உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کولکاتہ کے ملی الامین کالج میں داخلے کا عمل ہوا بند ، کالج کمیٹی پریشان ، حکومت خاموش 

    کولکاتہ کے ملی الامین کالج میں داخلہ ہوا بند ، کالج کمیٹی پریشان ، حکومت خاموش 

    کالج میں گزشتہ سال داخلہ بند رہا تھا اور امسال داخلے کا عمل شروع تو کیا گیا ، لیکن اب اس پر روک لگادی گئی ہے ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
    کولکاتہ کا ملی الامین کالج ایک بار پھر تنازع کا شکارہوگیا ہے ۔ بنگال میں بارہویں جماعت کے نتاٸج کے اعلان کے بعد اب کالجوں میں آن لائن داخلے کا عمل شروع ہوچکا ہے ۔ ملی الامین کالج میں بھی داخلے کا سلسلہ شروع کیا گیا تھا ، لیکن اب داخلے پر روک لگادی گئی ہے ۔ ملی الامین کالج شہر کا واحد ادارہ ہے ، جو آزادی کے بعد مسلمانوں کی جانب سے لڑکیوں کی اعلی تعلیم کے لٸے بنایا گیا تھا ۔ کم نمبرات لانے کے باعث کالجوں میں داخلہ پانے سے محروم لڑکیوں کے اعلی تعلیم کے خواب کو پوارا کرنے کے لٸے یہ کالج 1992 میں قاٸم کیا گیا ۔ جہاں مسلم طلبات کے ساتھ غیر مسلم طالبات نے بھی داخلہ لیا ۔

    کالج کو قومی کمیشن براٸے اقلیتی تعلیمی ادارے کی جانب سے اقلیتی ادارے کا درجہ بھی دیا گیا۔ لیکن بعد میں ممتا حکومت نے کالج کے اقلیتی کردار کو ناقابل قبول بتاتے ہوئے کالج کی اقلیتی حثیت ختم کردی ، جس کے بعد سے ہی کالج تنزلی کا شکار ہے ۔ کالج کمیٹی کو حکومت تسلیم کرنے میں ناکام  ہے ۔ جبکہ ٹیچر انچارج بیساکھی بنرجی کو ، جو اس کالج سے استعفی دے چکی ہیں ، حکومت کی جانب سے انہیں کالج میں دوبارہ ٹیچر انچارج و کمیٹی ممبر کے طور بحال کرنے کا اعلان کیا گیا تھا ، جسے کالج انتظامیہ تسلیم کرنے سے قاصر ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ ایک اعلی تعلیمی ادارہ ترقی پانے کی بجائے حکومت کی بے توجہی کے باعث تنزلی کا شکار ہے ۔

    کالج میں گزشتہ سال داخلہ بند رہا تھا اور امسال داخلے کا عمل شروع تو کیا گیا ، لیکن اب اس پر روک لگادی گئی ہے ۔ انتظامیہ کے مطابق محکمہ تعلیم اور ٹیچر انچارج بیساکھی بنرجی کی طرف سے کوئی تعاون نہیں مل رہا ہے ۔ تو دوسری طرف کالج کی ٹیچر انچارج نے ملی آرگنائزیشن کو ہی کٹہرے میں کھڑا کردیا ہے ۔ ملی آرگنائزیشن کے سینئر ممبر شاہنواز عارفی نے کہا کہ محکمہ تعلیم کے افسران کی یقین دہانی باوجود کالج میں داخلہ کا عمل متاثر ہورہا ہے ۔

    کالج میں گزشتہ سال داخلہ بند رہا تھا اور امسال داخلے کا عمل شروع تو کیا گیا ، لیکن اب اس پر روک لگادی گٸی ہے ۔
    کالج میں گزشتہ سال داخلہ بند رہا تھا اور امسال داخلے کا عمل شروع تو کیا گیا ، لیکن اب اس پر روک لگادی گٸی ہے ۔


    انہوں نے کہا کہ داخلہ کا عمل شروع ہونے کے بعد بیساکھی بنرجی سے رابطہ کیا گیا تھا مگر کوئی بھی جواب نہیں آیا ۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ تعلیم کے افسران سے جب رابطہ کیا گیا تو وہ اپنی لاچاری کا اظہار کررہے ہیں ۔ داخلہ کی کارروائی کے لئے کولکاتہ یونیورسٹی کے وائس چانسلر، رجسٹرار اور کالج انسپکٹر سے رابطہ کیا گیا ، مگر وہاں سے بھی کوئی مدد نہیں ملی ۔ ریاستی وزیر تعلیم پارتھو چٹرجی نے یہ کہتے ہوئے ملاقات کرنے سے انکار کردیا کہ کورونا کی وجہ سے وہ کسی سے ملاقات نہیں کرتے ہیں ۔

    شاہنواز عارفی کے مطابق اس تعلق سے  وزیر اعلی ممتا بنرجی کو بھی خط لکھا گیا ، مگر خط کا کوئی جواب نہیں ملا ہے ۔ کمیٹی پریشان ہے کہ داخلہ بند ہے ۔ کمیٹی کو حکومت کی تجویز کا انتظار ہے ۔ ان کے مطابق ستمبر تک اگر حکومت کوئی جواب نہیں دیتی ہے ، تو اقدامات کٸے جائیں گے ۔ جبکہ بیساکھی بنرجی کے مطابق داخلے کا اختیار کالج کمیٹی کو ہے ، جبکہ ملی آرگناٸزیشن نے داخلے کی کارروائی شروع کی جو حیران کن ہے ۔ ہر کوئی اس ادارے کے تعلق سے خاموش ہے ۔ سیاسی چالیں چلی جارہی ہیں ، جن میں طلبہ کے مستقبل کو درکنار کردیا گیا ہے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: