ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

آن لائن پڑھائی کی وجہ سے 13 سالہ لڑکی نے کر ڈالا ایسا خوفناک کام، بیٹی کو ایسی حالت میں دیکھ کر والدین کے اڑ گئے ہوش

کولکاتہ (Kolkata) کے امہر اسٹریٹ پولیس کوارٹر میں پیش آٸے خودکشی کے (suicide) اس واقعے نے کولکاتہ کے لوگوں کو صدمے میں ڈال دیا ہے، معصوم کی موت سے ہر آنکھ اشکبار ہے۔

  • Share this:
آن لائن پڑھائی کی وجہ سے 13 سالہ لڑکی نے کر ڈالا ایسا خوفناک کام، بیٹی کو ایسی حالت میں دیکھ کر والدین کے اڑ گئے ہوش
کولکاتہ (Kolkata) کے امہر اسٹریٹ پولیس کوارٹر میں پیش آٸے خودکشی کے (suicide) اس واقعے نے کولکاتہ کے لوگوں کو صدمے میں ڈال دیا ہے، معصوم کی موت سے ہر آنکھ اشکبار ہے۔

وہ والدین کی لاڈلی تھی والد کولکاتہ پولیس میں اسسٹنٹ سب انسپکٹر تھے وہ بھی بڑی ہوکر آئی پی ایس افسر بننا چاہتی تھی، لیکن کسے معلوم تھا کے سارے خواب ادھورے کے ادھورے رہ جائیں گے اور والدین کی لاڈلی بیٹی خود اپنے ہاتھوں اپنی زندگی کو ختم (commits suicide) کرلے گی۔ بلڈنگ کے نیچے بیٹی کا بے جان جسم خون میں لت پت پڑا تھا، ماں حیران و پریشان تھی۔ وہیں جب والد کو حادثے کی خبر ملی تو وہ بھی حیران رہ گئے اور پولیس کی گاڑی میں ہی اسپتال پہنچے لیکن تب تک بہت دیر ہوچکی تھی بیٹی سب کو روتا چھوڑ دنیا کو الوداع کہ چکی تھی۔ بیٹی کی موت سے والدین صدمے میں ہیں اور پولیس تحقیقات میں مصروف ہے۔


پولیس کو بچی کے کمرے سے سوسائیڈ نوٹ (Suicide NOTE ) ملا ہے جس میں بیٹی نے اپنی کیفیت بیان کی ہے وہ کیفیت جس سے والدین انجان تھے۔ 13سال کی معصوم ڈیپریشن کا شکار تھی بہت کچھ کرنے کا خواب سجانے والی یہ بیٹی امتحان میں کم نمبر ملنے سے پریشان تھی۔ ساتویں کلاس کی طالبہ کولگتا تھا کہ وہ آئی پی ایس نہیں بن سکے گی، اپنے والدین کے خواب کو پورا نہیں کرسکتی ہے، اس لئے اس نے اپنی زندگی ختم کرلی۔


کولکاتہ (Kolkata) کے امہر اسٹریٹ پولیس کوارٹر میں پیش آٸے خودکشی کے (suicide) اس واقعے نے کولکاتہ کے لوگوں کو صدمے میں ڈال دیا ہے، معصوم کی موت سے ہر آنکھ اشکبار ہے۔



کولکاتہ کے لال بازار پولیس ہیڈ کوارٹر میں اسسٹنٹ سب انسپکٹر کی بیٹی تیرہ سالہ اندجیتا منڈل نے شہر کے امہر اسٹریٹ پولیس کوارٹر کی دسویں منزل سے کود کر خودکشی کرلی۔ اندجیتا شہر کے مشہور انگلش میڈیم اسکول میں ساتویں جماعت کی طالبہ تھی۔ اندجیتا بڑی ہوکر آئی پی ایس افسر بننا چاہتی تھی، لیکن کوروناوبا کے دوران جہاں تعلیمی ادارے بند ہیں، اندجیتا بھی آن لاٸن پڑھاٸی کررہی تھی۔ تاہم وہ آن لاٸن پڑھاٸی سے مطمئن نہیں تھی۔ موبائل فون پر پڑھنا اسے اچھا نہیں لگ رہا تھا اسے لگتا تھا کہ اس طرح پڑھاٸی کرنے سے اس کا خواب مکمل نہیں ہوسکے گا۔

تعلیم کو لیکر اندجیتا کی اپنی والدہ سے بھی بحث و تکرار ہوتی تھی۔ وہ آن لاٸن پڑھنا نہیں چاہتی تھی، وہ چاہتی تھی کہ جلد از جد اسکول کھل جاٸے اور اسکول جاکر تعلیم حاصل کرے۔ آن لاٸن امتحان میں کم نمبر آنے کی وجہ سے وہ اور بھی زیادہ پریشان ہوگٸی تھی۔ اس کے کمرے سے ملے خودکشی نوٹ میں لکھا ہے کہ "میں مایوسی کی وجہ سے یہ راستہ اختیار کررہی ہوں، اس حادثے کے لئے کوٸی بھی ذمہ دار نہیں ہے'۔ حالانکہ معصوم کی موت نے کئی سوال اٹھاٸے ہیں۔ فی الحال پولیس تحقیقات میں مصروف ہے۔ بتایاجارہاہے کہ اسکول جاکر بھی پولیس ٹیم تحقیقات کرے گی۔
Published by: sana Naeem
First published: Sep 16, 2020 05:32 PM IST