتے ہیں کہ ہم نے بھوپال کی سڑکوں پر بھیک مانگ کر احتجاج اس لئےکیا ہے تاکہ سرکار کو بتائیں کہ مہنگائی سے عام انسانوں پر کتنا اثر پڑرہا ہے۔ ملک میں سب سے مہنگا پٹرول مدھیہ پردیش میں مل رہا ہے۔

  • Share this:
بھوپال: پٹرول اور ڈیزل کی مہنگائی کے خلاف کانگریسیوں نے مانگی بھیک
بھوپال: پٹرول اور ڈیزل کی مہنگائی کے خلاف کانگریسیوں نے مانگی بھیک

بھوپال: مدھیہ پردیش اسمبلی ضمنی انتخابات کے پیش نظر عوام کی توجہ کا مرکز بننے کے لئے سیاسی پارٹیاں منفرد انداز میں احتجاج کر رہی ہیں۔ یہ سچ ہےکہ ملک میں 17 دنوں سے مسلسل ڈیزل اور پٹرول کی قیمتوں میں مسلسلہ اضافہ جاری ہے اور اس اضافہ کا اثر ضروری اشیا کی تمام چیزوں پر پڑا ہے۔ دو مہینے کے لاک ڈاؤن اور اس پر بڑھتی مہنگائی نے شہریوں کی کمر تو ایسے ہی توڑ دی تھی اس پر بھی 17 دنوں سے پٹرول اور ڈیزل کی بڑھتی قیمتوں نے عام شہریوں پر عرصہ حیات تنگ کردیا ہے۔ اسی ضمن میں کانگریس نے آج بھوپال میں بھیک مانگ کر احتجاج کیا ہے۔

مدھیہ پردیش کانگریس کمیٹی کے نائب صدر ابھینو پرولیا کہتے ہیں کہ ہم نے بھوپال کی سڑکوں پر بھیک مانگ کر احتجاج اس لئےکیا ہے تاکہ سرکار کو بتائیں کہ مہنگائی سے عام انسانوں پر کتنا اثر پڑرہا ہے۔ ملک میں سب سے مہنگا پٹرول مدھیہ پردیش میں مل رہا ہے اگر یہی اچھے دن ہیں تو ہمیں ایسے دن چاہئے، ہمیں وہی دن لوٹا دیجئے جو پہلے تھے کم سے مڈل کلاس کے لوگ سکون کی روٹی تو کھا رہے تھے۔

وہیں بی جے پی کے قومی جنرل سکریٹری اورسابق وزیر کیلاش وجے ورگیہ کہتے ہیں کہ کانگریس کے پاس کوئی کام نہیں ہے کیا کریں گے، احتجاج آندولن ہی کریں گے، کرنے دیجئے۔ کانگریس اپنی زمین کھوچکی ہے ناٹک کرکے عوام کے بیچ پہنچنا چاہتی ہے۔ کانگریس کے ڈھونگ کو عوام اچھی طرح سے جانتے ہیں۔ ضمنی انتخابات میں اس کا کوئی اثر نہیں پڑےگا۔ بی جے پی سبھی 24 سیٹیں جیتے گی۔


کیلاش وجے ورگیہ کہتے ہیں کہ کانگریس کے پاس کوئی کام نہیں ہے کیا کریں گے، احتجاج آندولن ہی کریں گے، کرنے دیجئے۔
کیلاش وجے ورگیہ کہتے ہیں کہ کانگریس کے پاس کوئی کام نہیں ہے کیا کریں گے، احتجاج آندولن ہی کریں گے، کرنے دیجئے۔


بھوپال کانگریس ایم ایل اے عارف مسعود نے بھی مہنگائی اور ڈیزل و پیٹرول کی بڑھی قیمتوں کے خلاف بھوپال میں ٹھیلے پر گاڑیاں رکھ کر احتجاج کیا۔ عارف مسعود کہتے ہیں کہ اس سرکار نے بے شرمی کے سارے ریکارڈ توڑ دیئے ہیں۔ اس نے طے کر رکھا ہے کہ عوامی مفاد کی کسی بات کو سننا ہی نہیں ہے۔ مہنگائی بڑھتی جا رہی ہے اور سرکار اقتدار کے نشے میں چور ہے۔ کورونا کو کنٹرول کرنے کے بڑے بڑے دعوے کئے جا رہے ہیں، لیکن راجدھانی بھوپال میں روز آنہ پچاس سے ساٹھ کے قریب کورونا کے نئے معاملے سامنے آرہے ہیں ۔ جب راجدھانی جہاں پر وزیر اعلیٰ اور وزیر صحت اور تمام محکموں کے ہیڈ بیٹھے ہیں وہاں پر یہ صورتحال ہے تو باقی مدھیہ پردیش کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔
مدھیہ پردیش کے وزیر صحت اور وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا کہتے ہیں کہ کانگریس کو احتجاج کرنےکا حق ہی نہیں ہے۔ یہ وہی پارٹی ہے، جس نے پٹرول اور ڈیزل کی قیمت کم کرنے کا نہ صرف اعلان کیا تھا بلکہ اپنے انتخابی منشور میں بھی اس کو شامل کیا تھا۔ 15 مہینے کی سرکار میں ایسا کچھ نہیں کیا گیا، جن کے گھر شیشے کے ہوتے ہیں وہ دوسروں کے گھر پر پتھر پھینکیں گے کیا۔
یہاں یہ بات بھی سچ ہے کہ مدھیہ پردیش کی 230 رکنی اسمبلی میں 24 سیٹیں خالی ہیں، جن پر ضمنی انتخابات ہونا ہے۔ ان 24 سیٹوں میں سے 22 سیٹیں وہ ہیں، جن پر سندھیا حامی اراکین اسمبلی نے کمل ناتھ سے ناراضگی کے سبب  استعفیٰ دے دیا تھا اور باقی دو سیٹیں ممبران اسمبلی کے انتقال ہو جانے کی وجہ سے خالی ہیں۔ دونوں ہی پارٹیوں کی نظر اسمبلی کی 24 سیٹوں کے ضمنی انتخابات پر ہیں۔ بی جے پی ان سیٹوں کو جیت کر جہاں اقتدار میں بنی رہنا چاہتی ہے وہیں کانگریس ان 24 سیٹوں کو جیت کر اقتدار میں واپسی کا راستہ دیکھ رہی ہے۔
First published: Jun 23, 2020 08:59 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading