اپنا ضلع منتخب کریں۔

    وہ مہاراشٹر میں آٹو نہیں چلانے دیں گے، ہم انہیں بہار نہیں چلانے دیں گے: لالو

    پٹنہ: راشٹریہ جنتا دل کے صدر لالو پرساد یادو نے مراٹھی نہ بولنے والوں کو آٹوركشا چلانے کا پرمٹ نہ دینے کے مہاراشٹر حکومت کے فیصلہ کی سخت تنقید کی ہے ۔

    پٹنہ: راشٹریہ جنتا دل کے صدر لالو پرساد یادو نے مراٹھی نہ بولنے والوں کو آٹوركشا چلانے کا پرمٹ نہ دینے کے مہاراشٹر حکومت کے فیصلہ کی سخت تنقید کی ہے ۔

    پٹنہ: راشٹریہ جنتا دل کے صدر لالو پرساد یادو نے مراٹھی نہ بولنے والوں کو آٹوركشا چلانے کا پرمٹ نہ دینے کے مہاراشٹر حکومت کے فیصلہ کی سخت تنقید کی ہے ۔

    • ibnlive.com
    • Last Updated :
    • Share this:

      پٹنہ: راشٹریہ جنتا دل کے صدر لالو پرساد یادو نے مراٹھی نہ بولنے والوں کو آٹوركشا چلانے کا پرمٹ نہ دینے کے مہاراشٹر حکومت کے فیصلہ کی سخت تنقید کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جو لوگ بہار کے لوگوں کو آٹوركشا نہیں چلانے دیں گے، انہیں بہار چلانے کا موقع کس طرح دیا جائے گا۔


      وزیر اعظم مودی اور بھارتیہ جنتا پارٹی کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے لالو نے کہا کہ آپ وہاں ہمارے لوگوں کو گاڑی نہیں چلانے دیتے اور آپ کو ہم بہار میں حکومت چلانے دیں گے؟


      سابق وزیر ریل نے سوشل ویب سائٹ فیس بک کے اپنے پیج پر لکھا کہ بہاریوں کو ہندی بولنے والے ہونے کی وجہ سے آپ مہاراشٹر میں گاڑی نہیں چلانے دیتے ہیں ، تو بہاری کیا دو گجراتیوں کو بہار میں حکومت چلانے دیں گے؟ ۔ لالو کا اشارہ مودی اور بی جے پی کے صدر امت شاہ کی طرف ہے۔


      لالو نے وزیر اعظم کو مشورہ دیتے ہوئے آگے لکھا کہ ٹیم انڈیا کی کھوکھلی بات کرنے والے وزیر اعظم دوسروں کو نصیحت کرنے سے پہلے اپنے وزیر اعلی کو تو اس کا مطلب اور اس کی اہمیت سمجھا دیتے۔ بی جے پی پر نشانہ سادھتے ہوئے انہوں نے مزید لکھا کہ جب ہم غریب، محروم، نظراندازطقہ کی بات کریں تو ترقی مخالف اور جب سماجی اور اقتصادی عدم مساوات اور ذات پات کو جڑ سے ختم کرنے کی بات کریں تو نسل پرست ہو جاتے ہیں ۔ بی جے پی کے اس دہرے معیار کا بہار کے انصاف پسند عوام منہ توڑ جواب دیں گے ۔


      قابل ذکر ہے کہ مہاراشٹر کی بی جے پی حکومت نے ایک حکم جاری کیا ہے کہ یکم نومبر سے ممبئی میں صرف مراٹھی بولنے والوں کو ہی آٹوركشا چلانے کا پرمٹ دیا جائے گا۔ بہار کے ہزاروں لوگ ممبئی اور مہاراشٹر کے دیگر شہروں میں آٹوركشا چلا کر زندگی گزربسر کرتے ہیں۔

      First published: