உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ذات کی مردم شماری Nitish Kumar کا تاریخی فیصلہ، دلت، پچھڑے و اقلیت کو ہوگا فائدہ: مولانا غلام رسول بلیاوی

    Caste Census: جےڈی یو ایم ایل سی مولانا غلام رسول بلیاوی نے کہا، 1990 سے وزیر اعلیٰ نتیش کمار ذات کی مردم شماری کے سلسلے میں کوشش کر رہے ہیں۔ اب اسے زمین پر اتارا جا رہا ہے۔ ایک دن پورا ملک نتیش کمار کے ماڈل کو اپنے اپنے صوبوں میں لاگو کرے گا۔

    Caste Census: جےڈی یو ایم ایل سی مولانا غلام رسول بلیاوی نے کہا، 1990 سے وزیر اعلیٰ نتیش کمار ذات کی مردم شماری کے سلسلے میں کوشش کر رہے ہیں۔ اب اسے زمین پر اتارا جا رہا ہے۔ ایک دن پورا ملک نتیش کمار کے ماڈل کو اپنے اپنے صوبوں میں لاگو کرے گا۔

    Caste Census: جےڈی یو ایم ایل سی مولانا غلام رسول بلیاوی نے کہا، 1990 سے وزیر اعلیٰ نتیش کمار ذات کی مردم شماری کے سلسلے میں کوشش کر رہے ہیں۔ اب اسے زمین پر اتارا جا رہا ہے۔ ایک دن پورا ملک نتیش کمار کے ماڈل کو اپنے اپنے صوبوں میں لاگو کرے گا۔

    • Share this:
    Caste Census: ملک کے سبھی انتخابات میں ذات پات کی گول بندی چلتی ہے۔ ہر سیاسی پارٹی ذاتیوں کے بنیاد پر اپنے امیدواروں کا انتخاب کرتا ہے۔ ذات پات ختم کرنے کا چاہے جتنا بھی دعوی ہوتا رہا ہو لیکن یہ تلخ حقیقت ہے کہ ہمارے سماج میں ذاتیوں کی جڑیں کافی مضبوط ہے لیکن آج تک کمزور اور حاشیہ پر کھڑے لوگوں کو ذات کے بنیاد پر نہ ہی سیاسی حصہ داری مل پاتی ہے اور نہ ہی ان کے بنیادی مسئلہ حل ہوتے ہیں۔ وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے ذات کی مردم شماری کرانے کا فیصلہ کر سماج کے آخری پائدان پر کھڑے لوگوں کو قومی دھارے میں شامل کرنے کی ایک کامیاب کوشش کی ہے۔ یہ کہنا ہے جےڈی یو کے ایم ایل سی مولانا غلام رسول بلیاوی کا۔ مولانا غلام رسول بلیاوی نے کہا کی ذات کی مردم شماری سے حکومت کے سامنے ایک ایسا نقشہ موجود ہوگا جس کے بنیاد پر سماج کے ہر طبقہ اور ہر ذاتی کے لئے حکومت اپنے فلاحی اسکیموں سے فائدہ پہنچانے کی کوشش کرے گی۔

    اس کے علاوہ ان ذاتیوں کو بھی سیاسی نمائندگی مل سکے گی جو تعداد میں زیادہ ہونے کے باوجود سیاسی طور پر حاشیہ پر کھڑے ہیں۔ خاص طور سے دلت، پچھڑے اور مسلمانوں کو اس سے بڑا فائدہ ہونے کی امید ہے۔ مختلف ذاتیوں کی فہرست موجود ہونے سے حکومت کے کام کا طریقہ بھی بدلے گا۔ مولانا غلام رسول بلیاوی کا کہنا ہیکہ یہ کوئی معمولی فیصلہ نہیں ہے۔ نتیش کمار 1990 سے اس تعلق سے کوشش کر رہے ہیں جو اب جا کر زمین پر اترا ہے۔


    Pakistan: شوہر کو رسی سے باندھا، پھر 5 لوگوں نے حاملہ خاتون کا کیا جنسی استحصال

    نتیش کمار کے اس ماڈل کو ایک نہ ایک دن ملک کے تمام صوبوں کو نقل کرنا پڑے گا۔ مولانا بلیاوی کا کہنا ہیکہ جب بھی ہم پچھڑوں کی یا پچھڑی ذاتیوں کی بات کرتے ہیں تو ہمارے سامنے صحیح نقشہ نہیں ہونے کے سبب ان کے فلاح کا کام اس اعتبار سے نہیں ہو پاتا ہے جس طرح سے ہونا چاہئے تھا لیکن حکومت کے اس قدم سے غریبوں اور پچھڑوں کا مسئلہ حل ہوگا اس سے انکار نہیں ہے۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: