உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نوٹس کے جواب میں کیرتی آزاد نے بی جے پی کو بھیجا فائلوں کا پلندہ ، 3 سی ڈی بھی

    پٹنہ : بھارتیہ جنتا پارٹی(بی جے پی)کے معطل ممبر پارلیمنٹ کرتی آزاد نے وجہ بتاؤ نوٹس کا جواب دیتے ہوئے آج کہا کہ دہلی اینڈ ڈسٹرکٹ کرکٹ ایسوسی ایشن (ڈی ڈی سی اے) نے بدعنوانی کے مسئلے کا پارٹی سے کوئی تعلق نہیں ہے اور انہوں نے کبھی بھی کسی لیڈر کا نام نہیں لیا۔

    پٹنہ : بھارتیہ جنتا پارٹی(بی جے پی)کے معطل ممبر پارلیمنٹ کرتی آزاد نے وجہ بتاؤ نوٹس کا جواب دیتے ہوئے آج کہا کہ دہلی اینڈ ڈسٹرکٹ کرکٹ ایسوسی ایشن (ڈی ڈی سی اے) نے بدعنوانی کے مسئلے کا پارٹی سے کوئی تعلق نہیں ہے اور انہوں نے کبھی بھی کسی لیڈر کا نام نہیں لیا۔

    پٹنہ : بھارتیہ جنتا پارٹی(بی جے پی)کے معطل ممبر پارلیمنٹ کرتی آزاد نے وجہ بتاؤ نوٹس کا جواب دیتے ہوئے آج کہا کہ دہلی اینڈ ڈسٹرکٹ کرکٹ ایسوسی ایشن (ڈی ڈی سی اے) نے بدعنوانی کے مسئلے کا پارٹی سے کوئی تعلق نہیں ہے اور انہوں نے کبھی بھی کسی لیڈر کا نام نہیں لیا۔

    • Agencies
    • Last Updated :
    • Share this:

      پٹنہ : بھارتیہ جنتا پارٹی(بی جے پی)کے معطل ممبر پارلیمنٹ کرتی آزاد نے وجہ بتاؤ نوٹس کا جواب دیتے ہوئے آج کہا کہ دہلی اینڈ ڈسٹرکٹ کرکٹ ایسوسی ایشن (ڈی ڈی سی اے) نے بدعنوانی کے مسئلے کا پارٹی سے کوئی تعلق نہیں ہے اور انہوں نے کبھی بھی کسی لیڈر کا نام نہیں لیا۔


      ذرائع کے مطابق مسٹر آزاد نے بی جے پی کے جنرل سکریٹری اور دفتری امور کے انچارج اورن سنگھ کو وجہ بتاؤ نوٹس کا جواب بھیجا ہے۔ اپنے جواب میں انہوں نے کہا کہ ڈی ڈی سی اے کے معاملے کا پارٹی سےکوئی تعلق نہیں ہے اور پارٹی فورم کےباہر انہوں نے کبھی بھی بی جےپی کے کسی لیڈر کے بدعنوانی میں ملوث ہونے کی بات نہیں کی ہے۔


      بتایا جاتا ہے کہ کیرتی آزاد تین صفحات پر مشتمل اپنے جواب کے ساتھ ہی 3 سی ڈی بھی بھیجی ہے ، جن میں ان کے میڈیا انٹرویو کی ریکارڈنگ ہے۔ ساتھ ہی ساتھ انہوں نے ڈی ڈی سی اے سے وابستہ بدعنوانی کے الزامات کو دہراتے ہوئے 6 فائلیں بھی بھیجی ہیں، جس میں ڈی ڈی سی اے سے وابستہ ہر پہلو کی معلومات تفصیل سے دی گئی ہے۔


      خیال رہے کہ مسٹر آزاد گزشتہ کئی برسوں سے ڈی ڈی سی اے میں مالی بدعنوانیوں کا معاملہ اٹھاتے رہے ہیں اوردہلی کے وزیراعلی اروند کیجری وال کے پرنسپل سکریٹری کے دفتر میں  سی بی آئی کے چھاپے کے بعد اس معاملےمیں طول پکڑا تھا۔


      مسٹر کیجری وال کا الزام ہے کہ سی بی آئی نے ڈی ڈی سی اے کی فائل حاصل کرنے کے لئے چھاپہ مارا تھا کیونکہ اس کے وزیر خزانہ ارون جیٹلی اس میں پھنسے تھے۔مسٹر جیٹلی ایک دہائی سے زائد عرصے تک ڈی ڈی سی اے کے نائب صدر کےعہدے پر فائز تھے۔


      دربھنگہ حلقہ سے ممبر پارلیمنٹ مسٹر آزاد نےپارٹی صدر امت شاہ اور تنظیمی سکریٹری رام لال کے منع کرنے کےباوجود ایک پریس کانفرنس کرکے مسٹر جیٹلی سےکئی سوال پوچھے تھے اور پارلیمنٹ میں بھی انہوں نے اس معاملےکو اٹھایا تھا۔ بی جےپی نےانہیں پارٹی مخالف سرگرمیوں کےالزام میں معطل کیا تھا اور پھر کل انہیں وجہ بتاؤ نوٹس جاری کرکے دس دن کے اندر اس کا جواب دینے کو کہا تھا۔

      First published: