ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

شہریت ترمیمی بل پراحتجاج: استعفیٰ دینے والے آئی پی ایس افسرعبدالرحمان سے خاص بات چیت

نیوز18 سے خصوصی بات کرتے ہوئے عبدالرحمان نے عوام اوردانشوروں سے اپیل کی کہ وہ شہریت ترمیمی بل اور این آر سی کی کھل کر مخالفت کریں

  • Share this:

شہریت ترمیمی بل کے دونوں ایوانوں سے پاس ہونے کے بعد سب سے پہلے استعفیٰ دینے والے آئی پی ایس افسر عبدالرحمان کا کہنا ہیکہ یہ بل انسانیت اور آئین کے خلاف ہے۔ نیوز18 سے خصوصی بات کرتے ہوئے عبدالرحمان نے عوام اوردانشوروں سے اپیل کی کہ وہ شہریت ترمیمی بل اور این آر سی کی کھل کر مخالفت کریں۔


یادرہے کہ مہاراشٹر کے آئی جی عبدالرحمان نےاستعفی دے کرسی اے بی کے خلاف احتجاج درج کرایا ہے۔ان کا دعویٰ ہے کہ انہوں نے شہریت ترمیمی بل کے خلاف احتجاج میں دفتر نہ جانے کا فیصلہ کیا ہے۔مہاراشٹر پولیس سے پچھلے 21 برسوں سے وابستہ رہے عبدالرحمان شہریت ترمیمی بل کو آئین کی روح اور مساوات کے بنیادی حق کے خلاف مانتے ہیں۔


آئی پی ایس عبدالرحمان کا ٹوئٹ


آئی جی پی عبدالرحمان نےاپیل کی کہ غریب اورپسماندہ طبقات بل کی مخالفت کریں۔ جبکہ جمہوری اقداراورسیکولرزم اورانصاف پسند ہندو بھی اس کی مخالفت کریں اور مذکورہ بل آرٹیکل 14،15،،25 کی سراسرخلاف ورزی ہے۔ کیونکہ جن شہریوں کو شہریت دینےکی بات کہی ہے، ان میں مسلمانوں کوشامل نہیں کیا گیا ہے۔ عبدالرحمان نےکہا کہ اس کا مقصد فرقوں میں تفریق پیدا کرنا ہے۔ انہوں نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ شہریت ترمیمی بل 2019 آئین کی بنیادی اقدارکے خلاف ہے۔ میں اس بل کی مذمت کرتا ہوں۔ میں نے کل سے دفترمیں موجود نہیں رہنے کا فیصلہ کیا ہے، میں آخرکارسروس چھوڑرہا ہوں۔
First published: Dec 12, 2019 08:42 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading