ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

کولکاتا میں بی جے پی کی ریلی میں برآمد ہوئے ہتھیاروں نے اٹھائے سوال

احتجاجی ریلی کے دوران بی جے پی کیڈروں کے پاس سے برآمد ہوئے ہتھیاروں سے ایک بڑا سوال کھڑا ہوا ہے۔ سوال یہ ہے کہ اخر احتجاجی ریلی کے ذریعہ سیاسی جماعت کا مقصد کیا تھا۔ آخر ہتھیار لے کر بی جے پی کے کیڈر احتجاجی ریلی میں کیا کر رہے تھے۔

  • Share this:
کولکاتا میں بی جے پی کی ریلی میں برآمد ہوئے ہتھیاروں نے اٹھائے سوال
کولکاتا میں بی جے پی کی ریلی میں برآمد ہوئے ہتھیاروں نے اٹھائے سوال

کولکاتا۔ سیاسی جماعتوں کا ایک دوسری پارٹیوں کے ساتھ آمنے سامنے ہونا، ایک دوسرے کے خلاف احتجاج کرنا سیاست میں عام سی بات ہے لیکن بنگال میں برسراقتدار ترنمول کانگریس کے خلاف بی جے پی کی احتجاجی ریلی نے کئی سوال کھڑے کئے ہیں۔ احتجاجی ریلی کے دوران بی جے پی کیڈروں کے پاس سے برآمد ہوئے ہتھیاروں سے ایک بڑا سوال کھڑا ہوا ہے۔ سوال یہ ہے کہ اخر احتجاجی ریلی کے ذریعہ سیاسی جماعت کا مقصد کیا تھا۔ آخر ہتھیار لے کر بی جے پی کے کیڈر احتجاجی ریلی میں کیا کر رہے تھے۔ کیا ریاست میں تشدد پھیلانے کا کوئی منصوبہ تھا۔ اس طرح کے کئی سوال ہیں جو برسر اقتدار جماعت کے لیڈران اٹھا رہے ہیں۔ پولیس کی جانب سے بھی کچھ ایسا ہی دعویٰ کیا جارہا ہے۔


بنگال میں بڑھتی بدعنوانی، بیروزگاری اور تشدد کے خلاف بی جے پی ممتا حکومت کے خلاف میدان میں اتری تھی۔ بی جے پی کی جانب سے ریاستی سیکرٹریٹ نبانو کے گھیراؤ کا اعلان کیا گیا تھا۔ ریاست بھر سے بی جے پی کے لیڈران احتجاجی ریلی میں شامل ہونے کے لئے ہوڑہ پہنچے۔ وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی کے دفتر نبانو کے چاروں طرف سیکورٹی سخت کردی گئی تھی اور یہاں تک پہنچنے کے تمام راستے بند کر دیے گئے تھے۔ بی جے پی نے پولیس پر بی جے پی ورکروں کو گرفتار کرنے کا الزام لگایا۔


ریلی شروع ہوتے ہی حالات بے قابو ہوگئے جس کے بعد پولیس کو آنسو گیس کے گولے چھوڑنے پڑے۔ لاٹھی چارج کرنا پڑی۔ پولیس کے مطابق ریلی میں شامل لوگوں کی جانب سے بھی پولیس پر پتھراؤ کیا گیا تھا جس کے بعد پولیس کو لاٹھی چارج کرنی پڑی۔ ریاستی وزیر فرہاد حکیم نے الزام لگایا کہ ریلی میں شریک لوگوں کو ہتھیاروں کے ساتھ گرفتار کیا گیا ہے اور بڑی تعداد میں ورکروں کے پاس سے ہتھیار برآمد کیے گئے ہیں۔ ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی کہا ہے کہ بی جے پی کی ریلی میں باہر کے لوگوں کو شامل کیا گیا تھا۔ ایسے میں سب سے بڑا سوال یہ ہے کہ عام لوگوں کے مدعے کو سامنے رکھ کر کی جانے والی اس طرح کی سیاست میں کیا صرف سیاسی مقصد ہی اہم ہوتا ہے۔

Published by: Nadeem Ahmad
First published: Oct 09, 2020 08:28 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading