ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

قومی تعلیمی پالیسی پر نظر ثانی کے لئے بنگال حکومت کی سفارشات میں جماعت اسلامی ہند کے مطالبے کو کیا جاسکتا ہے شامل 

جماعت اسلامی بنگال کے نمائندوں نے کمیٹی کے رکن ایم پی سوگتا رائے سے ملاقات کی اور قومی تعلیمی پالیسی پر اپنےخدشات و سفارشات پیش کئے ہیں۔ جماعت اسلامی کے رکن شاداب معصوم نے کہا کہ سوگتاراٸے نے نہ صرف ہماری باتیں سنیں بلکہ ہمارے مطالبات کو بھی اہم بتایا ہے۔

  • Share this:
قومی تعلیمی پالیسی پر نظر ثانی کے لئے بنگال حکومت کی سفارشات میں جماعت اسلامی ہند کے مطالبے کو کیا جاسکتا ہے شامل 
بنگال حکومت کی سفارشات میں جماعت اسلامی ہند کے مطالبے کو کیا جاسکتا ہے شامل 

کولکاتہ۔ نئی تعلیمی پالیسی میں اصلاحات کے لئے بنگال حکومت کی جانب سے مرکز کو جو سفارشات بھیجی جائیں گی اس میں جماعت اسلامی ہند کے مطالبے کو شامل کیا جاسکتا ہے۔ بنگال میں نئی تعلیمی پالیسی پر نظر ثانی کے لئے بناٸی گئی کمیٹی نے جماعت اسلامی ہند بنگال یونٹ کی جانب سے پیش کی گئی سفارشات کو اہم مانا ہے اور ان کے مطالبے اور سفارشات کو شامل کئے جانےکا یقین دلایا ہے۔


مرکزی حکومت کی جانب سے بناٸی گئی قومی تعلیمی پالیسی ان دنوں ملک بھر میں چرچا کا مدعا ہے۔ سیاسی لیڈران ہوں یا سماجی لیڈران ہر ایک نے اس تعلیمی پالیسی پر پر اپنی راٸے دی ہے۔ کسی نے اسے سراہا ہے تو کسی نے ناقابل قبول بتایا ہے۔ تعلیمی ماہرین کا بھی ملا جلا ردعمل دیکھنے کو ملا ہے۔ کولکاتا میں کئی یونیورسیٹیوں کے طلبہ نے اس تعلیمی پالیسی کو ناقابل قبول بتایا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ممتا حکومت نے قومی تعلیمی پالیسی پر غور و فکر اور اپنی سفارشات مرکزی حکومت  کو بھیجنے کے لئے 6 رکنی کمیٹی تشکیل دی ہے۔


جماعت اسلامی بنگال کے نمائندوں نے کمیٹی کے رکن ایم پی سوگتا رائے سے ملاقات کی اور قومی تعلیمی پالیسی پر اپنےخدشات و سفارشات پیش کئے ہیں۔ جماعت اسلامی کے رکن شاداب معصوم نے کہا کہ سوگتا رائے نے نہ صرف ہماری باتیں سنیں بلکہ ہمارے مطالبات کو بھی اہم بتایا ہے۔ جماعت اسامی ہند نے نئی تعلیمی پالیسی سے غریب طبقے کو تعلیمی طور پر ترقی نہ ملنے کا اندیشہ ظاہر کرتے ہوٸے کہا کہ اس نئی تعلیمی پالیسی سے غریب طبقے میں ڈراپ اوٹ کی شرح بڑھے گی اور مختلف ہنر کے نام پر ان کی اعلی تعلیم کے خواب کو ختم کردیاجاٸے گا۔ انہوں نے تعلیمی پالیسی کی ملک گیر سطح پر مخالفت کی ضرورت پر زور دیتے ہوٸے کہا کہ حکومت نے لوگوں کو لبھانے کی کوشش کی ہےجس کے خطرناک نتاٸج سامنے آئیں گے۔ جماعت کے مطالبوں میں ای کنٹینٹ میں اردو زبان کو شامل کرنے اور پسماندہ علاقوں و اضلاع میں اسپیشل ایجوکیشن زون بنانےکی ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔ وہیں ایم پی سوگتا رائے نے جماعت اسامی کے مطالبات کو اہم بتاتے ہوٸے کمیٹی میں ان سفارشات کو رکھےجانے کا یقین دلایا یے۔ جماعت اسلامی کے اراکین نے جلد ہی اس معاملے میں ریاستی وزیر تعلیم سے ملاقات کا فیصلہ کیا ہے۔


 
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Sep 03, 2020 02:42 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading