ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

بنگال میں جھڑپ: مدنا پور میں ٹی ایم سی کارکنان کا بی جے پی پر حملہ، 15 لوگ اسپتال میں بھرتی

نیوز ایجنسی اے این آئی کے مطابق، مدناپور کے کونٹائی میں ایک پروگرام کے دوران ٹی ایم سی کارکنان کے ذریعہ مبینہ طور سے بی جے پی کارکنان پر حملہ کیا گیا۔ اس حملے میں 15 بی جے پی کارکنان زخمی بتائے جا رہے ہیں جنہیں علاج کے لئے اسپتال میں بھرتی کرایا گیا ہے۔

  • Share this:
بنگال میں جھڑپ: مدنا پور میں ٹی ایم سی کارکنان کا بی جے پی پر حملہ، 15 لوگ اسپتال میں بھرتی
مدنا پور میں ٹی ایم سی کارکنان کا بی جے پی پر حملہ

کولکاتہ۔ مغربی بنگال (West Bengal) میں برسر اقتدار پارٹی ترنمول کانگریس (Trinmool Congress) اور بی جے پی کے کارکنان کے درمیان آئے دن پرتشدد جھڑپ کے معاملے سامنے آ جاتے ہیں۔ اسی ضمن میں اتوار کو مدنا پور میں ٹی ایم سی اور بی جے پی کے کارکنان ایک بار پھر آپس میں بھڑ گئے۔


نیوز ایجنسی اے این آئی کے مطابق، مدناپور کے کونٹائی میں ایک پروگرام کے دوران ٹی ایم سی کارکنان کے ذریعہ مبینہ طور سے بی جے پی کارکنان پر حملہ کیا گیا۔ اس حملے میں 15 بی جے پی کارکنان زخمی بتائے جا رہے ہیں جنہیں علاج کے لئے اسپتال میں بھرتی کرایا گیا ہے۔ بتا دیں کہ دو ہفتہ پہلے ہی مشرقی مدنا پور میں ٹی ایم سی چھوڑ کر بی جے پی میں شامل ہوئے شبھیندو آفیسر اور ترنمول کانگریس کے حامی آپس میں بھڑ گئے تھے۔



بی جے پی صدر جے پی نڈا کے قافلے پر بھی ہو چکا ہے حملہ
قابل ذکر ہے کہ اس سے پہلے دسمبر میں بی جے پی کے قومی صدر جے پی نڈا کے دو روزہ بنگال دورے کے دوران ان کے بھی قافلے پر حملہ ہوا تھا۔ بی جے پی کی طرف سے سیدھے ٹی ایم سی پر حملے کے لئے الزام لگائے گئے۔ وزیر داخلہ امت شاہ نے تبھی ٹویٹ کر کہا تھا کہ مرکزی حکومت اس حملے کو پوری سنجیدگی سے لے رہی ہے۔ انہوں نے کہا تھا کہ بنگال حکومت کو اس منصوبہ بند تشدد کے لئے ریاست کے پر امن عوام کو جواب دینا ہو گا۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Jan 10, 2021 10:06 PM IST