ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

مغربی بنگال فساد : 16 سالہ بیٹے کی موت کے باوجود امام کی امن کی اپیل ، کہا:  میں نہیں چاہتا جو نقصان مجھے ہوا ، وہ کسی اور کو ہو

مغربی بنگال کے آسنسول میں واقع نورانی مسجد کے امام نے اپنے بیٹے کی ہلاکت کے باوجود عوام سے امن کی اپیل کی ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Mar 30, 2018 11:41 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
مغربی بنگال فساد : 16 سالہ بیٹے کی موت کے باوجود امام کی امن کی اپیل ، کہا:  میں نہیں چاہتا جو نقصان مجھے ہوا ، وہ کسی اور کو ہو
مغربی بنگال کے آسنسول میں واقع نورانی مسجد کے امام نے اپنے بیٹے کی ہلاکت کے باوجود عوام سے امن کی اپیل کی ہے۔

کلکتہ: مغربی بنگال کے آسنسول میں واقع نورانی مسجد کے امام نے اپنے بیٹے کی ہلاکت کے باوجود عوام سے امن کی اپیل کی ہے۔ انہوں نے مشتعل بھیڑ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اگر میرے بیٹے کی ہلاکت کا انتقام یا فساد برپاکرنے کی کوشش کی گئی تو میں امامت چھوڑ کر شہر سے باہرچلا جاؤں گا ۔خیال رہے کہ گزشتہ دنوں امام کے سولہ سالہ بیٹے کو شرپسندوں نے اغواکے بعد ہلاک کردیا تھا۔

امام کے بیٹے صبغۃ اللہ راشدی نے چند دنوں قبل دسویں بورڈ کا امتحان دیا تھا۔وہ منگل کے دن سے لاپتہ ہوگیا تھا ۔بعد میں معلوم ہوا کہ فسادیوں کی بھیڑ نے اسے اغواکیا تھا۔بدھ کی رات اس کی لاش برآمد ہوئی۔ جمعرات کو لاش کی شناخت ہوئی کہ یہ مسجد کے امام مولانا امداداللہ کے بیٹے صبغۃ اللہ کی لاش ہے۔ اس کے بعد سے ہی آسنسول کے مسلم محلوں میں کشیدگی تھی۔یہ ناراضگی بڑے فساد میں تبدیل ہوسکتی تھی ۔لیکن موقع کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے امام صاحب نے بروقت مداخلت کی اور آگے بڑھ کر عوام سے امن کی اپیل کرکے ان کے غصہ کو ٹھنڈا کیا اورنئی مثال پیش کی ۔

لاش ملنے کے بعد ہزاروں افراد عید گاھ میدان میں جمع ہوگئے۔اس وقت امام صاحب آگے آئے اور کہا کہ میں شہر میں امن وامان دیکھنا چاہتا ہوں ، فسادیوں نے میرے بیٹے کی جان لے لی ہے مگر میں یہ نہیں چاہتا کہ کسی اور خاندان کو بھی اس دکھ کا سامنا کرنا پڑے ، مزید گھروں میں آگ لگے ، آگر آپ مجھ سے محبت کرتے ہیں تو انتقام کا جذبہ چھوڑدیں ، اگر کسی نے بدلہ لینے کی کوشش کی تو میں شہر چھوڑ کر چلا جاؤں گا ‘‘۔امداد اللہ رشیدی نے کہا کہ میں نہیں چاہتا کہ جو نقصان مجھے ہوا ہے، وہ کسی اور خاندان کو ہو ۔امام صاحب کی امن کی اپیل کی ہرطرف پذیرائی ہورہی ہے ۔خیال رہے کہ وہ نورانی مسجد میں گزشتہ 30برسوں سے امامت کررہے ہیں۔

First published: Mar 30, 2018 11:40 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading