ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

کورونا وائرس : میرٹھ میں لاک ڈاون سے مفلوج سماج کا غریب طبقہ ، کھانے پینے کیلئے بھی محتاج

میرٹھ میں ہاپوڑ روڈ کے زاہد پورعلاقے میں بسی جھگھی بستی کے قریب آنے والی ہر ایک گاڑی کے پیچھے بھاگتے چھوٹے چھوٹے بچے دن بھر اس انتظار میں رہتے ہیں کہ شاید کوئی ان کے لیے کھانے پینے کا سامان لیکر آیا ہے ۔

  • Share this:
کورونا وائرس : میرٹھ میں لاک ڈاون سے مفلوج سماج کا غریب طبقہ ، کھانے پینے کیلئے بھی محتاج
کورونا وائرس لاک ڈاون : میرٹھ میں مفلوج سماج کا غریب طبقہ ، کھانے پینے کیلئے بھی محتاج

کورونا انفیکشن کے بڑھتے معاملوں کو روکنے کے لیے کیے گئے لاک ڈاؤن نے کمزور اور مزدور طبقے کو مفلوج کردیا ہے ۔ ان حالات میں سماج کا ایک  طبقہ جہاں اشیائے ضروریہ کا ذخیرہ کرکے حالات سے نمٹنے کو تیار ہے تو وہیں اسی سماج کا غریب اور دیہاڑی مزدور طبقہ اشیائے ضروریہ کے لیے پریشان ہے ۔ میرٹھ میں ایسی ہی ایک جھُگی بستی میں ہماری ٹیم نے حالات کا جائزہ لیا ، تو ان افراد کی مصیبت کا اندازہ ہوا ۔


میرٹھ میں ہاپوڑ روڈ کے زاہد پورعلاقے میں بسی جھگھی بستی کے قریب آنے والی ہر ایک گاڑی کے پیچھے بھاگتے چھوٹے چھوٹے بچے دن بھر اس انتظار میں رہتے ہیں کہ شاید کوئی ان کے لیے کھانے پینے کا سامان لیکر آیا ہے  ۔ لاک ڈاؤن کے بعد سے یہاں رہنے والے تقریباً 135 خاندانوں کے لیے روزی روٹی کا مسئلہ پیدا ہوگیا ہے ۔ آسام سے تعلق رکھنے والے یہ افراد روزی روٹی کے لیے کباڑ اور کچرا اٹھانے کا کام کرتے ہیں ، ان افراد کے روزی روٹی کا انتظام روز کنواں کھودنے اور روز پانی پینے جیسا ہے ۔ تاہم لاک ڈاؤن کے بعد سے ان کا کام مکمّل طور پر ختم ہو گیا ہے ۔




ان افراد میں نوجوان کے ساتھ بوڑھے بھی ہیں اور بچے بھی ۔ سماجی تنظیموں نے ان افراد کی تھوڑی بہت مدد کی ہے ، لیکن وہ ان حالات میں ناکافی ثابت ہو رہی ہے ۔ ایسے میں ان افراد کی امیدیں حکومت اور سماج کے صاحب حیثیت افراد سے وابستہ ہیں ، جو اس مشکل وقت کو پار کرنے میں ان کی مدد کر سکتے ہیں ۔ ان افراد کا کہنا ہے کہ شروعات میں نگر نگم کی جانب سے کچھ اناج مہیا کرایا گیا تھا ، لیکن اس کے بعد ضلع انتظامیہ کے کسی افسر نے ان کی طرف مڑ کر نہیں دیکھا ۔  ایسے میں اب آگے کے دن کیسے گُزریں گے یہ معلوم نہیں ۔
First published: Apr 04, 2020 10:45 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading