உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آلودگی کا اثر : دہلی حکومت نے جاری کیا تفصیلی حکم نامہ ، جانیے کون کون سے دفتر رہیں گے بند

    آلودگی کا اثر : دہلی حکومت نے جاری کیا تفصیلی حکم نامہ ، جانیے کون کون سے دفتر رہیں گے بند

    آلودگی کا اثر : دہلی حکومت نے جاری کیا تفصیلی حکم نامہ ، جانیے کون کون سے دفتر رہیں گے بند

    محکمہ ماحولیات نے دہلی میں آلودگی پر قابو پانے کے لیے وزیر اعلی اروند کیجریوال کے فیصلوں کی 100 فیصد تعمیل کو یقینی بنانے کے لیے ایک تفصیلی حکم نامہ جاری کیا ہے۔

    • Share this:
    نئی دہلی : محکمہ ماحولیات نے دہلی میں آلودگی پر قابو پانے کے لیے وزیر اعلی اروند کیجریوال کے فیصلوں کی 100 فیصد تعمیل کو یقینی بنانے کے لیے ایک تفصیلی حکم نامہ جاری کیا ہے۔  وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کل وزراء اور عہدیداروں کے ساتھ ہنگامی میٹنگ کرکے کئی فیصلے لئے، تاکہ دہلی کے لوگوں کو آلودگی سے فوری نجات مل سکے۔ وزیر ماحولیات گوپال رائے نے کہا کہ دہلی میں تمام تربیتی ادارے بشمول اسکول، کالج، کوچنگ انسٹی ٹیوٹ وغیرہ 20 نومبر تک بند رہیں گے اور تمام تعمیراتی اور انہدامی سرگرمیاں، چھوٹی اور بڑی، 17 نومبر تک بند رہیں گی۔ اس کے ساتھ ہی دہلی حکومت کے ماتحت تمام دفاتر، کارپوریشن اور خود مختار ادارے بھی 17 نومبر تک بند رہیں گے اور افسران اور ملازمین گھر سے کام کریں گے۔

    انہوں نے کہا کہ اس دوران صحت، پولیس، بجلی، پانی، پبلک ٹرانسپورٹ سمیت تمام ہنگامی اور ضروری خدمات جاری رہیں گی۔نجی اداروں کو گھر سے کام کرنے کے لیے ایڈوائزری بھی جاری کی گئی ہے، تاکہ آلودگی کے خلاف جنگ کو مزید مضبوطی سے لڑا جا سکے۔ تمام اسکول اور سرکاری دفاتر اور تعمیراتی سرگرمیاں بند کرنے کا مقصد گاڑیوں اور گردوغبار سے ہونے والی آلودگی کو روکنا ہے۔دہلی کے محکمہ ماحولیات نے وزیر اعلی اروند کیجریوال کی صدارت میں کل منعقدہ وزراء اور افسران کی ہنگامی میٹنگ میں لئے گئے فیصلوں پر عمل آوری کے سلسلے میں آج متعلقہ محکموں کو تفصیلی احکامات جاری کئے ہیں۔

    ایک پریس کانفرنس میں وزیر ماحولیات گوپال رائے نے محکمہ کی طرف سے جاری حکم کے بارے میں جانکاری دیتے ہوئے کہا کہ کل دہلی کے اندر بڑھتی ہوئی آلودگی کو لے کر دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال کی قیادت میں وزراء اور عہدیداروں کی ایک مشترکہ میٹنگ ہوئی۔ میٹنگ میں دہلی کے اندر آلودگی کو کنٹرول کرنے پر بات چیت ہوئی۔ اس دوران ڈی پی سی سی کے عہدیداروں نے پریزنٹیشن بھی دی۔  پریزنٹیشن میں صاف نظر آرہا ہے کہ دہلی کے اندر دو طرح کی آلودگی ہے۔  ایک- دہلی کی اپنی آلودگی ہے۔ یہ آلودگی گاڑیوں، تعمیراتی کاموں اور کوڑا کرکٹ کو جلانے کی وجہ سے ہو رہی ہے۔ دوسری آس پاس کی ریاستوں میں جلائی جانے والی پرالی سے آلودگی دہلی کے اندر آ رہی ہے۔وزیر ماحولیات نے کہا کہ کل (ہفتہ) AQI  کی سطح بہت سنگین تھی، جس میں آج کچھ بہتری آئی ہے، لیکن یہ پیشین گوئی کی جا رہی ہے کہ دہلی میں آلودگی کی سطح اگلے چند دنوں میں مزید خراب ہو جائے گی۔ اس کے پیش نظر دہلی حکومت نے کل کئی اہم فیصلے لئے ہیں۔

    اس کے مطابق دہلی کے تمام اسکول، کالج، تعلیمی کوچنگ انسٹی ٹیوٹ، اسکل ڈیولپمنٹ اینڈ ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ، دیگر تمام تربیتی ادارے اور لائبریریاں 20 نومبر تک بند رہیں گی۔ اس کے لیے محکمہ ماحولیات کی جانب سے متعلقہ محکموں کو احکامات جاری کر دیے گئے ہیں۔ یہ حکم انوائرمنٹ پروٹیکشن ایکٹ 1986 کے سیکشن 5 کے تحت جاری کیا گیا ہے۔  تعلیمی اداروں کو صرف ان جگہوں پر چھوٹ ملے گی جہاں پہلے سے امتحانات ہو رہے ہیں۔ یعنی جہاں امتحانات ہو رہے ہیں وہ ادارے یا کالج کھلے رہیں گے۔ باقی سب کچھ بند ہو جائے گا۔ اس کے علاوہ دہلی کے اندر تمام تعمیراتی اور انہدامی سرگرمیاں، بڑی اور چھوٹی، 17 نومبر تک بند رہیں گی۔

    اس کے علاوہ 17 نومبر تک اس کا دوبارہ جائزہ لینے کے بعد دہلی حکومت کوئی اور فیصلہ لے گی۔وزیر ماحولیات گوپال رائے نے کہا کہ تیسرا فیصلہ دہلی حکومت کے ماتحت تمام دفاتر، کارپوریشنز اور خود مختار اداروں کو 17 نومبر تک بند رکھنے کا لیا گیا ہے۔ اس دوران تمام افسران اور ملازمین گھر سے کام کریں گے۔  یعنی سب گھر سے کام کریں گے۔  لیکن اس بندش کے دوران ہنگامی ضروری خدمات فراہم کرنے والے تمام ادارے اور محکمے کھلے رہیں گے۔  مثال کے طور پر صحت اور تمام متعلقہ محکموں کی خدمات کھلی رہیں گی۔ پولیس، جیل، ہوم گارڈ، فائر سروس، ضلعی انتظامیہ، ڈی پی سی سی، محکمہ ماحولیات، پے اینڈ اکاؤنٹ آفس، بجلی، پی ڈبلیو ڈی، آبپاشی اور فلڈ کنٹرول ڈیپارٹمنٹ، پانی کی فراہمی، صفائی، پبلک ٹرانسپورٹ (ہوائی، میٹرو اور بس) کی خدمات جاری رہے ۔

    ان ہنگامی خدمات کے ساتھ، پبلک ٹرانسپورٹ کو سپورٹ کرنے والی خدمات جیسے کارگو، ٹکٹنگ، ہوائی پرواز، ڈیزاسٹر مینجمنٹ اور متعلقہ خدمات، این آئی سی اور میونسپل سروسز جاری رہیں گی۔ اس کے علاوہ تمام قسم کے دفاتر بند رہیں گے۔ماحولیات کے وزیر گوپال رائے نے کہا کہ دفاتر اور اسکولوں کی بندش کا مقصد گاڑیوں کی آلودگی کو کنٹرول کرنا تھا اور تعمیراتی جگہ کو بند کرنے کا مقصد دھول کی آلودگی کو کنٹرول کرنا تھا۔ اس سلسلے میں تفصیلی حکم نامہ جاری کر دیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ نجی اداروں کے لیے ایڈوائزری جاری کی گئی ہے کہ وہ اپنے ملازمین کو گھر سے کام کرنے دیں، تاکہ آلودگی کے خلاف جنگ کو مزید مضبوطی سے لڑا جا سکے۔ ضلع کے تمام ڈسٹرکٹ مجسٹریٹس اور ڈپٹی کمشنر آف پولیس کے ساتھ ساتھ تمام متعلقہ حکام مذکورہ ہدایات پر مکمل طور پر عمل درآمد کریں گے۔  ماحولیات (تحفظ) ایکٹ 1986 کے سیکشن 5 کے تحت جاری کردہ ہدایات کی خلاف ورزی قابل سزا جرم ہوگی۔

    کیجریوال نے کل کی تھی ہنگامی میٹنگ

    وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کل دہلی سکریٹریٹ میں اپنے وزراء اور عہدیداروں کے ساتھ ایک ہنگامی میٹنگ کی تاکہ دہلی میں بڑھتی ہوئی آلودگی سے نمٹنے اور دہلی کے لوگوں کو فوری راحت فراہم کی جاسکے۔ اس میٹنگ میں فیصلہ کیا گیا کہ دہلی میں تمام اسکول، کالج اور کوچنگ انسٹی ٹیوٹ وغیرہ ایک ہفتے کے لیے بند رہیں گے۔ دہلی حکومت کے ماتحت تمام سرکاری محکمے بھی بند رہیں گے اور افسران اور ملازمین گھر سے کام پر رہیں گے۔  ہر کسی کو کسی بھی ہنگامی کال کے لیے دستیاب ہونا ضروری ہے۔

    اس کے ساتھ ساتھ نجی اداروں کو ایڈوائزری جاری کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا کہ وہ اپنے ملازمین کو زیادہ سے زیادہ گھر سے کام کرنے دیں اور تمام تعمیراتی سرگرمیاں 17 نومبر تک بند رکھیں۔ چونکہ یہ سب کی صحت اور زندگی کا سوال ہے۔ اس لیے دہلی حکومت کا مقصد یہ ہے کہ بڑھتی ہوئی آلودگی سے جلد از جلد نمٹا جائے اور دہلی کے لوگوں کو جلد از جلد راحت فراہم کی جائے، تاکہ وہوزیر اعل صاف ہوا میں سانس لے سکیں۔

    وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی قیادت میں دہلی حکومت آلودگی پر قابو پانے کے لیے ہر سطح پر سنجیدہ کوششیں کر رہی ہے۔ وزیر ماحولیات گوپال رائے نے 9 نومبر کو ایک میٹنگ کی اور آلودگی کو کم کرنے کے لیے پانچ اقدامات کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس کے تحت دہلی حکومت دہلی کے اندر آلودگی کو کم کرنے کے لیے 11 نومبر سے 11 دسمبر تک کھلے میں جلانے کے خلاف مہم چلا رہی ہے۔ جس میں 10 محکموں کی 550 ٹیمیں کھلے عام جلانے کے واقعات کو روکنے کے لیے دن رات گشت کر رہی ہیں۔

    دہلی میں ڈیزل جنیٹس اور کوئلے کی بھٹیوں کو بند کرنے، میٹرو اور بس کی فریکوئنسی بڑھانے اور آر ڈبلیو اے سے گارڈز کو ہیٹر فراہم کرنے کی ہدایات دی گئی ہیں۔ دھول کی آلودگی کو روکنے کے لیے اینٹی ڈسٹ مہم کا دوسرا مرحلہ شروع کر دیا گیا ہے۔ اس کے ساتھ ہی دہلی بھر میں 400 ٹینکرز لگا کر سڑکوں پر پانی چھڑکا جا رہا ہے۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: