ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ریمڈیسویرانجکشن کی افادیت پرشکوک وشبہات کااظہار،کووڈ۔19کےعلاج ومعالجے سے جلد ہی کیاجاسکتاہے خارج

گنگا رام اسپتال کی چیئرپرسن ڈاکٹر ڈی ایس رانا نے بتایا ہے کہ ’’اگر ہم دیگر دوائیوں کے بارے میں بات کرتے ہیں جن کا استعمال ہم کووڈ علاج میں کرتے ہیں تو ، ریمیڈیشویر کے بارے میں ایسا کوئی ثبوت نہیں ہے جو کووڈ -19 علاج میں کام کرتا ہے‘‘۔

  • Share this:
ریمڈیسویرانجکشن کی افادیت پرشکوک وشبہات کااظہار،کووڈ۔19کےعلاج ومعالجے سے جلد ہی کیاجاسکتاہے خارج
علامتی تصویر

انڈین کونسل آف میڈیکل ریسرچ (Indian Council of Medical Research) کی جانب سے کووڈ۔19 کے علاج معالجے کے تجویز کردہ پروٹوکول سے قابو پانے والے پلازما کے استعمال کو چھوڑنے کے دنوں کے بعد گنگا رام اسپتال کی چیئرپرسن ڈاکٹر ڈی ایس رانا (Ganga Ram hospital Chairperson Dr. DS Rana) نے کہا ہے کہ ریمڈیسیویر (Remdesivir ) کو بھی جلد کوویڈ -19 علاج سے خارج کرنے پر غور کیا جارہا ہے۔


نیوز ایجنسی اے این آئی نے اطلاع دی کہ اگر ہم دیگر دوائیوں کے بارے میں بات کرتے ہیں جن کا استعمال ہم کووڈ علاج میں کرتے ہیں تو ، ریمیڈیشویر کے بارے میں ایسا کوئی ثبوت نہیں ہے جو کووڈ -19 علاج میں کام کرتا ہے۔ ڈاکٹر رانا نے کہا کہ ایسی دوائیں جن کو کام کرنے کے لئے کوئی سرگرمی نہیں ہے ، انہیں بند کرنا پڑے گا۔



انہوں نے مزید کہا کہ تمام تجرباتی دوائیں پلازما تھراپی (جو اب بند کردی گئی ہیں) ہو یا ریمڈیسیویر ان کے کام کا کوئی ثبوت نہ ہونے کی وجہ سے ان سب کو جلد ہی چھوڑ دیا جاسکتا ہے، فی الحال صرف تین دوائیں کام کر رہی ہیں۔

انہوں نے اے این آئی کو مزید بتایا کہ پلازما تھراپی میں ہم کسی کو پہلے سے بھیجے جانے والے اینٹی باڈی دیتے ہیں جو پہلے بھی انفکشن ہوچکا ہے، تاکہ اینٹی باڈی وائرس سے لڑ سکے۔ عام طور پر اینٹی باڈیز جب بنتی ہیں جب کورونویرس پر حملہ ہوتا ہے ، ہم نے پچھلے سال میں دیکھا ہے کہ پلازما دینے سے مریض اور دوسرے لوگوں کی حالت میں کوئی فرق نہیں پڑتا ہے۔ نیز یہ آسانی سے دستیاب نہیں ہے۔ پلازما تھراپی سائنسی بنیادوں پر شروع کی گئی تھی اور شواہد کی بنیاد پر بند کردی گئی ہے۔

ہندوستان میں عالمی وبا کورونا وائرس (کووڈ۔19) کی وجہ سے روز بہ روز صورت حال بھیانک شکل اختیار کرتی جارہی ہے۔ ایک دن میں سب سے زیادہ اموات ریکارڈ کی گئیں جب ہلاکتوں کی تعداد 4,529 نئی اموات کے ساتھ 2,83,248 ہوگئی۔بدھ کو وزارت صحت کی کے اعدادوشمار کے مطابق کورونا وائرس کے کیسوں میں یک روزہ اضافے کی شرح 2.67 لاکھ رہی۔ جس میں کیسوں کی کل تعداد 2,54,96,330 ہوگئی۔

صبح 8 بجے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق فعال کیس مزید کم ہوکر 32,26,719 رہ گئے ہیں جو مجموعی انفیکشن میں 12.66 فیصد ہیں جبکہ قومی COVID-19 کی وصولی کی شرح بہتر ہوکر 86.23 فیصد ہوگئی ہے۔حکومت کے ایک حالیہ اعداد و شمار نے انکشاف کیا ہے کہ کوویڈ 19 کے ذریعہ پوری ہندوستانی آبادی کا صرف 2 فیصد حملہ ہوا ہے اور باقی 98 فیصد ابھی بھی کمزور ہیں۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: May 19, 2021 02:35 PM IST