ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

جب اذان کی آواز سن کر خاموش ہوگئے وزیر اعظم

کلکتہ: مغربی بنگال کے مغربی مدنی پور ضلع میں ایک انتخابی ریلی میں تقریر کے دوران آذان کی آواز آنے پر وزیر اعظم نریندر مودی خاموش ہوکر ملک میں مذہبی رواداری کی ایک عظیم مثال پیش کی ہے۔تاہم مودی کی خاموشی کے باوجود بی جے پی کے حامیوں نے مذہبی نعرے لگاکر ان کی اس مثال کو ضائع کردیا ۔

  • UNI
  • Last Updated: Mar 28, 2016 09:26 AM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
جب اذان کی آواز سن کر خاموش ہوگئے وزیر اعظم
کلکتہ: مغربی بنگال کے مغربی مدنی پور ضلع میں ایک انتخابی ریلی میں تقریر کے دوران آذان کی آواز آنے پر وزیر اعظم نریندر مودی خاموش ہوکر ملک میں مذہبی رواداری کی ایک عظیم مثال پیش کی ہے۔تاہم مودی کی خاموشی کے باوجود بی جے پی کے حامیوں نے مذہبی نعرے لگاکر ان کی اس مثال کو ضائع کردیا ۔

کلکتہ: مغربی بنگال کے مغربی مدنی پور ضلع میں ایک انتخابی ریلی میں تقریر کے دوران آذان کی آواز آنے پر وزیر اعظم نریندر مودی خاموش ہوکر ملک میں مذہبی رواداری کی ایک عظیم مثال پیش کی ہے۔تاہم مودی کی خاموشی کے باوجود بی جے پی کے حامیوں نے مذہبی نعرے لگاکر ان کی اس مثال کو ضائع کردیا ۔

مغربی مدنی پور میں بی این آر کالج میں بی جے پی امیدوار کے حق میں ریلی سے خطاب کے دوران آذان کی آواز ٰ آنے پر وزیر اعظم اپنی تقریر کو روک دیا اور آذان مکمل ہونے کا انتظار کرنے لگے ۔مگر بی جے پی مسلسل ہنگامہ آرائی کرتے رہے وزیر اعظم انہیں خاموش رہنے کا اشارہ بھی دیا۔وزیر اعظم نے کہا کہ آذان ہورہی تھی اس لیے میں خاموش ہوگیا ، چوں کہ میری وجہ سے مذہبی ادائیگی میں دقت نہیں ہونی چاہیے اس لیے میں خاموش ہوگیا ہوں ۔

وزیر اعظم نے اپنی تقریر میں بنگال کی خستہ حالی کیلئے ترنمول کانگریس اور بایاں محاذ کو ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے کہا کہ گزشتہ 70سالوں میں بنگال میں ترقیاتی کام نہیں ہوئے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ نوجوانوں میں بے روزگاری کی شرح بہت ہی زیادہ ہے ۔لا اینڈ آرڈر بہتر نہیں ہونے کی جہ سے صنعت کار یہاں سرمایہ کاری کرنا نہیں چاہتے ہیں ۔

مغربی بنگال میں اپنے پہلے انتخابی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم مودی نے کہا کہ ممتا بنرجی کا رویہ ایک بادشاہ کی طرح مگر انہوں نے گزشتہ پانچ سالوں میں ریاست کی ترقی کیلئے کچھ بھی نہیں کیا ہے ۔بردان بم دھماکہ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے وزیر اعظم مودی نے کہا کہ ریاست میں صنعتی کارخانے بند ہوگئے صرف بم سازی کے کارخانے قائم ہورہے ہیں ۔

ترنمول کانگریس پر بدعنوانی میں ملوث ہونے کا الزام عاید کرتے ہوئے مودی نے کہا کہ شاردا سے ناردا اسٹنگ آپریشن تک ترنمول کانگریس کے بدعنوانی میں ملو ث ہونے کا ثبوت ہے ۔مودی نے کہا کہ بایا ں محاذ نے 34سالوں میں بنگال کو برباد کیا اور اب پانچ سالوں میں ہی ترنمول کانگریس نے بنگال کو مکمل ختم کردیا ۔انہوں نے کہا کہ کیرالہ میں ایک دوسرے سے مقابلہ کرنے والی پارٹیاں یہاں دوستی کرلی ہے ۔

وزیر اعظم مودی نے کہا کہ ان کی حکومت بد عنوانی سے پاک ہے اور وہ بنگال کو اس کی شاندار عظمت کو واپس لانے کے عہد پر قائم پر ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ریاست کی عوام بی جے پی کو اقتدار میں واپس لانا چاہتی ہے ۔کیوں کہ یہاں کی عوام حقیقی تبدیلی کی خواہاں ہیں ۔

First published: Mar 28, 2016 09:26 AM IST