خواتین پہلوانوں کی شکایت پر برج بھوشن پر 2 FIRدرج، پوکسو ایکٹ کے تحت کیس درج

Youtube Video

آپ کو بتا دیں کہ خواتین پہلوانوں کی عرضی پر سماعت کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے برج بھوشن شرن سنگھ کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے پر رضامندی ظاہر کی تھی۔

  • News18 Urdu
  • Last Updated :
  • Delhi, India
  • Share this:
    نئی دہلی. دہلی پولیس نے خواتین ریسلرز کے احتجاج کی شکایت کے معاملے میں اب ایک بڑی کارروائی کی ہے۔ ریسلنگ فیڈریشن آف انڈیا (WFI) کے سربراہ برج بھوشن شرن سنگھ کے خلاف 2 ایف آئی آر درج کی گئی ہیں۔ پولیس نے ایک کیس POCSO ایکٹ کے تحت اور دوسرا چھیڑ چھاڑ کی دفعات کے تحت درج کیا ہے۔ آپ کو بتا دیں کہ خواتین پہلوانوں کی عرضی پر سماعت کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے برج بھوشن شرن سنگھ کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے پر رضامندی ظاہر کی تھی۔

    آپ کو بتا دیں کہ گزشتہ جمعہ کو 7 خواتین پہلوانوں کی جانب سے شکایت کی گئی تھی۔ ان پہلوانوں میں سے ایک ریسلر نابالغ ہے۔ مقدمہ درج نہ ہونے پر پہلوانوں نے پیر کو سپریم کورٹ کا رخ کیا تھا۔ شکایت کے ٹھیک ایک ہفتہ بعد 28 اپریل کو سالیسٹر جنرل نے عدالت کو بتایا تھا کہ آج ایف آئی آر درج کی جائے گی۔ اس کے بعد دہلی پولیس نے مختلف دفعات میں 2 ایف آئی آر درج کی ہیں۔

    بھاگا نہیں ہوں، جانچ میں تعاون کروں گا، FIR درج ہونے سے پہلے برج بھوشن شرن سنگھ کا بیان

    پونچھ حملے میں بڑا انکشاف، دہشت گردوں کو کس نے دی پناہ اور کہاں سے آئے ہتھیار؟ جانئےسب کچھ

    متاثرین کے بیانات ریکارڈ کر سکتی ہے پولیس

    ذرائع کے مطابق اب دہلی پولیس تمام متاثرین کے بیانات ریکارڈ کرے گی۔ ضرورت پڑنے پر مجسٹریٹ کے سامنے کچھ بیانات قلمبند کیے جا سکتے ہیں۔ اس کے بعد پولیس بیان سے متعلق شواہد اکٹھے کرنے کی کوشش کرے گی۔ شکایت میں درج جگہ اور شہر کی بھی دہلی پولیس جانچ کرے گی۔

    ایل اے سی کا مسئلہ حل کرنے کی ہے۔ ضرورت
    راجناتھ سنگھ نے واضح کیا کہ ایل اے سی کے تمام مسائل کو دو طرفہ معاہدوں کے ذریعے حل کرنے کی ضرورت ہے۔ ہندوستان اور چین کے تعلقات کی ترقی سرحد پر امن پر مبنی ہے۔ دونوں وزراء نے بھارت چین سرحدی علاقوں کے ساتھ دو طرفہ تعلقات کی ترقی پر کھل کر بات کی۔ ذرائع کی مانیں تو وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے واضح طور پر کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان فوجی تعاون اسی وقت آگے بڑھ سکتا ہے جب سرحد پر امن و سکون قائم ہو۔ انہوں نے کہا کہ علیحدگی کے بعد اب تناؤ کی طرف بڑھنا چاہیے اور مثبت جواب کی امید ہے۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: