ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

بہار میں سیلاب کا قہر جاری ، 14 اضلاع کے تقریبا 56 لاکھ لوگ متاثر

مشرقی چمپارن ، مغربی چمپارن ، سیتا مڑھی ، شیوہر، سپول ، کشن گنج ، دربھنگہ ، گوپال گنج ، مظفرپور ، سمستی پور ، سارن ، کھگڑیا، مدھوبنی اور سیوان کے ہزاروں گاؤں میں سیلاب کا پانی داخل ہوچکا ہے ۔

  • Share this:
بہار میں سیلاب کا قہر جاری ، 14 اضلاع کے تقریبا 56 لاکھ لوگ متاثر
بہار میں سیلاب کا قہر جاری ، 14 اضلاع کے تقریبا 56 لاکھ لوگ متاثر

بہار کے چودہ اضلاع میں سیلاب اپنا قہر برپا کررہا ہے ۔ مشرقی چمپارن ، مغربی چمپارن ، سیتا مڑھی ، شیوہر، سپول ، کشن گنج ، دربھنگہ ، گوپال گنج ، مظفرپور ، سمستی پور ، سارن ، کھگڑیا، مدھوبنی اور سیوان کے ہزاروں گاؤں میں سیلاب کا پانی داخل ہوچکا ہے ۔ متاثرہ علاقہ کے لوگوں کو محفوظ مقامات پر پہنچایا جارہا ہے ۔ این ڈی آر ایف اور ایس ڈی آر ایف کی ٹیم کام کررہی ہے وہیں ایک ہزار تین سو 58 کمیونٹی کچن کا انتظام کیا گیا ہے ، جہاں متاثرین کے لئے کھانے پینے کا انتظام ہے ۔


واضح رہے کہ وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے اعلان کیا ہے کہ قدرتی آفات کے شکار لوگوں کا ریاست کے خزانہ پر پہلا حق ہے ۔ ایسے لوگ جو سیلاب سے تباہ ہوچکیے ہیں ، ان کے کھاتے میں چھ چھ ہزار روپے بھیجے گئے ہیں ، لیکن سب سے بڑا سوال یہ ہے کہ سیلاب متاثرین اب عارضی مدد کی نہیں مستقل مسئلہ کا حل چاہتے ہیں ۔ دراصل انڈو نیپال کے سرحدی ضلع میں ہر سال سیلاب آتا ہے اور تباہی مچا کر چلا جاتا ہے ۔ سیلاب سے متاثرہ افراد کو دوبارہ اپنی زندگی پٹری پر لانے میں کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ، جبکہ حکومت مسئلہ کے حل کی یقین دہانی کرا کر چین کی نیند سو جاتی ہے ۔


بہار میں سیلاب کا قہر جاری۔
بہار میں سیلاب کا قہر جاری۔


یہ سال چونکہ بہار کا انتخابی سال ہے ، نتیجہ کے طور پر ہر سیاسی پارٹی کی زبان پر سیلاب متاثرین کا درد تو ہے ، لیکن سیلاب زدہ علاقوں میں سیلاب کا کوئی مستقل حل نہیں ہے ۔ جانکاروں کے مطابق سیلاب پر سیاسی پارٹیاں ماضی میں بھی سیاست کرتی رہی ہیں اور ابھی بھی سیاست کررہی ہیں ، جبکہ لوگوں کو سیلاب کے مسئلہ کے مستقل حل کی ضرورت ہے۔

ادھر سیلاب کے سبب سیکڑوں گاؤں میں سڑکیں ٹوٹ چکی ہیں ، تعلیمی ادارے اور اسپتالوں کا حال برا ہے ، کھیتی برباد ہوچکی ہے اور روزگار کا کوئی انتظام نہیں ہے ۔ لوگ مدد کی امید لگائے بیٹھے ہیں ، لیکن سوال ہے کہ کیا اپنا سب کچھ لٹا چکے لوگوں کو حکومت دوبارہ زندگی دے سکتی ہے۔ شاید نہیں ، یہی وجہ ہے کہ سیلاب متاثرین اس مسئلہ کا مسقل حل کرنے کا حکومت سے مطالبہ کررہے ہیں ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Aug 06, 2020 02:28 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading