ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

بہار کے سابق وزیر شمائل نبی کا مودی حکومت کو تین طلاق بل پیش نہ کرنے کا مشورہ

آل انڈیا مسلم کانفرنس کے صدر اور بہار کے سابق وزیر شمائل نبی نے کہا ہے کہ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے فیصلے کے پیش نظر مرکزی حکومت کو طلاق ثلاثہ سے متعلق کوئی بل پارلیمنٹ کے جاری اجلاس میں پیش نہیں کر نا چاہئے۔

  • UNI
  • Last Updated: Dec 25, 2017 08:44 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
بہار کے سابق وزیر شمائل نبی کا مودی حکومت کو تین طلاق بل پیش نہ کرنے کا مشورہ
آل انڈیا مسلم کانفرنس کے صدر اور بہار کے سابق وزیر شمائل نبی نے کہا ہے کہ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے فیصلے کے پیش نظر مرکزی حکومت کو طلاق ثلاثہ سے متعلق کوئی بل پارلیمنٹ کے جاری اجلاس میں پیش نہیں کر نا چاہئے۔

پٹنہ : آل انڈیا مسلم کانفرنس کے صدر اور بہار کے سابق وزیر شمائل نبی نے کہا ہے کہ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے فیصلے کے پیش نظر مرکزی حکومت کو طلاق ثلاثہ سے متعلق کوئی بل پارلیمنٹ کے جاری اجلاس میں پیش نہیں کر نا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو چاہئے کہ وہ اس معاملے کی حساس نوعیت کا پاس رکھے اورجاری سرمائی پارلیمانی اجلاس میں تین طلاق کے معاملے پر وہ جوبل پیش کرنا چاہتی ہے اُسے مسلم پرسنل لا بورڈ کے فیصلے کو دیکھتے ہوئے پیش نہ کرے۔

واضح رہے کہ مرکزی حکومت پارلیمنٹ کے اسی سیشن میں تین طلاق سے متعلق بل لوک سبھا میں لانا چاہتی ہے۔ مسٹر شمائل نبی نے کہا کہ مرکزی حکومت کو پرسنل لا بورڈ کے فیصلے کو تسلیم کرناچاہیے۔ یہ مسلمانوں کے شرعی قانون کا مسئلہ ہے۔ اس لئے اس میں کسی طرح کی مداخلت نامناسب ہوگی ۔ مسلم پرسنل لا بورڈ نے بھی صاف طور پر کہہ دیا ہے کہ تین طلاق کے معاملے پر جو بل سرکار پیش کر نا چاہتی ہے، بورڈ اس کے خلاف ہے۔

انہوں نے کہا کہ متعلقہ بل ملک کے رہنے والے لوگوں کی ایک بڑی آبادی کو منظور نہیں ہے اس لئے سرکار کو یہ بل پیش نہیں کرنا چایئے۔مسٹر شمائل نبی کی مرکزی حکومت سے اپیل کی کہ وہ معاملہ کی سنگینی اور اس کی حس نوعیت کو سمجھنے کی کوشش کرے اور اپنے ارادے پر دوبارہ غور کرتے ہوئے بل پیش نہ کرے۔

First published: Dec 25, 2017 08:44 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading