ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

کورونا سے متاثر مریض ڈپریشن کے ہورہے ہیں شکار ، اسپتالوں کے لاکھوں کے بل اڑا دیں گے ہوش 

کولکاتہ کے سرکاری کولکاتہ میڈیکل کالج اینڈ اسپتال میں ایسا ہی ایک واقعہ پیش آیا ۔ کورونا سے متاثر مریض نے اسپتال کی عمارت سے چھلانگ لگا کر زندگی ختم کرنے کی کوشش کی ، لیکن اسپتال کے وارڈ بواٸے نے اسے بچالیا ۔ اس کے بعد مریض کی جو کفیت ہوئی ، اس نے سب کی آنکھیں نم کردی ۔

  • Share this:
کورونا سے متاثر مریض ڈپریشن کے ہورہے ہیں شکار ، اسپتالوں کے لاکھوں کے بل اڑا دیں گے ہوش 
کورونا سے متاثر مریض ڈپریشن کے ہورہے ہیں شکار ، اسپتالوں کے لاکھوں کے بل اڑا دیں گے ہوش 

ملک میں کورونا جیسی وبا کا داٸرہ بڑھتا جارہا ہے ۔ کورونا سے متاثر مریضوں کی ایک بڑی تعداد سامنے آرہی ہے ۔ ہزاروں مریض اس بیماری سے زندگی کی جنگ ہار گٸے تو ایک بڑی تعداد ایسے مریضوں کی بھی ہے ، جو اس بیماری کو مات دینے میں کامیاب ہوئے اور زندگی کی جانب لوٹے ہیں ۔ وہیں ملک میں کورونا سے متاثر ایسے مریض بھی ہیں ، جو اس بیماری کا شکار ہوکر ڈپریشن کا شکار ہورہے ہیں ، لاچار ہیں اور بے بس ہیں ۔ اس بیماری سے صحتیابی کے لئے اسپتالوں میں لاکھوں روپے گنوا چکے ہیں ۔ انتظامیہ کو امید بھری نظروں سے دیکھ رہے ہیں کہ کوئی تو ان کی پریشانیوں کو کم کرے ، لیکن کون ہے ، جو ان مریضوں کے اندر ہونے والے شور و غل کو سن سکے ۔


کولکاتہ کے سرکاری کولکاتہ میڈیکل کالج اینڈ اسپتال میں ایسا ہی ایک واقعہ پیش آیا ۔ کورونا سے متاثر مریض نے اسپتال کی عمارت سے چھلانگ لگا کر زندگی ختم کرنے کی کوشش کی ، لیکن اسپتال کے وارڈ بواٸے نے اسے بچالیا ۔ اس کے بعد مریض کی جو کفیت ہوئی ، اس نے سب کی آنکھیں نم کردی ۔


بنگال کے شمالی چوبیس پرگنہ کے اشوک نگر کے رہائشی عبد الراخ نے آج کولکاتہ میڈیکل کالج اینڈ اسپتال کے سپر اسپیشیلیٹی بلاک کے فورتھ فلور کی کھڑکی توڑ کر کودنے کی کشش کی ، لیکن چھلانگ لگانے سے پہلے ہی اسے بچا لیا گیا ۔ بیڈ نمبر 7 کا یہ مریض اپنی جان بچائے جانے پر زور زور سے رونے لگا ۔ وہ کہہ رہا تھا کہ اس کو مرنا ہے ۔ تاکہ اس کی پریشانیاں کم ہوں ۔


کورونا سے متاثر مریض نے اسپتال کی عمارت سے چھلانگ لگا کر زندگی ختم کرنے کی کوشش کی ، لیکن اسپتال کے وارڈ بواٸے نے اسے بچالیا ۔
کورونا سے متاثر مریض نے اسپتال کی عمارت سے چھلانگ لگا کر زندگی ختم کرنے کی کوشش کی ، لیکن اسپتال کے وارڈ بواٸے نے اسے بچالیا ۔


ڈاکٹروں کے پوچھنے پر مریض نے بتایا کے وہ گزشتہ دنوں نمونیا کی شکایت پر غیر سرکاری نرسنگ ہوم میں داخل ہوا تھا ، جہاں اس کی حالت تشویشناک بتاتے ہوئے اسے وینٹیلیٹر پر رکھا گیا اور ایک دن میں اسے ڈیڑھ لاکھ کا بل دیا گیا ۔ مریض کو بتایا جاتا رہا کے اس کی حالت خراب ہے ، جبکہ مریض کے مطابق اسے کوئی تکلیف نہیں تھی ، لیکن نرسنگ ہوم مریض کو ڈسچارج کرنے کو تیار نہیں تھا ۔ بعد میں سماجی کارکنوں کی مداخلت کے بعد مریض کو سرکاری میڈیکل کالج میں داخل کیا گیا ۔

مریض کے مطابق وہ مالی طور پر ٹوٹ چکا ہے ، وہ اسپتال میں ہے ، لیکن اس کو معلوم ہے کہ اس کے گھر والے بھوکے ہیں اور وہ ان کی تکلیف سے پریشان ہے ۔ وہ گھر والوں کا سامنا کرنے سے قاصر ہے ۔ اسٹیٹ میڈیکل کونسل نے اس طرح کے معاملات میں نجی اسپتالوں کے خلاف کارروائی کا یقین دلایا ہے ۔ لیکن سماجی کارکنوں کے مطابق کورونا بحران میں ہزاروں ایسے مریض ہیں ، جو اسپتال انتظامیہ کی من مانی کی بھینٹ چڑھ رہے ہیں ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Aug 08, 2020 04:32 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading