ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

مغربی بنگال کے مالدہ ضلع میں ایک پلاسٹک فیکٹری میں دھماکے کے بعد سیاست تیز، بی جے پی نے NIA سے جانچ کرانے کا کیا مطالبہ

مغربی بنگال کے مالدہ ضلع میں ایک پلاسٹک فیکٹری میں دھماکے کے بعد سیاست تیز ہوگئی ہے، بی جے پی نے اس دھماکے کی این آئی اے سے جانچ کرانے کا مطالبہ کیا ہے، جب کہ ترنمول کانگریس نے بی جے پی پر بنگال میں فرقہ وارانہ کشیدگی پھیلانے کا الزام لگایا ہے۔

  • Share this:
مغربی بنگال کے مالدہ ضلع میں ایک پلاسٹک فیکٹری میں دھماکے کے بعد سیاست تیز،  بی جے پی نے NIA سے جانچ کرانے کا کیا مطالبہ
مغربی بنگال کے مالدہ ضلع میں ایک پلاسٹک فیکٹری میں دھماکے کے بعد سیاست تیز ہوگئی ہے، بی جے پی نے اس دھماکے کی این آئی اے سے جانچ کرانے کا مطالبہ کیا ہے، جب کہ ترنمول کانگریس نے بی جے پی پر بنگال میں فرقہ وارانہ کشیدگی پھیلانے کا الزام لگایا ہے۔

بنگال میں القاعدہ کی بڑھتی سرگرمیوں کا پردہ فاش کرنے کے بعد این آئی اے کو مالدہ کے پلاسٹک فیکٹری دھماکے کی جانچ کی ذمہ داری سونپے جانے کا بھی مطالبہ کیا جارہا ہے۔ بنگال کے شجاع پور میں پلاسٹک فیکٹری میں آگ لگ جانے سے چھ لوگوں کی موت ہوگئی اور کئی لوگ زخمی ہوئے۔ دھماکے کے ساتھ پورے شجاع پور میں کہرام مچ گیا پسماندہ ترین اس ضلع کے لوگ روزگار کے لئے ملک کے دیگر ریاستوں کا رخ کرتے ہیں جبکہ پلاسٹک فیکٹری میں بھی بڑی تعداد میں لوگ کام کرتے تھے۔ دھماکے نے جہاں 6 لوگوں کی جان لے لی، وہیں بڑی تعداد میں لوگ زخمی بھی ہوئے۔


اب اس معاملے میں سیاست تیز ہوگئی ریاستی گورنر جگدیپ دھنکر نے اس حادثے کے بعد وزیر اعلی ممتا بنرجی سے غیر قانونی بم سازی روکنے کو کہا جس پر ریاستی محکمہ داخلہ نے شدید رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ دھماکے کا غیر قانونی بم بنانے سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ مغربی بنگال اسپیشل ٹاسک فورس (ایس ٹی ایف) کے افسران نے بھی مالدہ کے شجاع پور میں پلاسٹک کے ری سائیکلنگ فیکٹری کا دورہ کیا۔ مالدہ ڈویژن کے کمشنر سید احمد بابا اور ریاستی پولیس کے دیگر اعلی افسران جائے وقوع کا دورہ کیا۔


افسران کے مطابق جانچ کے ابتدائی مرحلے میں ہے مقامی لوگوں سے بات کی جارہی ہے یہ پتہ لگانے کی بھی کوشش کی جارہی ہے کہ دھماکہ بارود سے ہوا تھا یا کسی میکنکی خرابی کی وجہ سے ہوا ہے۔ بی جے پی نے اس واقعے کی این آئی اے تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔ ریاستی وزیر فرہاد حکیم نے بی جے پی پر اس معاملے میں سیاست کرنے اور فرقہ وارانہ کشیدگی پھیلانے کا الزام لگایا۔


دھماکے کو لے کر بی جے پی اور ترنمول کانگریس کے درمیان لفظی جنگ تیز ہے ۔بی جے پی کے مطابق ریاستی حکومت کے زیر نگرانی والی ایجینسی اس معاملے کی صحیح جانچ نہیں کرسکتی مرکزی حکومت اس معاملے کی صحیح جانچ کرسکے گی۔ دوسری جانب ترنمول کانگریس نے کہا کہ 2021کے اسمبلی انتخابات میں فائدہ حاصل کرنے کے لئے بی جے پی این آئی اے کا استعمال کررہی ہے۔ کانگریس لیڈر پردیپ بھٹاچاریہ نے کہا کہ حکومت پر دباؤ بنانے کے لئے این آئی اے جانچ کا مطالبہ کیا جارہا ہے۔ وہیں یہاں کے لوگ سیاست کے بجائے مدد فراہم کرنے کا مطالبہ کررہے ہیں۔
Published by: sana Naeem
First published: Nov 21, 2020 08:23 PM IST