اپنا ضلع منتخب کریں۔

    EXCLUSIVE: دہلی میں منکی پاکس کے معاملات بڑھیں گے؟ سینئر ڈاکٹر نے دیا یہ جواب

    EXCLUSIVE: دہلی میں منکی پاکس کے معاملات بڑھیں گے؟ سینئر ڈاکٹر نے دیا یہ جواب

    EXCLUSIVE: دہلی میں منکی پاکس کے معاملات بڑھیں گے؟ سینئر ڈاکٹر نے دیا یہ جواب

    Monkeypox Cases in Delhi: منکی پاکس کی بیماری سے نمٹنے کیلئے دہلی میں سبھی تیاریاں کر لی گئی ہیں۔ قومی راجدھانی میں منکی پاکس کا چوتھا کیس سامنے آیا ہے۔ 31 سالہ نائجیریائی خاتون کا ٹیسٹ مثبت آیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | New Delhi | New Delhi
    • Share this:
      نئی دہلی: منکی پاکس کی بیماری سے نمٹنے کیلئے دہلی میں سبھی تیاریاں کر لی گئی ہیں۔ قومی راجدھانی میں منکی پاکس کا چوتھا کیس سامنے آیا ہے۔ 31 سالہ نائجیریائی خاتون کا ٹیسٹ مثبت آیا ہے۔ اتفاق سے دہلی میں اب تک منکی پاکس انفیکشن کے جتنے بھی کیس رپورٹ ہوئے ہیں، وہ دہلی میں رہنے والے نائجیریائی لوگوں کے ہیں۔ تاہم ان متاثرہ افراد کی کوئی سفری تاریخ نہیں ملی ہے۔ ان چار مریضوں میں سے ایک کو چھٹی دے دی گئی ہے جبکہ باقی تین کا علاج دہلی حکومت کے لوک نائک جئے پرکاش اسپتال میں کیا جا رہا ہے۔

       

      یہ بھی پڑھئے: مونکی پاکس کی وجہ سے سفر کرنےکولےکرہورہی ہےپریشانی؟ یہ ہے وضاحت!


      نیوز 18 کو دئے ایک انٹرویو میں ایل این جے پی اسپتال کے میڈیکل ڈائریکٹر ڈاکٹر سریش کمار نے کہا کہ دہلی میں منکی پاکس کے معاملات میں کسی بھی اضافے کی پیش گوئی کرنا قبل از وقت ہوگا ، لیکن دہلی اس بیماری سے نمٹنے کیلئے اچھی طرح سے تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ بالغ آبادی میں منکی پاکس وائرس سے اموات کی شرح کم ہے۔

      دہلی میں منکی پاکس سے متاثر کتنے مریضوں کو اب تک اسپتال میں داخل کیا گیا ؟

      اس سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اب تک ہمارے پاس چار مریض آچکے ہیں۔ سب سے پہلے ایک متاثرہ شخص کو جولائی میں داخل کیا گیا تھا اور پھر تین دیگر مشتبہ افراد پائے گئے۔ تاہم ایک مریض کی رپورٹ منفی آنے کے بعد اس کو ڈسچارج کر دیا گیا۔ ابھی ہمارے پاس ایل این جے پی اسپتال میں کل تین معاملات ہیں اور ایک مریض کو اس لئے چھٹی دیدی گئی کیونکہ وہ منکی پاکس وائرس سے صحت یاب ہو گیا تھا ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: کورونا نے پھر بڑھائی تشویش، کیا آنے والی ہے نئی لہر؟ ماہرین نے کہی یہ بات


      دہلی میں منکی پاکس کے معاملات بڑھے ہیں، کیا ہمیں اور محتاط رہنے کی ضرورت ہے ؟

      اس سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اس وقت گھبرانے کی ضرورت نہیں ہے، لیکن ہمیں مزید چوکنا رہنے کی ضرورت ہے۔ ہمیں یہ دیکھنا ہوگا کہ کیا کسی مریض کو جلد کے مسائل ہیں، جلد کے زخم جو کہ منکی پاکس وائرس کے انفیکشن کی طرح نظر آتے ہیں۔ انہیں ابتدائی مرحلے میں آئیسولیٹ کر دینا چاہئے اور بروقت ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہئے تاکہ پی سی آر ٹیسٹ کیا جا سکے ۔

      انہوں نے مزید کہا کہ ہمارے پاس بہت سے مریض افریقی براعظم سے ریفر کئے جاتے ہیں۔ ہم ان کے رویے، روابط، خاندان، کام کی جگہ اور ان کے گھریلو رابطوں پر توجہ مرکوز کرتے ہیں۔ ان تینوں مریضوں کا تعلق افریقی ممالک سے ہے اور وہ کافی عرصے سے دہلی میں رہ رہے تھے، اس لئے ہم ان کے رابطوں، ان کے دوست حلقے کو تلاش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: