உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کولکاتہ کی بانکڑا مسجد پر کولکاتہ ایئرپورٹ اتھارٹی نے اٹھائے سوال رن وے سکیورٹی کے لٸے مسجد کو بتایا خطرہ 

    کولکاتہ ایئر پورٹ پرقاٸم بانکڑا مسجد ایک بار پھر سوالات کے گھیرے میں ہے

    کولکاتہ ایئر پورٹ پرقاٸم بانکڑا مسجد ایک بار پھر سوالات کے گھیرے میں ہے

    ایئرپورٹ اتھارٹی کے مطابق 'ہمیں مسجد پر اعتراض نہیں ہے بلکہ رن وے کے لاٸن پر کوٸی بھی عمارت ہوتی تو ایسی ہی بے چینی کا اظہار کیا جاتا' جبکہ مسجد کمیٹی کے صدر صدیق اللہ چودھری جو ریاستی وزیر بھی ہیں انہوں نے ایر پورٹ اتھارٹی کے اعتراض پر حیرانی کا اظہار کرتے ہوٸے موجودہ حالات میں اس طرح کے معاملے اٹھاٸے جانے پر مایوسی کا اظہار کیا ہے۔

    • Share this:
    کیرالہ کے کوزی کوڈ ایئر پورٹ پر پیش اٸے افسوس ناک طیارے حادثے کے بعد جہاں ملک بھر کے ایئر پورٹ سکوریٹی پر نظر رکھی جارہی ہے۔ وہیں کولکاتہ ایئر پورٹ پرقاٸم بانکڑا مسجد ایک بار پھر سوالات کے گھیرے میں ہے۔ کولکاتا ایر پورٹ پر قاٸم بانکڑا مسجد 120 سال پرانی ہے۔ جہاں باقاعدگی سے نماز ادا کی جاتی ہے۔ کولکاتا ایئرپورٹ کے لٸے 1962 میں زمینیں لی گٸی تھی اسوقت مسلم اکثریتی ابادی والے بانکڑا علاقے کو بھی ایئر پورٹ کے لٸے ایکواٸر کیا گیا تھا۔لیکن یہ مسجد اپنی اصل صورت میں قاٸم رہی اس مسجد کو کوٸی نقصان نہیں پہنچا۔ ایئر پورٹ کے نقشے میں مسجد کی حثیت برقرار ہے۔ یہ مسجد ایئر پورٹ کے سیکنڈری رن وے سے 280 میٹر کے اندر واقع ہے۔

    ایئر پورٹ اتھارٹی کے مطابق وہ سیکنڈری رن وے کو شمال کی جانب بڑھانے سے قاصر ہیں ۔کولکاتا ایر پورٹ اتھارٹی نے مسجد پر اعتراض ظاہر کرتے ہوٸے حفاظت پر سوال اٹھایا ہے۔ اس مسجد داخلی دروازہ ایئر پورٹ سے باہر ہےجبکہ رن و ے کے قریب اس مسجد کو لیکر سوال  اٹھایا جاتا رہا ہے کے طیار کے لینڈینگ کے وقت پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

    ایئر پورٹ اتھارٹی کے مطابق اصولی طور پر ایک رن وے کے اختتام کے بعد دوسرے رن وے کے لٸے فاصلہ برقرار رکھا جاتا ہے جسے رن وے اینڈ سیفٹی ایریا یعنی(RESA)  کہاجاتا ہے۔ بڑے بڑے ہواٸی اڈوں میں 240 میٹرپو برقرار رکھا جاتا ہے لیکن کولکاتا ایئر پورٹ پر اس مسجد کی وجہ سے رن وے اینڈ سیفٹی ایریا صرف 160 میٹر ہے۔ اس مسئلے کو کئی بار اٹھایا گیا ہے لیکن اس مسئلے کا حل نہیں نکالا گیا۔ ایئرپورٹ اتھارٹی نے ریاست کے چیف سکریٹری کو اس تعلق سے خط لکھا ہے۔ لاک ڈاٶن کے بعد اس معاملے پر ایر پورٹ اتھارٹی چیف سکریٹری کے ساتھ بات چیت کرے گی اے اے اٸی کے چیئرمین اروند سنگھ کے مطابق رن وے پر خالی جگہ کو برقرار رکھنا چاہئے کوزی کوڈ میں ایسا ہی معاملہ دیکھنے کو ملا اگر رن وے کے اس مسئلے کی دیکھ بھال کی جاتی تو شاید اتنا بڑا حادثہ نہں ہوتا۔ اس حادثے کے بعد ہی ملک بھر میں ہواٸی اڈوں کے رن وے سکیورٹی حکام چوکس ہیں۔

    انہوں نے مزید کہا کے گرچہ مسجد کا معاملہ بہت حساس ہے لیکن حفاظت کے لٸے کولکاتا اہرپورٹ کا دوسرا رن وے بھی بڑھانا ضروری تاہم اس معاملے میں ریاستی حکومت سے تبادلہ خیال کرنا ضروری ہے۔ ایئرپورٹ اتھارٹی کے مطابق پاٸلٹ ہمیشہ رن وے کے قریب مسجد کی موجودگی پر خدشے کا اظہار کرتے رہے ہیں۔

    ایئرپورٹ اتھارٹی کے مطابق 'ہمیں  مسجد پر اعتراض نہیں ہے بلکہ رن وے کے لاٸن پر کوٸی بھی عمارت ہوتی تو ایسی ہی بے چینی کا اظہار کیا جاتا' جبکہ مسجد کمیٹی کے صدر صدیق اللہ چودھری جو ریاستی وزیر بھی ہیں انہوں نے ایر پورٹ اتھارٹی کے اعتراض پر حیرانی کا اظہار کرتے ہوٸے موجودہ حالات میں اس طرح کے معاملے اٹھاٸے جانے پر مایوسی کا اظہار کیا ہے اور کہا کہ مسجد کا داخلی دروازہ لب سڑک ہے اور ایر پورٹ کی تعمیر مسجد کو دھیان میں رکھ کر کی گٸی ہے جہاں برسوں سے نماز ادا ہورہی ہے انہوں نے اس تعلق سے وزیر اعلی سے بات کرنے کا ارادہ ظاہر کیا ۔
    Published by:sana Naeem
    First published: