உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بیٹے کی بے روزگاری اور ناکامی سے پریشان ہوکر والدین نے خود کشی کرلی

    بیٹے کی بے روزگاری اور ناکامی سے پریشان ہوکر والدین نے خود کشی کرلی

    بیٹے کی بے روزگاری اور ناکامی سے پریشان ہوکر والدین نے خود کشی کرلی

    کولکاتا کے قریبی ہگلی کے رہائشی دیپک اور بهوانی سرکار اپنے بیٹے کی ناکام زندگی سے پریشان تھے اور اس صدمے سے نجات کے لئے دونوں نے خودکشی کرلی۔ سرکاری ملازم دیپک سرکار اور ان کی اہلیہ بھوانی سرکار ریٹائرڈ ہوچکے تھے ان کا بیٹا دبیندو سرکار اعلی تعلیم یافتہ تھا۔

    • Share this:
    کولکاتا: دنیا میں والدین کا رشتہ سب سے انمول ہے۔ والدین کی کل کائنات اپنے بچوں کے گرد ہی گھومتی ہے۔ ہر والدین کی یہ خواہیش ہوتی ہے کہ ان کے بچے کامیاب اور دنیا میں ترقی حاصل کریں۔ ماں باپ اپنے بچوں کے مستقبل سنوارنے کی جان توڑ کوشش کرتے ہیں، لیکن کہتے ہیں کہ ہر خواب پورا نہیں ہوتا، اپ چاہ کر بھی قسمت کے آگے بے بس ہوتے ہیں۔ کولکاتا کے ایسے ہی ایک بے بس والدین نے بیٹے کی ترقی کی خواہش لئے دنیا کو الوداع کہہ دیا۔ کولکاتا کے قریبی ہگلی کے رہائشی دیپک اور بهوانی سرکار اپنے بیٹے کی ناکام زندگی سے پریشان تھے اور اس صدمے سے نجات کے لئے دونوں نے خودکشی کرلی۔

    تفصیلات کے مطابق، سرکاری ملازم دیپک سرکار اور انکی اہلیہ بھوانی سرکار ریٹائرڈ ہوچکے تھے ان کا بیٹا دبیندو سرکار اعلی تعلیم یافتہ تھا۔ پڑھنے میں ذہین بیٹے کو اعلی تعلیم دلانے میں والدین نے کوئی کسر نہیں چھوڑی، لیکن اعلی تعلیم یافتہ ہونے کے باوجود دبیندو بی روزگار تھا۔ نوکری نہ ملنے سے پریشان بیٹے کی حالت دیکھ ماں باپ بھی پریشان تھے۔ نوکری کے انتظار میں معاشی تنگی کا سامنا کررہے دبیندو نے ہوم ڈیلیوری کی نوکری شروع کردی اعلی تعلیم کے باوجود بیٹے کی ہوم ڈیلیوری کی نوکری سے والدین صدمے میں تھے صبح گھر کی دوسری منزل کے برآمدے سے بھوانی سرکار کی لاش ملی جبکہ دیپک سرکار کی لاش گھر کے اندر لٹکی ہوئی تھی۔

    پولیس کے مطابق بیٹا دبیندو سرکار نے صبح پولیس کو حادثے کی خبر دی۔ لاش  پوسٹ مارٹم کے لئے بھیج دیا گیا ہے۔ اتر پارہ پولیس حادثے کی جانچ کررہی ہے۔ پولیس کے مطابق معمر جوڑا ذہنی تناؤ کا شکار تھا۔ بیٹے کے پاس ملازمت نہیں تھی دبیندو نے گزشتہ سال کاروبار شروع کیا تھا، لیکن لاک ڈاؤن میں کاروبار بھی بند ہوگیا۔ لاچار دبیندو نےگھرگھرجاکر کھانا پہچانے گا کام شروع کیا۔ دبیندو کے اس کام سے اس کے والدین کافی ناراض تھے، بیٹے کے مستقبل کو لے کر پریشان تھے، ذہنی تناؤ کا شکار تھے۔ پڑوسیوں کے مطابق بیٹے کے اعلی تعلیم یافتہ ہونے کے باوجود ملازمت نہ ہونے اور ہوم ڈیلیوری کے کام سے ماں باپ کو صدمہ لگا تھا، جس کے بعد دونوں نے خودکشی کرلی۔ پولیس بیٹے سے بھی پوچھ تاچھ کررہی ہے۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: