உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نریندر مودی کی ریلی میں ہنکار ریلی میں ہوئے دھماکے کیس میں 9 ملزم قصوروار قرار، ایک بری

    Patna Gandhi Maidan Blast:  پٹنہ کے اس مشہور کیس کے 10 ملزمان میں سے ایک کو عدالت نے بری کر دیا ہے جبکہ 9 لوگوں کو مجرم قرار دیا ہے جن میں عمر صدیقی، اظہر قریشی، احمد حسین، فیروز اسلم، افتخار عالم شامل ہیں۔

    Patna Gandhi Maidan Blast: پٹنہ کے اس مشہور کیس کے 10 ملزمان میں سے ایک کو عدالت نے بری کر دیا ہے جبکہ 9 لوگوں کو مجرم قرار دیا ہے جن میں عمر صدیقی، اظہر قریشی، احمد حسین، فیروز اسلم، افتخار عالم شامل ہیں۔

    Patna Gandhi Maidan Blast: پٹنہ کے اس مشہور کیس کے 10 ملزمان میں سے ایک کو عدالت نے بری کر دیا ہے جبکہ 9 لوگوں کو مجرم قرار دیا ہے جن میں عمر صدیقی، اظہر قریشی، احمد حسین، فیروز اسلم، افتخار عالم شامل ہیں۔

    • Share this:
      پٹنہ۔ اس وقت کی بڑی خبر راجدھانی پٹنہ سے آ رہی ہے، جہاں پٹنہ کے گاندھی میدان دھماکہ کیس (Patna Gandhi Maidan Blast) کی این آئی اے عدالت (NIA Court) نے سماعت مکمل کر لی ہے۔ پٹنہ کے اس مشہور کیس کے 10 ملزمان میں سے ایک کو عدالت نے بری کر دیا ہے جبکہ 9 لوگوں کو مجرم قرار دیا ہے جن میں عمر صدیقی، اظہر قریشی، احمد حسین، فیروز اسلم، افتخار عالم شامل ہیں۔

      عدالت نے ایک ملزم فخر الدین کو رہا کر دیا۔ اس معاملے میں اب سزا کے نکات پر سماعت یکم نومبر کو ہوگی۔ معلوم ہو کہ 27 اکتوبر 2013 کو پٹنہ میں پی ایم نریندر مودی کی ریلی کے دوران گاندھی میدان میں دھماکے ہوئے تھے۔ بی جے پی کی ہنکار ریلی کے دوران سلسلہ وار بم دھماکوں کی وجہ سے بھگدڑ مچ گئی۔ اس دھماکے کے وقت نریندر مودی سمیت تمام رہنما گاندھی میدان میں موجود تھے۔ گاندھی میدان سے پہلے پٹنہ جنکشن پر بھی دھماکہ ہوا تھا۔ پٹنہ میں ہوئے ان سلسلہ وار دھماکوں میں 6 لوگ مارے گئے تھے جبکہ تقریباً 84 لوگ زخمی ہوئے تھے۔

      پٹنہ کے گاندھی میدان دھماکہ کیس میں این آئی اے نے اگلے ہی دن سے اس کیس کی جانچ شروع کردی اور ایک سال کے اندر 21 اگست 2014 کو کل 11 ملزمین کے خلاف چارج شیٹ داخل کی گئی تھی۔ اس کے بعد این آئی اے کی ٹیم نے اس معاملے میں حیدر علی، نعمان انصاری، محمد کو گرفتار کیا ہے۔ مجیب اللہ انصاری، امتیاز عالم، احمد حسین، فخر الدین، محمد۔ فیروز اسلم، امتیاز انصاری، محمد۔ افتخار عالم، اظہر الدین قریشی اور توفیق انصاری کو گرفتار کیا تھا۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: