کانسٹیبل کے بیٹے کی وکیلوں سے جذباتی اپیل۔ میرے پاپا کم پڑھے لکھے ہیں، لیکن آپ..۔

اس بچے کے والد دلی پولیس کے وکاس پوری تھانے میں ہیڈ کانسٹیبل کے عہدے پر تعینات ہیں۔ اتنا ہی نہیں، معصوم بچے نے تیس ہزاری کورٹ میں ہنگامہ اور آگ زنی کرنے والے وکیلوں سے کئی اور سوال بھی کئے۔

Nov 05, 2019 05:59 PM IST | Updated on: Nov 05, 2019 06:05 PM IST
کانسٹیبل کے بیٹے کی وکیلوں سے جذباتی اپیل۔ میرے پاپا کم پڑھے لکھے ہیں، لیکن آپ..۔

کانسٹیبل کے بیٹے کی وکیلوں سے جذباتی اپیل۔ میرے پاپا کم پڑھے لکھے ہیں، لیکن آپ..۔

نئی دہلی۔ گزشتہ سنیچر کو دہلی کی تیس ہزاری کورٹ کے باہر پولیس اور وکلا کے درمیان ہوا ہنگامہ تھمنے کا نام نہیں لے رہا ہے۔ پولیس اور وکلا ایک دوسرے کے خلاف سڑکوں پر اتر کر احتجاجی مظاہرہ کر رہے ہیں۔ اس معاملہ میں دلی پولیس میں تعینات ایک ہیڈ کانسٹیبل کے معصوم بیٹے نے وکیلوں سے جذباتی اپیل کر کے کئی سوال کئے ہیں۔ بچے نے پوسٹر کے ذریعہ کہا کہ وکیل انکل، میرے پاپا تو پولیس والے ہیں، سب کہتے ہیں کہ وہ کم پڑھے لکھے ہیں۔ وہ اکھڑ۔ گنوار ٹائپ ہیں۔ وہ قانون کی جانکاری میں بھی پھسڈی ہیں لیکن آپ تو پڑھے لکھے اور قانون کے جانکار ہو۔ اس کے بعد بھی پولیس اہلکاروں کے خلاف اتنا غصہ کیوں دکھا رہے ہو۔

انسپیکٹر رینک سے لیکر  پولیس اہلکار منگل کو انصاف اور اپنی حفاظت کو یقینی بنانے کی مانگ کو لے کر پولیس ہیڈکوارٹر کے سامنے مظاہرہ کر رہے ہیں۔ انسپیکٹر رینک سے لیکر پولیس اہلکار منگل کو انصاف اور اپنی حفاظت کو یقینی بنانے کی مانگ کو لے کر پولیس ہیڈکوارٹر کے سامنے مظاہرہ کر رہے ہیں۔

Loading...

اس بچے کے والد دلی پولیس کے وکاس پوری تھانے میں ہیڈ کانسٹیبل کے عہدے پر تعینات ہیں۔ اتنا ہی نہیں، معصوم بچے نے تیس ہزاری کورٹ میں ہنگامہ اور آگ زنی کرنے والے وکیلوں سے کئی اور سوال بھی کئے۔ اس کا ان وکیلوں سے کہنا ہے کہ آپ پولیس کے کنٹرول روم یعنی 100 نمبر پر شکایت کر سکتے تھے۔ آپ پولیس کمشنر سے بھی اس کی شکایت کر سکتے تھے۔ لیکن آپ لوگ پولیس والوں کی وردی اتروانے کی دھمکی دے رہے ہیں۔ اس چھوٹے سے بچے کے ان لفظوں کو پڑھ کر کسی کا بھی دل نرم پڑ جائے گا کیونکہ معصوم نے بہت بڑا سوال اٹھایا ہے۔

ادھر، پولیس اور وکیلوں کے درمیان ہوئی مارپیٹ کے بعد دہلی پولیس کے جوانوں نے بھی آواز اٹھانی شروع کردی ہے۔ انسپیکٹر رینک سے لیکر  پولیس اہلکار منگل کو انصاف اور اپنی حفاظت کو یقینی بنانے کی مانگ کو لے کر پولیس ہیڈکوارٹر کے سامنے مظاہرہ کر رہے ہیں۔ پولیس والے ہاتھوں میں تختیاں لیکر نعرے بازی کر رہے ہیں۔ ان تختیوں پر ’سیو پولیس‘ اور ’ہم بھی انسان ہیں‘ جیسے نعرے لکھے ہیں۔

Loading...