உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہم آر ایس ایس سے ٹرینڈ ہیں، ٹی ایم سی والوں کو گھر میں گھس کر ماریں گے: بی جے پی لیڈر

    کولکاتہ : ایک طرف جہاں مودی حکومت اپنے دو سال پورے ہونے کا جشن انڈیا گیٹ پر منا رہی ہے، وہیں دوسری طرف مغربی بنگال بی جے پی کے صدر دلیپ گھوش نے متنازعہ بیان دیا ہے۔

    کولکاتہ : ایک طرف جہاں مودی حکومت اپنے دو سال پورے ہونے کا جشن انڈیا گیٹ پر منا رہی ہے، وہیں دوسری طرف مغربی بنگال بی جے پی کے صدر دلیپ گھوش نے متنازعہ بیان دیا ہے۔

    کولکاتہ : ایک طرف جہاں مودی حکومت اپنے دو سال پورے ہونے کا جشن انڈیا گیٹ پر منا رہی ہے، وہیں دوسری طرف مغربی بنگال بی جے پی کے صدر دلیپ گھوش نے متنازعہ بیان دیا ہے۔

    • Pradesh18
    • Last Updated :
    • Share this:
      کولکاتہ : ایک طرف جہاں مودی حکومت اپنے دو سال پورے ہونے کا جشن انڈیا گیٹ پر منا رہی ہے، وہیں دوسری طرف مغربی بنگال بی جے پی کے صدر دلیپ گھوش نے متنازعہ بیان دیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ ہم نے مغربی بنگال میں تین نشستیں جیتی ہیں، یہ ترنمول کانگریس (ٹی ایم سی) کو چیلنج کرنے کے لئے کافی ہیں۔خیال رہے کہ مغربی بنگال میں اسمبلی انتخابات 2016 کے نتائج آتے ہی ریاست میں بی جے پی اور ٹی ایم سی کارکنوں کے درمیان جھڑپ کے معاملات بھی سامنے آئے تھے۔
      ساتھ ہی انہوں نے کہا ہے کہ ہم ان (ترنمول کانگریس) کے بجلی کے کنکشن اور واٹر سپلائی کاٹ دیں گے اور انہیں گھر میں گھس کر ماریں گے، ہم دیکھیں گے کہ وہ کیا کر لیتے ہیں؟ ہمارے پاس راشٹریہ سویم سیوک سنگھ (آر ایس ایس) کی ٹریننگ ہے۔ ہم اپنے خالی ہاتھوں سے ان کی گردن توڑ کرنے کے قابل ہیں۔ قابل ذکر ہے کہ مغربی بنگال کی 294 اسمبلی سیٹوں میں سے 211 نشستوں پر کامیابی حاصل کر کے ٹی ایم سی سپریمو ممتا بنرجی ریاست کی دوسری مرتبہ وزیر اعلی بنیں۔
      خیال رہے کہ یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ گھوش نے اس طرح کے متنازع بیان دیا ہے ۔پہلے بھی انہوں نے جادو پور یونیورسٹی کے طالبات کو بے شرم کہہ کر تنازع کے شکار ہوگئے تھے ۔انتخابی نتیجہ آنے کے بعد جاری تشدد پر انہوں نے کہا کہ ترنمول کانگریس کے پاس صرف 211ممبر ان اسمبلی اور 34ممبر ان پارلیمنٹ ہیں جب کہ ہمارے پاس ایک ہزار سے ممبران اسمبلی اور تین سو کے قریب ممبران پارلیمنٹ ہیں ۔ہم ترنمول کانگریس کے ممبران پارلیمٹ کو دہلی سے کلکتہ نہیں آنے دیں گے ۔؟ گھوش کے اس بیان کی مذمت کرتے ہوئے ترنمول کانگریس نے اسپیکر سومترا مہاجن سے شکایت بھی کی ہے۔
      First published: