ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

کرکٹ میں فلاپ ، سیاست میں سپرہٹ ، ایسی ہے 26 سال کی عمر میں نائب وزیر اعلی بنے تیجسوی کی کہانی

تیجسوی یادو (Tejasvi Yadav) کا سیاسی سفر یوں تو 2010 میں شروع ہوا ، لیکن اب وہ اپنی پارٹی یعنی آر جے ڈی کے لئے مستبقل کا چہرہ بن گئے ہیں ۔

  • Share this:
کرکٹ میں فلاپ ، سیاست میں سپرہٹ ، ایسی ہے 26 سال کی عمر میں نائب وزیر اعلی بنے تیجسوی کی کہانی
کرکٹ میں فلاپ ، سیاست میں سپرہٹ ، ایسی ہے 26 سال کی عمر میں نائب وزیر اعلی بنے تیجسوی کی کہانی ۔ ( فائل فوٹو) ۔

بہار کی سیاست میں ان دنوں سب سے زیادہ اگر کوئی نام سرخیوں میں ہے تو وہ تیجسوی یادو کا ہے ۔ کرکٹر سے بہار کے نائب وزیر اعلی تک کا سفر طے کرچکا یہ نوجوان لیڈر ان دنوں چھایا ہوا ہے ۔ لالو یادو کی غیر موجودگی میں جس طرح سے بہار انتخابات کے ایگزٹ پولس میں تیجسوی یادو کے وزیر اعلی بننے کے اندازے لگائے جارہے ہیں ، ویسے میں بہت کم وقت میں ان کی چہار جانب چرچا ہورہی ہے ۔


دراصل تیجسوی یادو نے پہلے کبھی سوچا بھی نہیں تھا کہ وہ سیاست میں آئیں گے اور اتنی جلدی اتنا بڑا مقام حاصل کرنے کے قریب پہنچ جائیں گے ، لیکن وقت کا پہیہ کچھ ایسا گھوما کہ کرکٹ کے میدان میں چوکے چھکے لگانے والے تیجسوی کو بلے اور گیند سے دوری اختیار کرنی پڑی اور سیاست کی پچ پر نئی اننگز کیلئے پاوں جمانا پڑا ۔ اس دوران انہیں کئی مشکلات کا بھی سامنا کرنا پڑا ۔ حالات ایسے بھی آئے اور لگا کہ ان کا کریئر شروع ہونے سے پہلے ہی ختم ہوجائے گا ، لیکن اس مرتبہ کی انتخابی بساط پر تیجسوی کے مہرے حریفوں پر پوری طرح سے بھاری پڑے ۔


20 سال میں کرکٹر اور 26 سال میں ڈپٹی سی ایم


تیجسوی یادو نے کبھی کرکٹ کو اپنا کریئر بنایا تھا اور اس میں ان کے کنبہ کا بھی تعاون رہا تھا ۔ اس وقت لالو بھی بطور ایڈمنسٹریٹر کرکٹ سے وابستہ ہوئے تھے ۔ تیجسوی جب 20 سال کے تھے یعنی 2009 میں انہوں نے اپنے کرکٹ کریئر کی شروعات کی ۔ اسی سال تیجسوی جھارکھنڈ کے فرسٹ کلاس کرکٹ ٹیم میں شامل کئے گئے ۔ وہ ہرفن مولا حیثیت سے کھیلنے لگے اور انہوں نے کرکٹر کی طرح اپنا لک بھی بنالیا ۔ تیجسوی نے کرکٹ کھیلنا شروع تو کیا ، لیکن اچھی کارکردگی کا مظاہرہ نہیں کرسکے ۔ تیجسوی نے رنجی کے ساتھ ساتھ آئی پی ایل کا بھی رخ کیا ۔ وہ آئی پی ایل کے کئی سیزن میں دہلی ڈیئرڈیولس کی ٹیم کا حصہ رہے ، لیکن انہیں ایک بھی میچ کھیلنے کا موقع نہیں مل سکا ۔ تیجسوی ٹیم میں ایک آل راونڈر کی حیثیت سے تھے جو بلے بازی کے ساتھ ساتھ اسپن گیند بازی بھی کرتے تھے ۔

تیجسوی یادو ۔ تصویر : PTI ۔
تیجسوی یادو ۔ تصویر : PTI ۔


کرکٹ میں فلاپ ، لیکن سیاست میں ہٹ

تیجسوی کا کرکٹر بننے کا خواب اس لئے پورا نہیں ہوسکا ، کیونکہ وہ نہ تو گیند اور نہ ہی بلے سے میدان پر جلوہ بکھیر سکے ۔ اپنے چھوٹے سے کرکٹنگ کریئر میں تیجسوی نے صرف ایک فرسٹ کلاس میچ ، دو اے کٹیگری کے اور چار ٹی ٹوینٹی میچ کھیلے ۔ بلے بازی میں ان کا سب سے بڑا اسکور 19 رن رہا ہے ۔ وہیں گیند بازی میں انہوں نے 10 اوورس میں صرف ایک وکٹ لیا ، لیکن اپنے دو سال کے سیاسی کریئر میں تیجسوی اب تک ہٹ رہے ہیں ۔ یہی وجہ ہے کہ حریفوں پر ان کے نشانے صحیح بیٹھتے ہیں اور نوجوان انہیں یوتھ آئیکن کے نام سے ہی پکارتے ہیں ۔

مستبقل کا چہرہ

تیجسوی یادو کا سیاسی سفر یوں تو 2010 میں شروع ہوا ، لیکن اب وہ اپنی پارٹی یعنی آر جے ڈی کے لئے مستبقل کا چہرہ بن گئے ہیں ۔ اگر ایگزٹ پول کے حساب سے بہار کے نتائج آتے ہیں تو وہ نہ صرف بہار کے وزیر اعلی بنیں گے بلکہ ملک کے سب سے نوجوان وزیر اعلی بھی بنیں گے ۔ تیجسوی نے خود کی شناخت 2015 کے بہار اسمبلی انتخابات میں بنائی ۔ 2010 میں ان کے والد لالو یادو انہیں اپنے ساتھ ریلیوں میں شامل کرنے لگے تھے اور لوگوں کو ان کا تعارف کروایا کرتے تھے ، لیکن 2015 کے انتخابات میں تیجسوی اپنی پارٹی کے اسٹار بن گئے ۔ اپنی پارٹی کے گڑھ مانے جانے والے ویشالی ضلع کے راگھوپور سے تیجسوی پہلی مرتبہ ممبر اسمبلی بنے اور پھر نائب وزیر اعلی بھی بنے ۔

تیجسوی یادو کا بہار کے نوجوانوں میں کافی کریز ہے ۔
تیجسوی یادو کا بہار کے نوجوانوں میں کافی کریز ہے ۔


بڑے بھائی کا ملتا ہے ساتھ

تیجسوی یادو بھلے ہی عمر میں اپنے بڑے بھائی تیج پرتاپ سے چھوٹے ہیں ، لیکن سبھی لوگ انہیں ہی بڑا مانتے ہیں ۔ اس کی وجہ تیجسوی کا سیاست میں سرگرم ہونا ہے ۔ گھوٹالے کے الزامات لگنے کے بعد بھی تیجسوی کو ان کے بڑے بھائی تیج پرتاپ کا مسلسل ساتھ ملتا رہا ہے ۔ دونوں بھائی ایوان میں بھی ساتھ ہی نظر آتے ہیں جبکہ سوشل میڈیا پر بھی دونوں کی سرگرمی دیکھنے کو ملتی ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Nov 09, 2020 04:32 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading