ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

الہ آباد میں شیعہ سنی افراد کی مشترکہ مہم ، غریبوں اور بے سہارا لوگوں کی مدد پر زور

مسلم سماج کے باشعور طبقے کا خیال ہے کہ لاک ڈاؤن کے دوران مذہبی معاملات میں الجھنے کی بجائے غریبوں اور بے سہارا لوگوں کی مشکلات دورکرنے کی ضرورت ہے ۔

  • Share this:
الہ آباد میں شیعہ سنی افراد کی مشترکہ مہم ، غریبوں اور بے سہارا لوگوں کی مدد پر زور
الہ آباد میں شیعہ سنی افراد کی مشترکہ مہم ، غریبوں اور بے سہارا لوگوں کی مدد پر زور

نظام الدین تبلیغی مرکز معاملہ کے بعد کورونا کے خطرات سے لڑنے کے لئے مسلم معاشرہ اب اور زیادہ متحد نظرآرہا ہے ۔ مسلم معاشرے میں اب اس بات کو فوقیت دی جا رہی ہے کہ کورونا کی وبا سے سماج کو کس طرح سے محفوظ رکھا جائے ؟ سماج کے سرکردہ افراد کا کہنا ہے کہ اس وقت مذہبی معاملات میں الجھنے کی بجائے مسلم محلوں میں آباد غریب اور بے سہارا لوگوں تک فوری امداد پہچانے کا کام کیا جائے۔ نظام الدین تبلیغی مرکز میں کورونا وائرس کے متاثرہ افراد کے ملنے کے بعد سوشل میڈیا پر تبلیغی جماعت کی آڑ میں پورے مسلم سماج کو نشانے پر لینے کی کوشش کی جا رہی ہے ۔ ایسے ماحول میں مسلم  سماج کے با شعور افراد نے کورونا وائرس کے خطرات لیکر گہری سنجیدگی دکھانی شروع کر دی ہے ۔

اس مہم میں شیعہ اور سنی طبقے کے افراد متحد ہوکر سماج میں بیداری لانے کا کام کر رہے ہیں ۔ شیعہ جامع مسجد کے امام اور معروف عالم دین مولانا حسن رضا زیدی نے شیعہ جامع مسجد میں نمازکو مکمل طرح سے موقوف کر دیا ہے ۔ مولانا حسن رضا نے مسجد کی طرف آنے کی بجائے لوگوں سے خدمت خلق کے فرائض ادا کرنے کی اپیل کی ہے ۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ کام اس وقت سب سے زیادہ ضروری ہے ۔ طویل لاک ڈاؤن کی وجہ سے مسلم محلوں میں آباد غریب اور بے سہارا افراد معاشی مشکلات کا شکار ہونے لگے ہیں ۔

مسلم سماج کے باشعور طبقے کا خیال ہے کہ لاک ڈاؤن کے دوران مذہبی معاملات میں الجھنے کی بجائے غریبوں اور بے سہارا لوگوں کی مشکلات دورکرنے کی ضرورت ہے ۔ دانشوروں کا کہنا ہے کہ بھیڑ لگائے بغیر انفرادی طور پر امدادی کام کرنے کو فوقیت دی جانی چاہئے ۔ فی الحال الہ آباد میں پوری مسلم آبادی کو گھروں میں ہی نماز پڑھنے اور مسا جد کو خالی رکھنے کے لئے راضی کر لیا گیا ہے ۔ مسلم سماج کے سر کردہ افراد کی اب یہ کوشش ہے کہ لاک ڈاؤن کی دوران پیش آنے والے مشکلات کو دور کیا جائے اور بڑے پیمانے پر امدادی کام پر توجہ مر کوز کی جائے ۔

First published: Apr 04, 2020 09:04 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading