ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

COVID-19: کورونا کی تیسری لہر اکتوبر - نومبر میں شباب پر ہوگی: سائنسدانوں کی وارننگ

ملک میں کورونا کی تیسری لہر (Third Wave) کو لے کر ابھی سے الرٹ جاری کیا جانے لگا ہے۔ کورونا (Corona) پر نظر رکھنے والے سائنسدانوں نے وارننگ دی ہے کہ اگر وقت رہتے کووڈ-19 ضوابط پر عمل نہیں کیا گیا تو اکتوبر - نومبر میں کورونا کی تیسری لہر بے حد خطرناک ثابت ہوسکتی ہے۔

  • Share this:
COVID-19: کورونا کی تیسری لہر اکتوبر - نومبر میں شباب پر ہوگی: سائنسدانوں کی وارننگ
کورونا کی تیسری لہر اکتوبر - نومبر میں شباب پر ہوگی: سائنسدانوں کی وارننگ

نئی دہلی: ملک میں کورونا کی دوسری لہر (Second Wave) کا اثر ابھی ختم بھی نہیں ہوا ہے کہ تیسری لہر (Third Wave) کو لے کر ابھی سے الرٹ جاری کیا جانے لگا ہے۔ کورونا (Corona) پر نظر رکھنے والے سائنسدانوں نے وارننگ دی ہے کہ اگر وقت رہتے کووڈ-19 ضوابط پر عمل نہیں کیا گیا تو اکتوبر - نومبر میں کورونا کی تیسری لہر بے حد خطرناک ثابت ہوسکتی ہے۔ کووڈ-19 معاملوں کی ماڈلنگ کو لے کر کام کرنے والی ایک سرکاری سمیتی کے سائنسدانوں نے کہا ہے کہ اگر کورونا کا کوئی نیا ویریئنٹ آتا ہے تو تیسری لہر بے حد خطرناک ہوسکتی ہے۔


کووڈ-19 کے خطرے کا اندازہ لگانے والے محکمہ سائنس و ٹکنالوجی کے رکن منندر اگروال نے کہا، گزشتہ سال کی طرح ہمارے اندازہ غلط ثابت نہ ہو، اس کے لئے تیسری لہر کے اندازہ کے لئے ماڈل میں تین امکانات پر بات کی گئی ہے۔ امید پسند، انٹرمیڈیٹ اور مایوسی۔ منندر اگروال نے کہا کہ تیسری لہر کا صحیح اندازہ لگانے کے لئے قوت مدافعت میں کمی، ویکسینیشن کے اثرات اور زیادہ خطرناک شکل کے امکانات کو وجہ بنایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دوسری لہر کے دوران ایسا نہیں کیا جاسکا تھا۔


منندر اگروال نے بتایا کہ کورونا کی تیسری لہر کو لے کر ہم نے تین امکانات رکھی ہیں۔ ایک ’امید پسندی‘ ہے۔ اس میں ہم یہ مان کر چل رہے ہیں کہ اگست تک زندگی معمول کے مطابق ہوجائے گی اور کوئی نیا موومنٹ نہیں ہوگا۔ دوسرا ’انٹرمیڈیٹ‘ ہے۔ اس میں ہم مانتے ہیں کہ اگست تک زندگی معمول کے مطابق ہونے کے ساتھ ہی ویکسینیشن میں 20 فیصد تک کم موثر ہے۔ تیسرا ’مایوسی‘ ہے۔ اس میں یہ مان کر چلا جارہا ہے کہ کورونا کا کوئی نیا ویریئنٹ تیزی سے پھیل سکتا ہے۔ اس پورے اندازے کے لئے جن اعدادوشمار کو پیش کیا گیا ہے، اس کے مطابق، اگر کورونا کے ویریئنٹ میں تبدیلی آئی تو اکتوبر اور نومبر کے درمیان کورونا اپنے شباب پر ہوگا اور ملک میں 1,50,000 سے 2,00,000 کے درمیان معاملے بڑھ سکتے ہیں۔

Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 04, 2021 08:56 AM IST