உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Bilkis Bano Case: سپریم کورٹ میں 9 ستمبر کو بلقیس بانو کیس پر ہوگی سماعت، قصورواروں کو معافی کے خلاف چیلنج

    بالقیس بانو (فائل فوٹو)

    بالقیس بانو (فائل فوٹو)

    Bilkis Bano Case: اس کیس میں مجرم قرار دیے گئے 11 افراد 15 اگست کو گودھرا سب جیل سے رہا کیے گئے۔ اس وقت گجرات حکومت نے اپنی معافی کی پالیسی کے تحت ان کی رہائی کی اجازت دی تھی۔ وہ جیل میں 15 سال سے زیادہ کا عرصہ مکمل کر چکے تھے۔ عدالت نے کہا تھا کہ کیا یہ معافی اخلاقی طور پر درست ہے؟

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi Cantonment, India
    • Share this:
      گجرات فسادات (Gujarat riots) کے دوران 2002 میں بلقیس بانو کی اجتماعی عصمت دری کے کیس پر سپریم کورٹ (Supreme Court) میں 9 ستمبر کو سماعت ہوگی۔ بلقیس بانو اور ان کے خاندان کے سات افراد کے قتل کے معاملے میں 11 مجرموں کی رہائی کو چیلنج کرنے والی دو درخواستوں پر سپریم کورٹ جمعہ کو سماعت کرے گا۔

      سپریم کورٹ کی ویب سائٹ پر اپ لوڈ کردہ فہرست کے مطابق جسٹس اجے رستوگی اور بی وی ناگرتھنا کی بنچ 9 ستمبر کو سی پی آئی (ایم) لیڈر سبھاشنی علی، صحافی ریوتی لاول اور کارکن روپ ریکھا رانی کی طرف سے دائر درخواستوں کی سماعت کرے گی۔ ٹی ایم سی ایم پی مہوا موئترا نے بھی گجرات حکومت کی طرف سے قصورواروں کو معافی دینے کو چیلنج کرتے ہوئے ایک علیحدہ عرضی دائر کی ہے۔

      اس سے قبل 25 اگست کو اس وقت کے چیف جسٹس این وی رمنا کی سربراہی والی بنچ نے عہدہ چھوڑنے سے ایک دن قبل درخواستوں پر مرکز اور گجرات حکومت کو نوٹس جاری کیا تھا۔ سپریم کورٹ نے تمام عرضی گزاروں سے فریقین کے طور پر شامل کرنے کو کہا تھا۔ جنہیں معافی دی گئی ہے۔ نیوز 18 کے مطابق اس وقت بلقیس بانو کی عمر 21 سال تھی اور وہ پانچ ماہ کی حاملہ تھی جب گودھرا ٹرین جلانے کے واقعے کے بعد پھوٹنے والے فسادات سے فرار ہوتے ہوئے اس کے ساتھ اجتماعی عصمت دری کی گئی تھی۔ ہلاک ہونے والے خاندان کے سات افراد میں اس کی تین سالہ بیٹی بھی شامل تھی۔

      یہ بھی پڑھیں:
      China Earthquake: زلزلے سے چین میں تباہی، سیچوان میں کئی عمارتیں ملبے کے ڈھیر میں تبدیل

      اس کیس میں مجرم قرار دیے گئے 11 افراد 15 اگست کو گودھرا سب جیل سے رہا کیے گئے۔ اس وقت گجرات حکومت نے اپنی معافی کی پالیسی کے تحت ان کی رہائی کی اجازت دی تھی۔ وہ جیل میں 15 سال سے زیادہ کا عرصہ مکمل کر چکے تھے۔ عدالت نے کہا تھا کہ کیا یہ معافی اخلاقی طور پر درست ہے؟

      یہ بھی پڑھیں:

      Liz Truss: کیا برطانیہ کی نئی وزیر اعظم روس۔ یوکرین جنگ کو روکنے میں ہوگی کامیاب؟

      بنچ نے کہا کہ جو لوگ سزا یافتہ ہیں اور اپنی سزا پوری کر لیتے ہیں، کیا وہ واقعی معافی کے اہل ہیں اور کیا انھیں استثنیٰ دیا جاسکتا ہے؟ کیا یہ کہنا کافی ہے کہ وہ معافی کے حقدار نہیں ہیں۔ 23 اگست کو عدالت عظمیٰ نے ریاست کی طرف سے معافی کی منظوری کو چیلنج کرنے والی درخواست کو فہرست میں شامل کرنے پر غور کرنے پر اتفاق کیا تھا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: