உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اومیکران کا سامنا کرنے کیلئے تیار راجدھانی ، دہلی میں ہوگی تمام کرونا کیسز کی جینوم سکونسنگ 

    وزیر اعلی اروند کیجریوال نے یقین دہانی کرائی ہے کہ اومیکران سے گھبرانے کی قطعی ضرورت نہیں ہے، دہلی حکومت اس سے نمٹنے کے لیے پوری طرح تیار ہے ۔ بستروں اور آکسیجن کا مکمل انتظام کیا ہے ۔ اب ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ دہلی کے اندر جتنے بھی مثبت کیس سامنے آئیں گے، ہم انہیں جینوم ٹیسٹنگ کے لیے بھیجیں گے۔ ہم کورونا کے 100 فیصد مثبت کیسز کی تحقیقات کریں گے ۔

    وزیر اعلی اروند کیجریوال نے یقین دہانی کرائی ہے کہ اومیکران سے گھبرانے کی قطعی ضرورت نہیں ہے، دہلی حکومت اس سے نمٹنے کے لیے پوری طرح تیار ہے ۔ بستروں اور آکسیجن کا مکمل انتظام کیا ہے ۔ اب ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ دہلی کے اندر جتنے بھی مثبت کیس سامنے آئیں گے، ہم انہیں جینوم ٹیسٹنگ کے لیے بھیجیں گے۔ ہم کورونا کے 100 فیصد مثبت کیسز کی تحقیقات کریں گے ۔

    وزیر اعلی اروند کیجریوال نے یقین دہانی کرائی ہے کہ اومیکران سے گھبرانے کی قطعی ضرورت نہیں ہے، دہلی حکومت اس سے نمٹنے کے لیے پوری طرح تیار ہے ۔ بستروں اور آکسیجن کا مکمل انتظام کیا ہے ۔ اب ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ دہلی کے اندر جتنے بھی مثبت کیس سامنے آئیں گے، ہم انہیں جینوم ٹیسٹنگ کے لیے بھیجیں گے۔ ہم کورونا کے 100 فیصد مثبت کیسز کی تحقیقات کریں گے ۔

    • Share this:
    نئی دہلی :  وزیر اعلی اروند کیجریوال نے آج ایل جی کی صدارت میں منعقدہ DDMA میٹنگ میں ماہرین کے ساتھ اومیکران کے اثرات پر تفصیل سے تبادلہ خیال کیا۔  اس کے بعد وزیر اعلی اروند کیجریوال نے دہلی حکومت کی تیاریوں کی جانکاری دیتے ہوئے کہا کہ اومیکران سے گھبرانے کی بالکل ضرورت نہیں ہے۔ دہلی حکومت اس سے نمٹنے کے لیے پوری طرح تیار ہے۔  ہم نے بستروں اور آکسیجن کے مکمل انتظامات کر رکھے ہیں اور ہم کسی قسم کی کمی نہیں ہونے دیں گے۔ آج کی میٹنگ میں یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ اب تک دہلی کے ہوائی اڈے پر لوگوں کا جینوم ٹیسٹ کیا جا رہا تھا، لیکن اب تمام مثبت کیسوں کا جینوم ٹیسٹ کیا جائے گا۔ اس سے پتہ چل جائے گا کہ دہلی میں کورونا کے کیسز بڑھ رہے ہیں، تو کون سے کیس بڑھ رہے ہیں؟ وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ میں 23 دسمبر کو ہوم آئسولیشن پروگرام کو مزید مضبوط بنانے اور اسے اچھی طرح سے منظم کرنے کے لیے ایک اہم میٹنگ کروں گا۔ میں مرکزی حکومت سے درخواست کرتا ہوں کہ جنہوں نے دونوں خوراکیں لی ہیں، انہیں بوسٹر خوراک دینے کی اجازت دی جائے، تاکہ لوگ زیادہ محفوظ رہ سکیں۔

    اومیکرون کی علامات بہت ہلکی ہیں

    وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے آج ایل جی کی صدارت میں منعقدہ ڈی ڈی ایم اے کی میٹنگ میں کورونا کے اومیکران ویریئنٹ کے اثرات کے بارے میں ماہرین کے ساتھ تفصیل سے تبادلہ خیال کیا۔ اس دوران کچھ اہم فیصلے بھی کیے گئے۔ ڈی ڈی ایم اے کی میٹنگ کے بارے میں جانکاری دیتے ہوئے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ آج اومیکران کے بڑھتے ہوئے اثر و رسوخ کے سلسلے میں ایل جی کی صدارت میں ڈی ڈی ایم اے کی میٹنگ ہوئی۔  اومیکران کا کتنا اثر ہو سکتا ہے، اس سے کیا مسائل پیدا ہو سکتے ہیں اور ہمیں کیا اقدامات کرنے ہوں گے، ان تمام باتوں پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اس میٹنگ میں کئی ماہرین کو بھی بلایا گیا تھا۔

    ماہرین نے بتایا ہے کہ اومیکرون بہت تیزی سے پھیلتا ہے لیکن اس کی علامات بہت ہلکی ہوتی ہیں۔ ہلکا بخار ہوتا ہے اور بہت کم مریضوں کو اسپتال میں داخل ہونا پڑتا ہے۔ اس کے علاوہ اس میں موت کا امکان بھی بہت کم ہے۔ میں دہلی کے تمام لوگوں سے کہنا چاہتا ہوں کہ گھبرانے کی بالکل ضرورت نہیں ہے۔ ماہرین کہہ رہے ہیں کہ اس کی علامات بہت ہلکی ہیں لیکن پھر بھی اگر آپ کو اسپتالوں اور ادویات کی ضرورت ہے تو دہلی حکومت نے تمام انتظامات کر لیے ہیں۔ اسپتال میں بیڈز بھی دستیاب ہوں گے اور ہم نے آکسیجن کا بھی مکمل انتظام کر رکھا ہے۔ ہم کسی قسم کی کوتاہی نہیں ہونے دیں گے۔

    دہلی میں کورونا کے تمام مثبت معاملات کی جینوم جانچ ہوگی 

    وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ شاید اس میں ہمیں سب سے زیادہ ہوم آئسولیشن کی ضرورت ہوگی۔  اس سلسلے میں ہم نے ماہرین سے تفصیلی بات چیت کی۔ ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ ہم ہوم آئسولیشن کے پروگرام کو مزید مضبوط کریں گے، کیونکہ زیادہ تر مریض گھر پر ہی ٹھیک ہو جائیں گے۔ میں 23 دسمبر کو ایک اہم میٹنگ کروں گا تاکہ ہوم آئسولیشن کو مزید مناسب طریقے سے منظم کیا جا سکے، تاکہ ہمارا ہوم آئسولیشن کا پروگرام مضبوط رہے۔  پچھلے کچھ دنوں سے کورونا کے کیسز بڑھنے لگے ہیں۔ پہلے روزانہ 15 سے 20 کیسز آتے تھے لیکن کل 100 سے زائد کیسز آئے ہیں۔ یہ کیسز کیا ہیں؟  کیا یہ اومیکران ہے یا یہ پرانا وائرس ہے یا نیا وائرس؟ اب تک ہم صرف ائیرپورٹ پر آنے والے لوگوں کو چیک کر رہے تھے۔ آج کی میٹنگ میں اب ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ دہلی کے اندر جتنے بھی مثبت کیس سامنے آئیں گے، ہم انہیں جینوم ٹیسٹنگ کے لیے بھیجیں گے۔ ہم کورونا کے 100 فیصد مثبت کیسز کی تحقیقات کریں گے جس شخص کو کورونا ہے، پھر کون سا کورونا ہے؟  اس میں ڈیلٹا والا کورونا ہوتا ہے یا اومیکران والا کورونا ہوتا ہے۔  اس سے پتہ چلے گا کہ دہلی کے اندر کورونا کے کیسز بڑھ رہے ہیں، تو کون سے کیسز بڑھ رہے ہیں۔

    میں سب سے درخواست کرتا ہوں کہ آپ ماسک ضرور پہنیں : اروند کیجریوال

    وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ آج کل ہم دیکھ رہے ہیں کہ جب ہم بازار یا کہیں بھی جاتے ہیں تو ہم نے ماسک پہننا چھوڑ دیا ہے۔ ہماری حفاظت ہمارے ہاتھ میں ہے۔ سب سے زیادہ مؤثر خود ماسک ہے ۔ وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے دہلی میں رہنے والے تمام لوگوں سے ہاتھ جوڑ کر اپیل کی اور کہا کہ ہر کوئی دوبارہ ماسک پہننا شروع کردے۔ بار بار حکومت یا میں یہ کہہ رہا ہوں، پھر میں یہ آپ کی بھلائی اور صحت کے لیے کہہ رہا ہوں۔ آپ بیمار پڑیں گے، آپ کو کورونا ہوگا، تو کیا فائدہ؟  اس لیے آپ سب سے درخواست ہے کہ دوبارہ ماسک پہننا شروع کر دیں۔  دہلی میں، ہم نے ویکسین کی پہلی خوراک تقریباً 99 فیصد لوگوں کو اور دوسری خوراک 70 فیصد لوگوں کو دی ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ بوسٹر ڈوز کی اب اجازت دی جائے۔ مرکزی حکومت اس کی اجازت دیتی ہے۔

    انہوں نے کہا کہ میں مرکزی حکومت سے درخواست کرتا ہوں کہ جنہوں نے دونوں خوراکیں لی ہیں، انہیں بوسٹر خوراک دینے کی اجازت دی جائے، تاکہ لوگ زیادہ محفوظ رہ سکیں۔  دہلی میں اب ہمارے پاس مکمل انفراسٹرکچر ہے۔ اگر مرکزی حکومت بوسٹر ڈوز کی اجازت دیتی ہے تو پہلے ہم اسے اپنے ہیلتھ ورکرز کو دیں گے اور پھر ہم باقی عوام کو بوسٹر ڈوز دے سکیں گے۔ دہلی حکومت کی تیاری 64-65 ہزار بستروں کی تیاری ہے۔ اس وقت دہلی حکومت پہلے ہی 30 ہزار آکسیجن بیڈ تیار کر چکی ہے جس میں 10 ہزار آئی سی یو بیڈ ہیں۔ اس کے علاوہ دہلی حکومت فروری تک مزید 6,800 آئی سی یو بیڈ تیار کرے گی۔  ساتھ ہی ایسے انتظامات کیے گئے ہیں کہ اگر ضرورت پڑی تو دہلی کے ہر وارڈ میں دو ہفتے کے نوٹس پر 100-100 آکسیجن بیڈ تیار کیے جائیں گے۔ اس کے علاوہ 32 اقسام کی ادویات کو دو ماہ کے لیے بفر اسٹاک کے آرڈرز دیے گئے ہیں، تاکہ ادویات کی قلت نہ ہو۔

    ہوم آئسولیشن کو مزید کیا جائے گا

    ہوم آئسولیشن سسٹم نے کیجریوال حکومت کو کورونا کی آخری لہروں کے دوران مریضوں کی اچھی دیکھ بھال کرنے میں مدد کی ہے۔ اس لیے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی ہدایت پر ہوم آئسولیشن سسٹم کو مزید مضبوط کیا جا رہا ہے۔ تاکہ کورونا کی ہلکی علامات والے مریضوں کو گھر پر ہی بہتر علاج دیا جا سکے۔ اس کے لیے کیجریوال حکومت نے ایک مضبوط نظام بنایا ہے۔ اس کے تحت ہوم آئسولیشن میں زیر علاج مریضوں کے لیے حکومت کی طرف سے بنائی گئی ڈاکٹروں کی ٹیم روزانہ صبح و شام مریض کو فون کرتی ہے اور صحت سے متعلق معلومات لیتی ہے۔ اس دوران مریضوں اور دیکھ بھال کرنے والوں کو اپنانے والے حفاظتی اقدامات کے بارے میں معلومات دی جاتی ہیں۔  اگر مریض کی طبیعت ناساز ہو تو ڈاکٹر اسے اسپتال منتقل کردیتا ہے۔

    لوگ کووڈ ہیلپ لائن نمبر 1031 کی مدد لے سکتے ہیں

    کیجریوال حکومت نے کووڈ ہیلپ لائن نمبر 1031 جاری کیا ہے تاکہ کسی بھی پریشانی کے دوران کووڈ مریضوں کی مدد کی جا سکے۔ یہ ہیلپ لائن نمبر 24 گھنٹے کام کرتی ہے۔ اس میں تین شفٹوں میں 25 سے زائد ملازمین کام کرتے ہیں، جو 600 سے 700 کالز اٹینڈ کر سکتے ہیں۔  اگر کال نمبر میں اضافہ ہوا تو اس میں اضافہ کیا جائے گا۔ ہیلپ لائن نمبر پر کال کرنے سے کوئی بھی آکسیجن سلنڈر، ٹیلی کنسلٹیشن، پلس آکسی میٹر، میڈیسن کٹ، ویکسینیشن، اسپتال کے بستروں کی دستیابی، ہوم آئسولیشن، ایمبولینس سروس، ٹیسٹ اور دیگر معلومات حاصل کر سکتا ہے۔

    حکومت میڈیکل آکسیجن انفراسٹرکچر کو مضبوط کر رہی ہے۔

    کیجریوال حکومت دہلی میں میڈیکل آکسیجن انفراسٹرکچر کو مزید مضبوط بنانے پر کام کر رہی ہے۔  تاکہ جب آکسیجن کی مانگ بڑھ جائے تو اسے فراہم کیا جا سکے۔ اس کے لیے میڈیکل آکسیجن انفراسٹرکچر کو بڑھایا جا رہا ہے۔  دہلی حکومت نے 442 ایم ٹی آکسیجن ذخیرہ کرنے کی اضافی صلاحیت پیدا کی ہے اور دہلی میں 121 ایم ٹی آکسیجن کی پیداوار بھی شروع ہو گئی ہے۔  6,000 'D' قسم کے سلنڈر ہنگامی استعمال کے لیے ریزرو میں رکھے گئے ہیں۔ اس سے پہلے دہلی میں آکسیجن بھرنے کی گنجائش 1500 سلنڈر یومیہ تھی۔ اب اس کی صلاحیت کو بڑھانے کے لیے، 12.5 MT صلاحیت کے دو کرائیوجینک پلانٹ لگائے گئے ہیں، جو روزانہ اضافی 1,400 جمبو سلنڈر بھر سکیں گے۔

    آکسیجن ٹینک میں ٹیلی میٹری ڈیوائس لگائی جا رہی ہے

    وزیر اعلی اروند کیجریوال کی ہدایت پر تمام چھوٹے اور بڑے آکسیجن ٹینکوں میں ٹیلی میٹری کا سامان نصب کیا جا رہا ہے۔ تاکہ آکسیجن کی دستیابی کا حقیقی ڈیٹا دستیاب ہو۔ اس ڈیوائس کی تنصیب سے ڈیش بورڈ پر آکسیجن کا ریئل ٹائم ڈیٹا دستیاب ہوگا۔ اس سے حکام کو آکسیجن کی سپلائی چین کو مضبوط بنانے کے ساتھ ساتھ آکسیجن کی حالت کا پتہ لگانے میں مدد ملے گی۔

    قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔

    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: