உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    گجرات پولیس نے ایک سال میں 6,500 کروڑ روپے کی منشیات کوکیا ضبط، بڑے راز کا ہوا انکشاف

    ’’وہ پاکستان میں مقیم اپنے کنکشنز سے منشیات حاصل کرتا تھا‘‘۔

    ’’وہ پاکستان میں مقیم اپنے کنکشنز سے منشیات حاصل کرتا تھا‘‘۔

    Harsh Sanghavi: گجرات کے وزیر مملکت برائے داخلہ ہرش سنگھاوی نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ 2002 کے بلقیس بانو اجتماعی عصمت دری کیس کے تمام 11 قصورواروں کو جلد از جلد جیل واپس بھیج دیا جائے۔ جنہیں ریاستی حکومت کی طرف سے عمر قید کی سزا معاف کرنے کے بعد گزشتہ ماہ رہا کیا گیا تھا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Gujarat | Jammu | Mumbai | Ahmadabad Cantonment | Hyderabad
    • Share this:
      گجرات ریاستی حکومت نے بدھ کے روز اسمبلی میں بتایا کہ گجرات پولیس نے گزشتہ ایک سال کے دوران 6,500 کروڑ روپے کی منشیات ضبط کی ہیں اور منشیات کی اسمگلنگ میں ملوث تقریباً 750 لوگوں کو جیل بھیجا ہے۔ منشیات کے مسئلہ پر اسمبلی میں گرما گرم بحث کے دوران گجرات کے وزیر مملکت برائے داخلہ ہرش سنگھاوی (Harsh Sanghavi) نے اپوزیشن کانگریس سے کہا کہ وہ اس معاملے پر سیاست کرنا بند کرے کیونکہ اس سے پولیس کا مورال ٹوٹتا ہے۔

      انہوں نے کہا کہ گجرات پولیس نے منشیات کی لعنت کے خلاف کریک ڈاؤن کیا ہے۔ گجرات پولیس نے دیگر ریاستوں جیسے مغربی بنگال، یوپی اور دہلی میں منشیات ضبط کی ہیں۔ یہاں تک کہ ہم نے سمندری سرحد (پاکستان کے ساتھ) کے قریب کشتیوں سے منشیات برآمد کیں۔ ہماری پولیس نے گزشتہ ایک سال کے دوران 6500 کروڑ روپے کی منشیات ضبط کی ہیں اور 750 منشیات فروشوں کو سلاخوں کے پیچھے بھیجا ہے۔ وہ اب بھی جیل میں ہیں۔

      ہرش سنگھاوی نے کہا کہ حال ہی میں ہماری پولیس نے ممبئی کے ایک رہائشی سلیم نامی کو پکڑا، جس نے کروڑوں روپے کی منشیات فروخت کی تھی۔ وہ پاکستان میں مقیم اپنے کنکشنز سے منشیات حاصل کرتا تھا۔ چونکہ مہاراشٹر پولیس اسے پکڑنے میں ناکام رہی، آخرکار گجرات پولیس نے اسے پکڑ لیا ہے۔

      بحث کے دوران کانگریس کے قائد حزب اختلاف سکھرام رتھوا نے منشیات کے مسئلہ پر بی جے پی حکومت پر حملہ کیا اور مطالبہ کیا کہ منشیات کی اسمگلنگ کے جرم کو جی سی ٹی او سی ایکٹ کے دائرے میں لایا جائے۔ کانگریس کے سینئر ایم ایل اے غیاث الدین شیخ نے کہا کہ جو بھی شخص کسی بھی مذہب کے دیوتاؤں کی توہین کرتا پایا جائے اس کے خلاف بھی قانون کی سخت دفعات کے تحت مقدمہ چلایا جانا چاہیے۔

      گجرات کے وزیر مملکت برائے داخلہ ہرش سنگھاوی نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ 2002 کے بلقیس بانو اجتماعی عصمت دری کیس کے تمام 11 قصورواروں کو جلد از جلد جیل واپس بھیج دیا جائے۔ جنہیں ریاستی حکومت کی طرف سے عمر قید کی سزا معاف کرنے کے بعد گزشتہ ماہ رہا کیا گیا تھا۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      گجرات میں دو روزہ اسمبلی اجلاس جمعرات کو ختم ہوگا۔ یہ بحث سنگھوی کی گجرات کنٹرول آف ٹیررازم اینڈ آرگنائزڈ کرائم ایکٹ (جی سی ٹی او سی ایکٹ) 2015 کی بعض شقوں میں ترمیم کرنے کی تجویز پر شروع ہوئی تھی۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: