உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بنگال کا اقتدار حاصل کرنے کے لئے کیا بی جے پی کو کسی سوامی کی ہے تلاش 

    بنگال کا اقتدار حاصل کرنے کے لئے کیا بی جے پی کو کسی سوامی کی ہے تلاش 

    بنگال کا اقتدار حاصل کرنے کے لئے کیا بی جے پی کو کسی سوامی کی ہے تلاش 

    بی جے پی کے کئی لیڈران نے ترنمول کانگریس کا دامن تھام لیا ہے وہیں ریاستی بی جے پی کے لیڈران و قومی لیڈران کے درمیان بھی دوری دیکھنے کو مل رہی ہے۔

    • Share this:
    لوک سبھا الیکشن میں بنگال کی 18 سیٹوں پر کامیابی حاصل کرکے بی جے پی نے بنگال کی سیاست مس اپنے قدم تو جماٸے لیکن بنگال کی اقتدار کی کمان سنبھالنے کے لئے آخر بی جے پی کا کون چہرہ ہوگا یہ ایک بڑا سوال ہے ۔کیونکہ بنگال میں سیاسی کامیابی حاصل کرنے کے باوجود بی جے پی کو بنگال میں سیاسی طور پر مضبوطی حاصل کرنے کے لئے جدوجہد کرنی پڑرہی ہے۔

    بی جے پی کے کئی لیڈران نے ترنمول کانگریس کا دامن تھام لیا ہے وہیں ریاستی بی جے پی کے لیڈران و قومی لیڈران کے درمیان بھی دوری دیکھنے کو مل رہی ہے۔ کہا یہ بھی جارہا ہے کہ ریاستی بی جے پی لیڈران کو قومی سطح پر زیادہ مواقع نہیں ملتے ایسے میں آخر بی جے پی کی جانب سے بنگال کے وزیر اعلی کے امیدوار کے طور  پر کسے سامنے لایا جاٸے گا اس کو لیکر قیاس آرائیاں شروع ہوچکی ہیں۔ جیسے جیسے اسمبلی الیکشن نزدیک آ رہا ہے بی جے پی مں ایک نئی بحث شروع ہو گئی ہے کہ اگر 2021میں بی جے پی اقتدار میں آئے گی تو وزیرا علی کون ہوگا۔

    بی جے پی کے ممبر پارلیمنٹ سومترا خان نے اس بحث کو آگے بڑھاتے ہوئے کہا ہے کہ اگر بنگال میں بی جے پی اقتدار میں آئے گی تو ایک ”گیروا دھاری“ وزیر اعلی ہوگا۔ انہو ں نے کہا کہ 2021 میں بی جے پی کے وزیر اعلی کے امیدوار رام کرشن مشن کے کوئی مہاراجا ہوں گے۔ یوتھ ونگ کے ریاستی صدر اور ممبر پارلیمنٹ سومترا خان سوشل میڈیا پر اپنے متنازعہ بیانات کی وجہ سے ہمیشہ سرخیوں میں رہتے ہیں۔ اب ان کے اس نئے بیان سے بی جے پی میں ایک نئی بحث شروع ہوگئی ہے جو آنے والے دنوں میں کس کے نام پر جاکر رکے گی یہ دیکھنا اہم ہوگا۔
    Published by:Nadeem Ahmad
    First published: