ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

بنگال میں لڑکی کو ٹریفکنگ سے بچانے والے لڑکے نے اب کیا یہ بڑا کام ، ہر طرف ہورہی تعریف

سات سال پہلے بنگال کے شوبھنکر منڈل نے اپنے ہی کولتالی گاؤں کی ایک لڑکی کو ٹریفکنگ سے بچایا تھا اور شوبھنکر کی کارکردگی کی کافی سراہنا کی گئی تھی ۔ لیکن شوبهنکر نے ایک قدم اور اگے بڑھتے ہوئے اسی لڑکی سے شادی کی اور اسے خوشیاں دینے کا وعدہ کیا ہے ۔

  • Share this:
بنگال میں لڑکی کو ٹریفکنگ سے بچانے والے لڑکے نے اب کیا یہ بڑا کام ، ہر طرف ہورہی تعریف
بنگال میں لڑکی کو ٹریفکنگ سے بچانے والے لڑکے نے اب کیا یہ بڑا کام ، ہر طرف ہورہی تعریف

سات سال پہلے بنگال کے شوبھنکر منڈل نے اپنے ہی کولتالی گاؤں کی ایک لڑکی کو ٹریفکنگ سے بچایا تھا اور شوبھنکر کی کارکردگی کی کافی سراہنا کی گئی تھی ۔ لیکن شوبهنکر نے ایک قدم اور اگے بڑھتے ہوئے اسی لڑکی سے شادی کی اور اسے خوشیاں دینے کا وعدہ کیا ہے ۔ جی ہاں اس طرح کے واقعات ہمیں فلموں اور کہانیوں میں سننے اور دیکھنے کو ملتے ہیں ۔ تاہم کولکاتہ شوبھنکر نامی اس نوجوان نے نہ صرف یہ کر دکھایا بلکہ سماج کو ایک پیغام بھی دیا ۔


سرکاری شیلٹر ہوم میں رہنے والی لڑکیوں کو تحفظ تو مل جاتا ہے لیکن ایک اچھی زندگی گزارنے کا ان کا خواب خوابِ ہی رہ جاتا ہے ۔ حالانکہ حکومت کی جانب سے ان لڑکیوں کو بہتر زندگی کے مواقع فراہم کئے جانے کی کوشش کی جاتی ہے ، لیکن ان لڑکیوں کے ساتھ پیش آنے والے حادثات ان کی زندگی کو مشکل بنادیتے ہیں ۔ کولکاتہ کے ایک شیلٹر ہوم میں مقیم ایک معصوم بچی بھی زندگی سے مایوس تھی والدہ کی وفات کے بعد اس کے والد نے بھی اس کا ساتھ چھوڑ دیا ۔ پھر دادا نے اس کی پرورش کی ، لیکن جب وہ تیرہ سال کی ہوئی تو اس کے دادا نے ہی اس کا جنسی استحصال کیا ۔


اس واقعہ کے بعد گاوں والوں نے دادا کے خلاف شکایت درج کروائی ، جس کے بعد دادا کو گرفتار کرلیا گیا اس واقعہ کی خبر پاکر ایک آنٹی نے کولکاتہ آکر بچی کی مامی ہونے کا دعویٰ کیا اور اسے دہلی لیکر جانے کا فیصلہ کیا ۔ گاوں والوں کو لگا کہ معصوم کی زندگی بہتر ہوجائے گی ، لیکن جس دن وہ اپنی آنٹی کے ساتھ دہلی روانہ ہورہی تھی ، اسی دن علاقے میں ہی رہنے ولے شوبھنکر منڈل کو پتہ چلا کہ آنٹی اسے اپنے ساتھ اپنے گھر لیکر نہیں جارہی تھی ، بلکہ اسے فروخت کررہی تھی ۔


شوبھنکر نے ڈرامائی انداز میں آنٹی کو فرار ہونے سے روکا اور معصوم بچی کی زندگی بچانے میں کامیاب حاصل کی ۔ شوبھنکر کے اس کام کو کافی سراہا گیا اور بچی کو سرکاری ہوم میں بھیج دیا گیا ، جہاں وہ سات برسوں تک مقیم رہی ۔ شوبھنکر اس کا حال جاننے کے لئے آیا کرتا تھا ۔ زندگی سے مایوس ہوچکی اس لڑکی کو شوبھنکر نے اپنانے کا فیصلہ کیا اور گھر والوں کے ساتھ ہوم کے اراکین سے بات کی ۔ شوبھنکر کہ فیصلے کو اہم بتاتے ہوم میں ہی دونوں کی شادی کا اہتمام کیا گیا ۔ لوگ اس شادی سے خوش ہیں اور دعاگو ہیں کہ یہ جوڑا کامیاب ازدواجی زندگی گزارے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Nov 06, 2020 08:52 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading