உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Monkeypox Virus: کورونا کی طرح منکی پاکس میں بھی ہوتا ہے میوٹیشن، آسکتے ہیں نئے ویریئنٹ؟ جانئے

    ڈاکٹروں نے اس نئے وائرس پر خطرے کی گھنٹی بجا دی ہے۔

    ڈاکٹروں نے اس نئے وائرس پر خطرے کی گھنٹی بجا دی ہے۔

    Monkeypox Virus: چونکہ منکی پاکس بھی وائرس ہے تو ایک بڑا سوال یہ بھی ہے کہ کورونا کی طرح کیا منکی پاکس وائرس میں بھی میوٹیشن ہوتا ہے؟ کیا آنے والے دنوں میں منکی پاکس کے بھی نئے نئے ویریئنٹ سامنے آسکتے ہیں؟

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • New Delhi | New Delhi | Delhi
    • Share this:
      نئی دہلی : دو سال پہلے آیا کورونا وائرس انفیکشن ابھی بھی ہندوستان ہی نہیں بلکہ دنیا کے زیادہ تر ممالک میں پھیل رہا ہے ۔ وہیں اب منکی پاکس وائرس نام کی بیماری بھی 75 سے زیادہ ممالک کو متاثر کر رہی ہے ۔ حالانکہ ان دو سالوں میں کورونا کی شکل میں کافی تبدیلی آچکی ہے ۔ اس وائرس میں لگاتار ہونے والے میوٹیشن کی وجہ سے الفا ، بیٹا، ڈیلٹا، ڈیلٹا پلس اور اومیکران جیسے ویریئنٹ آئے ۔ ان میں سے کچھ خطرناک بھی ثابت ہوئے ہیں ۔ ابھی بھی کورونا کے اومیکران ویریئنٹ کے سب ویریئنٹ آرہے ہیں اور متاثر کررہے ہیں ۔ اب چونکہ منکی پاکس بھی وائرس ہے تو ایک بڑا سوال یہ بھی ہے کہ کورونا کی طرح کیا منکی پاکس وائرس میں بھی میوٹیشن ہوتا ہے؟ کیا آنے والے دنوں میں منکی پاکس کے بھی نئے نئے ویریئنٹ سامنے آسکتے ہیں؟

       

      یہ بھی پڑھئے: ممتا بنرجی نے وزیر پارتھ چٹرجی کو ہٹایا، ای ڈی کی کارروائی کے بعد کیا فیصلہ


      ان سوالات کے جواب میں دہلی میں واقع آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز کے سابق ڈائریکٹر ڈاکٹر مہیش چندر مشرا نے نیوز 18 ہندی سے بات چیت میں کہا کہ کورونا وائرس اور منکی پاکس دونوں ہی وائرس سے پیدا ہونے والی بیماریاں ضرور ہیں، لیکن دونوں کے درمیان کافی فرق ہے ۔ منکی پاکس ایک وائرل زونوٹک انفیکشن ہے، جو جانوروں سے انسانوں میں منتقل ہو سکتا ہے۔ یہ ایک شخص سے دوسرے شخص میں بھی پھیل سکتا ہے۔ جبکہ کورونا وائرس ایک متعدی بیماری ہے، جو ۔۔۔۔۔۔ وائرس کی وجہ سے پھیلتی ہے۔ ان دونوں کی علامات میں بھی کافی فرق ہے ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: جنسی رویے کو درست کریں، گلے ملنا، کسنگ کم ہو، Monkeypox پر WHO کی گائیڈ لائن


      ڈاکٹر مشرا کا کہنا ہے کہ منکی پاکس میں مبتلا مریضوں میں چار بڑی چیزیں سامنے آتی ہیں۔ پہلے تیز بخار، جسم میں کہیں بھی جلد پر سرخ پیپ بھرے دانے یا چکتے پڑنا، تھکاوٹ اور جسم میں درد اور لمف نوڈس میں سوجن۔ جبکہ کورونا کی علامات اس سے بالکل الگ ہیں۔ بخار کے علاوہ کورونا میں کھانسی، گلے میں جکڑن، تھکاوٹ، سر درد، ذائقہ اور بو کی کمی، سانس لینے میں تکلیف، قے اور دست، آکسیجن کی سطح میں کمی جیسی علامات تھیں ۔

      ڈاکٹر مشرا کا کہنا ہے کہ جہاں تک منکی پاکس وائرس میں میوٹیشن کا تعلق ہے تو یہ سمجھنا ضروری ہے کہ منکی پاکس وائرس ایک ڈی این اے وائرس ہے، جس میں میوٹیشن بہت کم دیکھنے کو ملتے ہیں ۔ منکی پاکس وائرس اب تک صرف مغربی افریقہ کے نائجیریا اور کانگو میں ہی پایا گیا ہے۔ ان میں کانگو میں پایا جانے والا منکی پاکس وائرس زیادہ خطرناک اور مہلک تھا۔ اس کی شرح اموات بھی کافی زیادہ تھی۔ جبکہ مغربی افریقہ کے دیگر حصوں میں یہ متعدی تو تھا ، لیکن کچھ کم مہلک تھا ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: