உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نتیش کمار نے کیوں توڑا BJP سے اتحاد؟ اسمبلی میں اکثریت ثابت کرنے کے بعد بتائی یہ 5 وجوہات

    نتیش کمار نے کیوں توڑا BJP سے اتحاد؟ اسمبلی میں اکثریت ثابت کرنے کے بعد بتائی یہ 5 وجوہات ۔ فائل فوٹو ۔

    نتیش کمار نے کیوں توڑا BJP سے اتحاد؟ اسمبلی میں اکثریت ثابت کرنے کے بعد بتائی یہ 5 وجوہات ۔ فائل فوٹو ۔

    Bihar CM Nitish Kumar: نتیش کمار نے "دہلی میں اقتدار میں موجود لوگوں" پر حملہ کرتے ہوئے کہا کہ ان کی وزیر اعظم بننے کی کوئی خواہش نہیں ہے۔ نتیش کمار نے الزام لگایا کہ بی جے پی نے 2020 کے بہار اسمبلی انتخابات میں ان کو سیاسی طور پر ختم کرنے کی کوشش کی تھی۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Bihar | Patna | Patna
    • Share this:
      پٹنہ: بہار میں بی جے پی سے اتحاد توڑ کر آر جے ڈی کے ساتھ حکومت بنانے کے بعد اپوزیشن مسلسل وزیر اعلی نتیش کمار پر حملہ آور ہے۔ دریں اثنا نتیش کمار نے "دہلی میں اقتدار میں موجود لوگوں" پر حملہ کرتے ہوئے کہا کہ ان کی وزیر اعظم بننے کی کوئی خواہش نہیں ہے۔ نتیش کمار نے الزام لگایا کہ بی جے پی نے 2020 کے بہار اسمبلی انتخابات میں ان کو سیاسی طور پر ختم کرنے کی کوشش کی تھی۔

       

      یہ بھی پڑھئے: کانگریس کا YouTube Channel ہوا ڈیلیٹ، پارٹی نے بیان جاری کرکے کہا: جانچ جاری، جلد لوٹیں گے


      نتیش کمار نے ایوان میں اپنی اکثریت ثابت کرتے ہوئے بہار اسمبلی میں کہا کہ وہ بی جے پی کے دباؤ میں 2020 میں وزیر اعلیٰ بنے، حالانکہ اس وقت انہوں نے کہا تھا کہ بی جے پی کو اپنا وزیر اعلیٰ بنانا چاہئے ، کیونکہ انہوں نے زیادہ سیٹیں جیتی ہیں۔ لیکن بی جے پی کا مستقبل کے لئے کچھ اور منصوبہ تھا۔ نتیش کمار نے کہا کہ 'ہم کچھ نہیں بنانا چاہتے'، ہماری تمام اپوزیشن سیاسی جماعتوں سے اپیل ہے کہ وہ 2024 کے لوک سبھا انتخابات میں مل کر لڑیں ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: سونالی پھوگاٹ کے PA پر بھائی نے لگائے سنگین الزام، نشہ دے کر کیا تھا بہن کا ریپ اور پھر...

      بی جے پی قیادت پر حملہ کرتے ہوئے نتیش کمار نے پارٹی پر سماج میں تنازع پیدا کرنے اور ہندو مسلم جھگڑا پیدا کرنے کا الزام لگایا۔ انہوں نے کہا کہ وہ (بی جے پی) صرف سماج میں بگاڑ پیدا کرنا چاہتے ہیں۔ سب جانتے ہیں کہ ہم نے 2013 میں بی جے پی سے علیحدگی کیوں اختیار کی تھی۔
      انہوں نے کہا کہ دہلی میں اقتدار میں رہنے والے صرف تشہیر میں مصروف تھے، انہوں نے کوئی کام نہیں کیا اور میڈیا پر قبضہ کر لیا۔ نتیش کمار نے کہا کہ بی جے پی آزادی کے 75 سال کی مہم چلا رہی ہے، لیکن آزادی کی لڑائی میں بی جے پی کہاں تھی ۔
      وزیر اعلی نے کہا کہ چراغ پاسوان کو ہمارے خلاف الیکشن کس نے لڑوایا؟ ان لگا تھا کہ ہم ختم ہو جائیں گے۔ اتنا سب کچھ کے باوجود میں نے کچھ بھی ذہن میں نہیں رکھا۔ وزیر اعلی نے کہا کہ میں نے کہا تھا کہ بی جے پی نے زیادہ سیٹیں جیتی ہیں، آپ کا وزیر اعلی بنایا جانا چاہئے ۔ مجھ پر اتنا دباؤ ڈالا گیا کہ میں وزیراعلیٰ بن جاوں، میں بن گیا ۔ جس شخص (آر سی پی سنگھ) کو میں نے اپنی پارٹی میں نچلی سطح سے لے کر قومی صدر کے اعلیٰ عہدے تک پہنچایا، اس کو بی جے پی نے شامل کرلیا ۔
      وزیر اعلی نتیش کمار نے مزید کہا کہ پہلے کی جے ڈی یو- بی جے پی حکومت میں ان کے ساتھیوں سشیل مودی، پریم کمار اور نند کشور یادو کو 2020 میں بی جے پی کے ذریعہ وزیر کے طور پر منتخب نہیں کیا گیا تھا۔
      انہوں نے کہا کہ میں نے دہلی سے پٹنہ یونیورسٹی کو مرکزی یونیورسٹی بنانے کیلئے کہا تھا، لیکن انہوں نے ایسا نہیں کیا۔ اب بہار میں بی جے پی لیڈر مجھے گالی دینا چاہتے ہیں، کیونکہ ایسا کرنے سے انہیں دہلی میں عہدہ مل جائے گا۔ آپ کو بتادیں کہ اتحاد توڑنے کے بعد نتیش کمار نے پہلی مرتبہ کھل کر بی جے پی پر حملہ کیا۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: