کانگریس کا سرکار پر کم از کم امدادی قیمت کے نام پر ڈھونگ کر نے کا الزام

نئی دہلی۔ کانگریس پارٹی نے حکومت کی طرف سے حال ہی میں مختلف فصلوں کے لئے طے شدہ امدادی قیمت (منیمم سپورٹنگ پرائز-ایم ایس پی) کو ناکافی قرار دیتے ہوئے آج پارلیمنٹ کے کیمپس میں مظاہرہ کیا۔

Jul 19, 2018 12:40 PM IST | Updated on: Jul 19, 2018 12:40 PM IST
کانگریس کا سرکار پر کم از کم امدادی قیمت کے نام پر ڈھونگ کر نے کا الزام

پارلیمنٹ: فائل فوٹو۔

نئی دہلی۔ کانگریس پارٹی نے حکومت کی طرف سے حال ہی میں مختلف فصلوں کے لئے طے شدہ امدادی قیمت (منیمم سپورٹنگ پرائز-ایم ایس پی) کو ناکافی قرار دیتے ہوئے آج پارلیمنٹ کے کیمپس میں مظاہرہ کیا اور کہا کہ وہ جمعہ کو عدم اعتماد کے قرارداد پر بحث کے دوران بھی اس مسئلے کو اٹھائےگي۔ کانگریس کے ممبران پارلیمنٹ نے صبح ایوان کی کارروائی شروع ہونے سے پہلے پارلیمنٹ کے کیمپس کے اندر اور پارلیمنٹ کے گیٹ پر ہاتھوں میں مکا لے کر مظاہرہ کیا۔ وہ ’ایم ایس پی نہیں یہ دھوکہ ہے‘‘ کے نعرے لگا رہے تھے۔

کانگریس ممبر پارلیمنٹ جیوتی رادتیہ سندھیا نے الزام لگایا کہ حکومت نے فصلوں کی امدادی قیمت بڑھانے کا ڈھونگ کیا ہے۔ گزشتہ چار سال میں امدادی قیمت نہیں بڑھائی گئی ہے اور اب انتخابی سال میں حکومت ایم ایس پی کے نام پر حقیقی لاگت قیمت سے محض 10 فیصد زیادہ قیمت دے رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ چار سال میں کھاد اور ڈیزل کی قیمتوں میں کافی اضافہ ہوا ہے اور کسانوں کی لاگت طے کرتے وقت ان حقائق کو نظر انداز کیا گیا۔  سندھیا نے کہا کہ حکومت نے پہلے ڈاکٹر ایم ایس سوامي ناتھن کی طرف سے بتائے سی -2 فارمولہ کی بنیاد پرلاگت طے کرنے اور اس پر ڈیڑھ گنا ایم ایس پی دینے کی بات کہی تھی۔ لیکن، اس نے اے 2 پلس ایف ایل فارمولہ پر لاگت کا حساب کر کے اس سےڈیڑھ گنا ایم ایس پی مقرر کیا۔ اس طرح اس نے کسانوں کے ساتھ دھوکہ کیا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ اے 2 پلس ایف ایل میں کسان کی مخصوص فصل پر اخراجات اور خاندان کے ارکان کے لیبر(محنت) کو شامل کیا جاتا ہے۔ سی 2 فارمولہ میں زمین کا کرایہ اور دیگر بہت سے عوامل کو بھی شامل کیا جاتا ہے جس سے لاگت قیمت بہت بڑھ جاتی ہے۔ کانگریس ممبر پارلیمنٹ نے کہا کہ جمعہ کو مودی حکومت کے خلاف عدم اعتماد کے قرارد اد پر ایوان میں بحث کے دوران بھی پارٹی اس مسئلے کو اٹھائےگي۔ انہوں نے الزام لگایا کہ حکومت نے اپنا ایک بھی وعدہ پورا نہیں کیا۔ کسان خودکشی کر رہے ہیں، دہلی عصمت دری کی دار الحکومت بن گئی ہے، لیکن وزیر اعظم کو ان کی کوئی فکر نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگلے انتخابات میں کسان بھارتیہ جنتا پارٹی کو زمین پر لا دیں گے۔

Loading...

Loading...