ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

ہندوستان - چین سرحد پر کشیدگی پر فاروق عبداللہ نے ہندوستان کو دیا یہ مشورہ، کہی یہ بڑی بات

سابق مرکزی وزیر فاروق عبداللہ نے بھارت کی موجودہ حکومت کو مشورہ دیا کہ وہ اپنے تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ دوستانہ اور خوشگوار تعلقات بنائے اور آپسی رشتوں کو مضبوط سے مضبوط تر کرنے کی طرف توجہ مبذول کرائے۔

  • UNI
  • Last Updated: Jun 19, 2020 01:45 PM IST
  • Share this:
ہندوستان - چین سرحد پر کشیدگی پر فاروق عبداللہ نے ہندوستان کو دیا یہ مشورہ، کہی یہ بڑی بات
جنگ و جدل کسی مسئلے کا حل نہیں: فاروق عبداللہ

سری نگر: نیشنل کانفرنس کے صدر و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے ہند - چین کے درمیان لداخ کی سرحد پر بڑھتی ہوئی کشیدگی، تناﺅ اور جنگ جیسی صورتحال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے دونوں ملکوں کے سربراہوں اور فوجی قیادت سے اپیل کی کہ وہ جنگ کا راستہ ترک کرکے امن بات چیت شروع کریں۔ انہوں نے کہا کہ مشکل سے مشکل مسئلے کا حل صرف اور صرف امن بات چیت اور افہام و تفہیم میں مضمر ہے جبکہ جنگ و جدل، لڑائی جھگڑا تباہی اور بربادی کے سوا کچھ بھی ہے۔

فاروق عبداللہ نے بھارت کی موجودہ حکومت کو مشورہ دیا کہ وہ اپنے تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ دوستانہ اور خوشگوار تعلقات بنائے اور آپسی رشتوں کو مضبوط سے مضبوط تر کرنے کی طرف توجہ مبذول کرائے۔ انہوں نے کہا کہ دوست بدلے جاسکتے ہیں لیکن پڑوسی نہیں۔ پڑوسی ممالک کے ساتھ چپقلش، رنجشیں ، تلخیاں اور جنگ و جدل امن اور ترقی میں حائل ہوتی ہیں۔


فاروق عبداللہ نے بھارت کی موجودہ حکومت کو مشورہ دیا کہ وہ اپنے تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ دوستانہ اور خوشگوار تعلقات بنائے۔
فاروق عبداللہ نے بھارت کی موجودہ حکومت کو مشورہ دیا کہ وہ اپنے تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ دوستانہ اور خوشگوار تعلقات بنائے۔


ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے مرکزی حکومت کو یہ بھی مشورہ دیا کہ وہ خطے میں امن کو مزید بگڑنے سے بچانے کے لئے اقدامات اٹھائے۔ اُن کا کہنا تھا کہ ہٹ دھرمی اور سخت گیر پالیسی کو ترک کرنا وقت کی اہم ضرورت ہے اور ملک کے اندر عوام کے ساتھ جاری سخت گیر پالیسی ختم کی جانی چاہئے، جموں وکشمیر کے عوام کے آئینی اور جمہوری حقوق بحال کئے جانے کے ساتھ ساتھ پاکستان کے ساتھ بھی امن بات چیت کی بھی شروعات کی جانی چاہئے کیونکہ گذشتہ 72 سے دونوں ممالک کی دشمنی کا خمیازہ آر پار جموں وکشمیر کے عوام بھگت رہے ہیں۔
فاروق عبداللہ نے کہا کہ ایک ایسے وقت میں جب پوری دنیا کورونا وائرس کی لپیٹ میں آگئی ہے، اس وقت ساتھ مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ خطے کے تمام ممالک کو مل کر اس وباء کے تدارک کے لئے کام کرنا چاہئے اور ایک دوسری کی مدد کیلئے آگے آنا چاہئے۔
First published: Jun 18, 2020 11:37 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading