உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ٹیچرس ڈے پر لڑکیوں کے سامنے ہی گرو جی نے کر ڈالی انتہائی شرمناک حرکت، سامنے آیا ویڈیو

    شہر کے کریم گنج علاقے میں رہنے والے مشہور ٹیچر  زبیرخان کے تعلیمی ادارے کی یہ  قابل اعتراض ویڈیو وائرل ہونے کے بعد کئی سوالات اٹھ رہے ہیں۔

    شہر کے کریم گنج علاقے میں رہنے والے مشہور ٹیچر زبیرخان کے تعلیمی ادارے کی یہ قابل اعتراض ویڈیو وائرل ہونے کے بعد کئی سوالات اٹھ رہے ہیں۔

    شہر کے کریم گنج علاقے میں رہنے والے مشہور ٹیچر زبیرخان کے تعلیمی ادارے کی یہ قابل اعتراض ویڈیو وائرل ہونے کے بعد کئی سوالات اٹھ رہے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      گیا۔ ٹیچرس ڈے کے موقع پر بہار سے ایک شرمناک ویڈیو  (Gaya Viral Video)منظر عام پر آیا ہے۔ اس ویڈیو میں کوچنگ آپریٹر نہ صرف لونڈا کے ساتھ ڈانس کر رہے ہیں بلکہ فحش گانوں پر بھی بیحد ہی قابل اعتراض اور غیر مہذب انداز میں ڈانس  کر رہے ہیں وہ بھی کوچنگ کے لڑکوں اور لڑکیوں کی موجودگی میں۔ ویڈیو گیا کے معروف تعلیمی ادارے کا ہے۔ اتوار یعنی 5 ستمبر کو ٹیچرس ڈے   (Teacher's day viral video)  کے موقع پر ہونے والے اس لونڈا ناچ کا ویڈیو سوشل میڈیا پر  تیزی سے وائرل ہو رہا ہے۔

      یہ پہلی بار نہیں ہے کہ ویڈیو وائرل ہوئی ہو۔ معلومات کے مطابق گزشتہ سال بھی طلبا کے ڈانس کا ویڈیو وائرل ہوا تھا۔ دراصل یوم اساتذہ کے موقع پر ایک معروف و مشہور تعلیمی ادارے کے ڈائریکٹر زبیر خان نے اپنے انسٹی ٹیوٹ میں ایک پروگرام کا اہتمام کیا تھا۔ پروگرام کے دوران نہ صرف فحش ڈانس ہوا بلکہ لونڈا ناچ میں گانے پر انتہائی شرمناک ٹھمکے لگا کر استاد اور شاگرد کا رشتہ تار تار کر دیا گیا۔

      شہر کے کریم گنج علاقے میں رہنے والے مشہور ٹیچر  زبیرخان کے تعلیمی ادارے کی یہ ویڈیو وائرل ہونے کے بعد کئی سوالات اٹھ رہے ہیں۔ اس ویڈیو میں زبیر خان خود طلبا  کے ساتھ کوچنگ میں لونڈا ڈانس کے دوران  ٹھمکے لگاتے ہوئے نظر آرہے ہیں اور وہاں طالبات بھی موجود ہیں۔


      آپ کو بتادیں کہ گزشتہ سال بھی ٹیچرس ڈے کے موقع پر کوچنگ میں زیر تعلیم طلبا کے ساتھ فحش گانوں پر ڈانس کرتے ہوئے  ویڈیو وائرل ہوئی تھی۔ اس پر کافی تنقید کی گئی تھی لیکن اس سال ایک بار پھر استاد اور شاگرد کے رشتے کو شرمسار کرنے والی یہ ویڈیو وائرل ہو گئی ہے۔ گیا کے مقامی باشندوں نے اس وائرل ویڈیو پر اعتراض  ظاہر کیا ہے۔ اس کے ساتھ انتظامیہ سے اس معاملے پر کارروائی کا بھی مطالبہ کیا گیا ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: