ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

دفاع میں آئیں شرجیل امام کی ماں، بولیں۔ ’ کال آف‘ کرنا چاہتا تھا شاہین باغ کا احتجاج

نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے شرجیل کی ماں افشاں رحیم نے آسام کو ہندوستان سے الگ کر دینے والی شرجیل امام کی بات کا بچاؤ کیا ہے۔

  • Share this:
دفاع میں آئیں شرجیل امام کی ماں، بولیں۔ ’ کال آف‘ کرنا چاہتا تھا شاہین باغ کا احتجاج
شرجیل امام: فائل فوٹو

جہان آباد۔ سی اے اے اور این آر سی کے معاملہ پر دہلی کے شاہین باغ (Shaheen bagh) علاقے میں چل رہے احتجاج کا خود کو آرگنائزر بتانے والا جے این یو کا سابق طالب علم شرجیل امام (Sharjeel Imam) بہار کے جہان آباد کا رہنے والا ہے۔ اس پر حال ہی میں علی گڑھ مسلم یونیورسیٹی میں منعقد ایک اجلاس کے دوران اشتعال انگیز بیان دینے کا الزام لگا ہے۔ اس کے اس خطاب کا ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل بھی ہو رہا ہے۔ اسی بنیاد پر پانچ ریاستوں میں اس کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے اور پولیس اس کی تلاش میں چھاپہ ماری کر رہی ہے۔ حالانکہ، شرجیل کے اہل خانہ نے اسے بے قصور بتایا ہے۔


نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے شرجیل کی ماں افشاں رحیم نے آسام کو ہندوستان سے الگ کر دینے والی شرجیل امام کی بات کا بچاؤ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس کا مقصد آسام کو ہندوستان سے الگ کرنا نہیں، بلکہ چکہ جام کرنے سے لے کر تھا۔


شرجیل امام


افشاں رحیم نے شرجیل امام کے خلاف سازش کا دعویٰ کرتے ہوئے کہا کہ چونکہ شرجیل نے کچھ دن پہلے ہی شاہین باغ کے احتجاج کو ختم کرنے کی بات کہی تھی، اس لئے شاہین باغ میں بھی اس کے خلاف نعرے بازی ہونے لگی تھی۔ اسی بات کو لے کر وہاں کے مقامی لیڈران ان کی مخالفت میں کھڑے ہو گئے۔ بتا دیں کہ نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے شرجیل کے چچا ارشد امام نے کہا کہ شرجیل نے این آر سی کو لے کر احتجاج شروع کیا تھا۔ اسی ضمن میں لوگوں کو احتجاج کے تئیں علی گڑھ میں سمجھانے کی کوشش کی تھی، نہ کہ کوئی اشتعال انگیز بیان دیا تھا۔
First published: Jan 27, 2020 12:45 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading