ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

مغربی بنگال میں ترنمول کانگریس کی نئی ریاستی کمیٹی میں مسلم لیڈرشپ کا فقدان 

ترنمول کانگریس کو سیاسی سطح پر مسلم لیڈران کا فقدان نظر ارہا ہے اور یہی وجہ ہے کہ پارٹی میں اسمبلی الیکشن کے لئے کئے گئے ردو بدل میں مسلم نمائندگی حیران کن ہے ۔

  • Share this:
مغربی بنگال میں ترنمول کانگریس کی نئی ریاستی کمیٹی میں مسلم لیڈرشپ کا فقدان 
مغربی بنگال میں ترنمول کانگریس کی نئی ریاستی کمیٹی میں مسلم لیڈرشپ کا فقدان 

بنگال میں مسم طبقہ سب سے زیاہ پسماندہ ہے ۔ پسماندگی کی اسی تصویر کو سامنے رکھ کر وزیر اعلی ممتا بنرجی نے 2011 کا اسمبلی الیکشن جیتا ۔ الیکشن میں نہ صرف بائیں محاذ کو کراری شکست ملی بلکہ ترنمول کانگریس نے پہلی بار شاندار کامیابی حاصل کرتے ہوئے بنگال کی سیاست مں ایک نٸی تاریخ رقم کی ۔ ممتا بنرجی کی اس شاندار کامیابی کے لئے مسلم ووٹ بینک کو اہم مانا جاتا ہے جو بنگال میں تیس فیصد ہے ۔ خود ترنمول کانگریس کے لیڈران نے بھی اس کا اعتراف کیا اور اقتدار سنبھالتے ہی وزیر اعلی ممتابنرجی مسلمانوں کی ترقی دینے کا دعوی کرتے ہوئے امام و مووذن کے لئے معاوضہ کے اعلان کے ساتھ کئی خاص اعلانات کئے جو اب بھی صرف اعلانات تک ہی محدود ہیں ۔


حکومت کی جانب سے مدرسہ بورڈ اقلیتی محکمہ کے بجٹ میں بھی کافی اضافہ کیا گیا ، لیکن فنڈ کا ایک بڑا حصہ واپس بھی ہوتا رہا اور مسلمانوں کے کئی مساٸل اب بھی حل ہونے کی راہ تک رہے ہیں جبکہ خود وزیر اعلی ممتا بنرجی نے مسلمانوں کی ترقی کے 99 فیصد کام کئے جانے کا دعوی کیا ۔ مگر اب حال یہ ہے کے خود ترنمول کانگریس کو سیاسی سطح پر مسلم لیڈران کا فقدان نظر ارہا ہے اور یہی وجہ ہے کہ پارٹی میں اسمبلی الیکشن کے لئے کئے گئے ردو بدل میں مسلم نمائندگی حیران کن ہے ۔


ترنمول یوتھ ونگ کی کمان جہاں ابھیشیک بنرجی کو دی گئی وہیں 5 ناٸب صدور بنائے گئے ان میں ایک بھی مسلم لیڈر شامل نہیں ۔ 15جنرل سیکریٹری میں دو مسلم لیڈروں کو شامل کیا گیا ہے ۔ 15 سیکریٹری بنائے گئے اور  ان میں ایک بھی مسلم لیڈر شامل نہیں ۔ 28 ضلع یوتھ صدور بنائے گئے ، ان میں مرشداباد کی کمان امتیاز کبیر اور جنوبی چوبیس پرگنہ کی کمان شوکت ملا کو دی گئی ہے ۔ یعنی کل 64 رکنی ٹیم میں صرف چار مسلمانوں کوجگہ ملی ہے ۔ جبکہ 21 افراد پر مشتمل ریاستی کمیٹی میں بھی صرف دو مسلم چہروں کو شامل کیا گیا ۔


ایسے میں سوال یہ اٹھتا ہے کہ کیا تیس فیصد مسلم آبادی والے ضلع میں ترنمول کانگریس کو مسلم قیادت کی کمی کا سامنا ہے یا مسلم طبقہ کیلئے پارٹی کی وعدوں کی سیاست ہی کافی ہے ۔ سیاسی ماہرین نے سیاسی طور پر مسلمانوں کی کمزور ہوتی ساکھ کو افسوسناک بتاتے ہوئے آنے والے دنوں میں بنگال کی تیس فیصد مسلم آبادی کے پیچھے رہ جانے کا خدشہ ظاہر کیا ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 26, 2020 06:24 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading