உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Delhi News: دہلی میں سیکس ریکٹ کا پردہ فاش، چھاپہ مار کر 10 غیر ملکی خواتین کو چھڑایا، پولیس نے کیا پردہ فاش

    پولیس نے بتایا کہ کرایہ پر لئے گئے فلیٹ میں تقریبا دو سال سے کالا دھندہ چلایا جارہا تھا ۔ اطلاع ملنے پر چھاپہ مار کر اس ریکیٹ کا پردہ فاش کیا گیا ۔ اس ریکیٹ کے تار بہار شریف سے بھی جڑے ہیں ۔ فی الحال جسم فروشی کا دھندہ چلانے کے ملزم کے انکشافات سے ہر کوئی دنگ ہے ۔ علامتی تصویر ۔

    پولیس نے بتایا کہ کرایہ پر لئے گئے فلیٹ میں تقریبا دو سال سے کالا دھندہ چلایا جارہا تھا ۔ اطلاع ملنے پر چھاپہ مار کر اس ریکیٹ کا پردہ فاش کیا گیا ۔ اس ریکیٹ کے تار بہار شریف سے بھی جڑے ہیں ۔ فی الحال جسم فروشی کا دھندہ چلانے کے ملزم کے انکشافات سے ہر کوئی دنگ ہے ۔ علامتی تصویر ۔

    قومی دارالحکومت دہلی میں انسانی اسمگلنگ کے ایک گروہ کے ذریعہ چلائے جا رہے ایک بڑے سیکس ریکٹ (Sex racket) کا دہلی پولیس کی کرائم برانچ (Delhi Police Crime Branch) نے پردہ فاش کیا ہے اور 10 غیر ملکی خواتین کو ان کے چنگل سے آزاد کرایا ہے۔

    • Share this:
      قومی دارالحکومت دہلی میں انسانی اسمگلنگ کے ایک گروہ کے ذریعہ چلائے جا رہے ایک بڑے سیکس ریکٹ (Sex racket) کا دہلی پولیس کی کرائم برانچ (Delhi Police Crime Branch) نے پردہ فاش کیا ہے اور 10 غیر ملکی خواتین کو ان کے چنگل سے آزاد کرایا ہے۔ پولیس نے ہفتہ کے روز یہ جانکاری دی۔ پولیس نے ریکٹ میں شامل پانچ لوگوں کو بھی گرفتار کیا ہے اور ان کی پہچان محمد اروپ (31)، چندے ساہنی عرف راجو (30)، علی شیر تلدادیو (48) اور ترکمین شہری عزیزہ جماییوا اور میرے دوب احمد کے طور پر ہوئی ہے۔

      فرضی گراہک کے طور پر کانسٹبل بھیجا

      پولیس ڈپٹی کمشنر، کرائم برانچ وچتر ویر سنگھ نے کہا کہ ملزم لوگ غیر ملکیخواتین کو سیکس ورکر کا کام کرنے کے لئے لبھاتے تھے اور انہیں ازبکستان کے مختلف علاقوں سے ہندوستان لاکر جسم فروشی کے کاروبار میں شامل کرتے تھے۔ انہوں نے کہا، ’خفیہ اطلاع ملنے پر ایک پولیس کانسٹبل کو فرضی گراہک کے طور پر بھیجا گیا اور ایک دیگر ملازم باہر تعینات کیا گیا اور حقیقی پہچان چھپاکر ایجنٹوں سے رابطہ کیا گیا‘۔

      دونوں ایجنٹوں کو چھاپہ ماری کرکے دبوچا گیا

      پولیس ڈپٹی کمشنر نے کہا کہ طے رقم پر سودا طے ہونے پر فرضی گراہک کو مالویہ نگر کے ایک پتے پر بھیجا گیا، جہاں ایجنٹ اروپ اور ساہنی نے 10 غیر ملکی خواتین کو پیڈ سیکس کے لئے منتخب کیا۔ اس کے بعد پولیس نے چھاپہ ماری کرکے دونوں ایجنٹوں کو موقع سے دبوچ لیا۔ افسر نے کہا، ‘سبھی غیرملکیوں کو ہندوستان میں رہنے کے لئے اپنا قانونی ویزا اور پاسپورٹ پیش کرنے کے لئے کہا گیا، لیکن وہ کوئی بھی پیش کرنے میں ناکام رہے‘۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      جسم فروشی کے انٹرنیشنل کنکشن کا انکشاف، آن ڈیمانڈ دستیاب کرائی جاتی ہیں ملکی وغیر ملکی لڑکیاں

      کون ہے اس سیکس ریکٹ کا سرغنہ

      ڈپٹی کمشنر آف پولیس نے بتایا کہ مسلسل پوچھ گچھ کرنے پر پتہ چلا کہ جماییوا اور اس کا شوہر میرے دوب احمد اس ریکٹ کے سرغنہ ہیں۔ ایک دیگر ملزم علی شیر نے غیر ملکی خاتون کو ہندوستان میں اچھی نوکری دلانے کا جھانسہ دیا تھا اور یہاں آنے کے بعد اس نے انہیں جوڑے کو سونپ دیا۔ افسر کے مطابق، مذکورہ گھر کو جماییوا کے ایک ایجنٹ نے کرائے پر لیا تھا اور وہ ابھی بھی فرار ہے
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: