ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

کسان تنظیموں نے سپریم کورٹ کی کمیٹی کو کیا مسترد، کہا- اس میں سبھی حکومت کے لوگ

Farm Laws: سپریم کورٹ نے تینوں متنازعہ قوانین (Farm Laws) کو نافذ کرنے پر روک لگانے کے ساتھ ہی کسانوں کے خدشات پر تبادلہ خیال کرنے کے لئے ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی کی تشکیل کی ہے۔

  • Share this:
کسان تنظیموں نے سپریم کورٹ کی کمیٹی کو کیا مسترد، کہا- اس میں سبھی حکومت کے لوگ
کسان تنظیموں نے سپریم کورٹ کی کمیٹی کو کیا مسترد، کہا- اس میں سبھی حکومت کے لوگ

نئی دہلی: مرکزی حکومت کے زرعی قانون کی مخالفت کر رہی کسان تنظیموں (Farmer Unions) نے سپریم کورٹ کے کمیٹی بنانے کے فیصلے کو تسلیم کرنے سے انکار کردیا ہے۔ تنظیموں کا کہنا ہے کہ سپریم کورٹ (Supreme Court) کی کمیٹی میں سبھی لوگ حکومت کے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ حکومت نے شرارت کی ہے۔ تنظیموں نے کہا کہ وہ کمیٹی کے سامنے نہیں جائیں گے۔ کسان تنظیموں نے کمیٹی کو مسترد کردیا ہے۔ کرانتی کاری کسان یونین کے سربراہ درشن پال نے کہا ہم نے کل دیر رات پریس ریلیز جاری کرکے کہا تھا کہ ثالثی کے لئے سپریم کورٹ نے کمیٹی بنانے کی تجویز کو منظور نہیں کریں گے۔ ہم یہ خود اعتمادی سے کہہ سکتے ہیں کہ مرکز، سپریم کورٹ کے کندھوں سے بھار ہٹانے کے لئے اس کے ذریعہ کمیٹی کی تشکیل کرے گا۔


بھارتیہ کسان یونین (آر) کے بلبیر سنگھ راجے وال نے کہا کہ ہم نے کل ہی کہا تھا کہ ہم کسی بھی کمیٹی کے سامنے نہیں جائیں گے۔ ہمارا احتجاج پہلے کی طرح ہی جاری رہے گا۔ کمیٹی میں سبھی لوگ حکومت کے حامی ہیں اور وہ حکومت کے قوانین پر صفائی دینے والے ہیں۔ کسان لیڈر درشن پال نے کہا کہ کل ہم لوہڑی منا رہے ہیں، جس میں ہم تین زرعی قوانین کو جلائیں گے، 18 جنوری کو مہیلا دیوس ہے اور 20 جنوری کو گرو گووند سنگھ کا پرکاش اتسو ہے۔ 26 جنوری کو ہماری پریڈ نہیں ہو، اس لئے اس کے خلاف بھی عدالت میں پٹیشن داخل کی گئی ہے، اس پر پیر کو سماعت ہوگی۔


کسان تنظیموں نے کیا پارلیمنٹ میں چرچا کا مطالبہ


کسان لیڈر درشن پال نے کہا کہ خالصتان کا موضوع ہو یا کوئی اور موضوع، حکومت ہمیں توڑنے کی کوشش کر رہی ہے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ حکومت پہلے دن سے ہی ایسا کر رہی ہے۔ درشن پال نے کہا کہ پارلیمنٹ نے قانون بنایا ہے، اس لئے پارلیمنٹ میں راجیہ سبھا میں اس پر چرچا ہونی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ کمیٹی نہ بنائی جائے اور کوئی باہری کمیٹی بھی اس میں نہ آئے۔

وکیلوں کے عدالت نہ پہنچنے کو لے کر درشن پال نے کہا کہ آج جو 4 وکیل نہیں پہنچے، وہ اس لئے کیونکہ کل جو لسٹ آئی تھی، وہ حکم کے لئے آئی تھی، یعنی آج سماعت نہیں ہونے والی تھی، اس لئے وکیل نہیں گئے۔ واضح رہے کہ سپریم کورٹ کی طرف سے تشکیل کی گئی 4 رکنی کمیٹی میں جتیندر سنگھ مان (بھارتیہ کسان یونین)، ڈاکٹر پرمود کمار جوشی (انٹرنیشنل پالیسی ہیڈ)، اشوک گلاٹی (زرعی ماہر) اور انل شیتکاری (شیتکاری سنگٹھن، مہاراشٹر) شامل کیا گیا ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Jan 12, 2021 06:35 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading