ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

بنگال میں ائمہ مساجد کے بعد پنڈتوں کو ماہانہ وظیفہ دیئے جانے کے اعلان پر کلکتہ ہائی کورٹ نے ممتا حکومت سے مانگا جواب

وزیر اعلی ممتا بنرجی نے گزشتہ ماہ 14 ستمبر کو ہندو پجاریوں کے لئے ماہانہ ایک ہزار روپئے کی مالی مدد دینے کا اعلان کیا تھا۔ جج سنجر بنرجی اور ارجیت بنرجی پر مشتمل ڈویژن بنچ نے ریاستی حکومت کو ہدایت کی کہ وہ درگا پوجا کی تعطیلات کے بعد ایک ہفتہ کے اندر حلف نامہ داخل کرے اور اس کے جواب میں اگر کوئی ہے تو اس کے بعد ایک ہفتہ کے اندر عرضی دائر کی جا سکتی ہے۔

  • Share this:
بنگال میں ائمہ مساجد کے بعد پنڈتوں کو ماہانہ وظیفہ دیئے جانے کے اعلان پر کلکتہ ہائی کورٹ نے ممتا حکومت سے مانگا جواب
پنڈتوں کو ماہانہ وظیفہ دیئے جانے کے اعلان پر کلکتہ ہائی کورٹ نے ممتا حکومت سے مانگا جواب

بنگال میں آئندہ سال اسمبلی الیکشن ہے۔ ایسے میں ہر سیاسی جماعت سماج کے ہر طبقے تک پہنچنے کی کوششوں میں ہے۔ وزیر اعلی ممتا بنرجی نے گزشتہ ماہ ریاست کے پنڈتوں کو معاوضہ دینے کا اعلان کیا تھا۔ تاہم پنڈتوں کو تنخواہ دیئے جانے کے  فیصلے پر کلکتہ ہائی کورٹ نے مداخلت کرتے ہوئے حکومت سے اس معاملے میں جواب طلب کیا ہے۔


کلکتہ ہائی کورٹ نے پنڈتوں کو ماہانہ تنخواہ دینے کے معاملے میں مغربی بنگال حکومت کو حلف نامہ داخل کرنے کی ہدایت دی ہے۔ سیٹو لیڈر سورو دتہ نے حکومت کے اس اعلان کے خلاف کلکتہ ہائی کورٹ میں عرضی دائر کی تھی۔ دتہ کی پیروی کرتے ہوئے سینئر وکیل بکاش رنجن بھٹاچاریہ نے عدالت سے کہا کہ ریاست کے ائمہ مساجد کے گرانٹ کو عدالت پہلے ہی غیر قانونی قرار دے چکی ہے تو پھر حکومت مذہبی بنیاد پر پنڈتوں کو ماہانہ تنخواہ کیسے دے سکتی ہے۔


ریاستی حکومت نے 2012 میں ریاست کے 30 ہزار ائمہ اور موذنین کے لئے ماہانہ الاؤنس کا اعلان کیا تھا۔ 2013 میں کلکتہ ہائی کورٹ نے اس فیصلے کو’’غیر آئینی اور عوامی مفاد کے خلاف‘‘ قرار دیا تھا۔ اس کے بعد حکومت نے سرکاری تحویل میں شامل وقف بورڈ کی جائدادوں کی دیکھ بھال کے لئے ایک الگ فنڈ تشکیل دیا اور وقف بورڈ کے ماتحت ائمہ و موذنین کو تنخواہ دینے کا فیصلہ کیا۔ ریاست کے تقریبا 60 ہزار ائمہ و موذنین کو وقف بورڈ وظیفہ ادا کرتی ہے۔


وزیر اعلی ممتا بنرجی نے گزشتہ ماہ 14 ستمبر کو ہندو پجاریوں کے لئے ماہانہ ایک ہزار روپئے کی مالی مدد دینے کا اعلان کیا تھا۔ جج سنجر بنرجی اور ارجیت بنرجی پر مشتمل ڈویژن بنچ نے ریاستی حکومت کو ہدایت کی کہ وہ درگا پوجا کی تعطیلات کے بعد ایک ہفتہ کے اندر حلف نامہ داخل کرے اور اس کے جواب میں اگر کوئی ہے تو اس کے بعد ایک ہفتہ کے اندر  عرضی دائر کی جا سکتی ہے۔ عدالت نے ہدایت دی ہے کہ یہ معاملہ حلف نامہ داخل کرنے کے ایک ہفتہ بعد سماعت کے لئے پیش کیا جائے گا۔ سورو دتہ نے ریاست میں ہر درگا پوجا کمیٹی کو 50,000 روپے کی گرانٹ دینے کے ریاستی حکومت کے فیصلے کو بھی چلینج کیا ہے۔ درخواست گزار نے دعوی کیا کہ اس طرح کے گرانٹ ہندوستان میں سیکولرازم کے تصور کے خلاف ہے اور اس سے آئین کے ذریعہ شہریوں کے بنیادی حقوق کو ٹھیس پہنچتی ہے۔ وزیر اعلیٰ نے 24 ستمبر کو ریاست میں تقریبا 37,000 درگا پوجا کمیٹیوں کو فی کمیٹی  پچاس ہزار روپے دینے کااعلان کیا تھا۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Oct 14, 2020 01:37 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading