உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Bihar Assembly Election 2020: چراغ پاسوان کو جے ڈی یو کی دو ٹوک، اکیلے الیکشن لڑنا چاہیں تو لڑلیں

    چراغ پاسوان کو جے ڈی یو کی دو ٹوک، اکیلے الیکشن لڑنا چاہیں تو لڑلیں

    چراغ پاسوان کو جے ڈی یو کی دو ٹوک، اکیلے الیکشن لڑنا چاہیں تو لڑلیں

    Bihar Assembly Elections 2020: جے ڈی یو کے جنرل سکریٹری کے سی تیاگی نے واضح طور پر کہا کہ ایل جے پی (LJP) سے ہمارا اتحاد کبھی نہیں رہا ہے اور بی جے پی (BJP) کے اعلیٰ قیادت نے یہ فیصلہ لیا ہے کہ بہار میں وہ نتیش کمار (Nitish Kumar) کی قیادت میں الیکشن لڑیں گے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      پٹنہ: بہار کے اسمبلی انتخابات (Bihar Assembly Election) سے ٹھیک پہلے این ڈی اے کے دو اتحادی جے ڈی یو اور ایل جے پی (JDU-LJP) میں تکرار بڑھتی جارہی ہے۔ جے ڈی یو کی طرف سے لوک جن شکتی پارٹی کو دو ٹوک لہجے میں اکیلے الیکشن لڑنے کی چھوٹ دے دی گئی ہے۔ پارٹی کے سکریٹری جنرل کے سی تیاگی (KC Tyagi) نے کہا کہ اگر لوک جن شکتی پارٹی 143 سیٹوں پر الیکشن تیاری کر رہی ہے تو یہ ان کی پارٹی کا فیصلہ ہے۔ جے ڈی یو کے جنرل سکریٹری کے سی تیاگی نے واضح طور پر کہا کہ ایل جے پی (LJP) سے ہمارا اتحاد کبھی نہیں رہا ہے اور بی جے پی (BJP) کے اعلیٰ قیادت نے یہ فیصلہ لیا ہے کہ بہار میں وہ نتیش کمار (Nitish Kumar) کی قیادت میں الیکشن لڑیں گے۔

      بہار کے اسمبلی انتخابات (Bihar Assembly Election) سے ٹھیک پہلے این ڈی اے کے دو اتحادی جے ڈی یو اور ایل جے پی (JDU-LJP) میں تکرار بڑھتی جارہی ہے۔
      بہار کے اسمبلی انتخابات (Bihar Assembly Election) سے ٹھیک پہلے این ڈی اے کے دو اتحادی جے ڈی یو اور ایل جے پی (JDU-LJP) میں تکرار بڑھتی جارہی ہے۔


      کے سی تیاگی نے کہا کہ جے ڈی یو اور ایل جے پی کا بھی اتحاد نہیں رہا ہے، ایسے میں اگر ایل جے پی الگ الیکشن لڑنا چاہتی ہے تو یہ ان کی پارٹی کا فیصلہ ہے۔ لگے ہاتھوں کے سی تیاگی نے ایل جے پی کو دو ٹوک جواب دیتے ہوئے کہا کہ جے ڈی یو کے خلاف ایل جے پی امیدوار اتاریں، لیکن جے ڈی یو اور بی جے پی (JDU-BJP) ساتھ مل کر الیکشن لڑیں گے۔ انہوں نے کہا کہ جے ڈی یو - بی جے پی مل کر الیکشن لڑیں گے، لیکن اس کا مخالف جو ہوگا وہ پورے بی جے پی اور جے ڈی یو کی اعلیٰ قیادت کا مخالف ہے۔ کے سی تیاگی نے کہا کہ نریندر مودی، امت شاہ اور جے پی نڈا نے پہلے ہی واضح کردیا ہے کہ بہار میں نتیش کمار کی قیادت میں الیکشن لڑے جائیں گے، اس لئے نتیش کمار پر یہ سوال اٹھانے والے بی جے پی کے اس اعلیٰ قیادت پر بھی سوال اٹھا رہے ہیں۔

      جے ڈی یو اور ایل جے پی کے درمیان جاری سرد جنگ کے اشارے پیر کو چراغ پاسوان کی صدارت میں ایل جے پی کے بہار پارلیمانی بورڈ کی میٹنگ میں ملے۔
      جے ڈی یو اور ایل جے پی کے درمیان جاری سرد جنگ کے اشارے پیر کو چراغ پاسوان کی صدارت میں ایل جے پی کے بہار پارلیمانی بورڈ کی میٹنگ میں ملے۔


      دراصل، جے ڈی یو اور ایل جے پی کے درمیان جاری سرد جنگ کے اشارے پیر کو چراغ پاسوان کی صدارت میں ایل جے پی کے بہار پارلیمانی بورڈ کی میٹنگ میں ملے۔ میٹنگ میں شامل بیشتر اراکین کی رائے تھی کہ وزیر اعلیٰ نتیش کمار کی قیادت میں الیکشن نہیں لڑنا چاہئے، کیونکہ لاک ڈاون اور سیلاب سے نتیش کمار کی شبیہ پر منفی اثر پڑا ہے۔ میٹنگ میں یہ تجویز بھی منظور کی گئی کہ ایل جے پی 143 امیدواروں کی فہرست تیار کرکے جلد ازجلد مرکزی پارلیمانی بورڈ کو بھیج دے گی۔ ساتھ ہی بہار میں اتحاد کے بارے میں آخری فیصلہ لینے کا حق بھی بہار پارلیمانی بورڈ نے چراغ پاسوان کو سونپ دیا تھا۔ ایسے میں کے سی تیاگی کے اس بیان کے بعد ایک بار پھر سے دونوں سیاسی جماعتوں کے درمیان تلخی بڑھتی ہوئی نظر آرہی ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: