سی بی آئی کے سابق چیف آلوک ورما نے صدر کو خط لکھنے کی میڈیا رپورٹ کو کیا خارج

بتادیں کہ سی وی سی کی رپورٹ میں آلوک ورما کے خلاف کئی الزام لگائے گئے تھے۔ آلوک ورما کو سب سے پہلے سی بی آئی ڈائریکٹر کے عہدے سے اکتوبر 2018 میں سی وی سی کی سفارش کے بعد ہٹا دیا گیا تھا۔

Oct 04, 2019 07:58 AM IST | Updated on: Oct 04, 2019 08:12 AM IST
سی بی آئی کے سابق چیف آلوک ورما نے صدر کو خط لکھنے کی میڈیا رپورٹ کو کیا خارج

سی بی آئی عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد 2019 میں آلوک ورما نے استعفیٰ دے دیا تھا۔

سی بی آئی کے سابق چیف آلوک ورما نے یڈیا میں آئی اس خبر کو خارج کیا جس میں کہا گیا ہے کہ انہوں نے اپنے خلاف جانچ کے سلسلے میں صدر رامناتھ کووند کو خط لکھ کر اسے مبینہ پر 'سیاسی انتقام' قرار دیا تھا۔ آلوک ورما نے اسے نیوز چینل کی 'سوچی سمجھی' بدمعاشی بتایا۔

بتادیں  کہ  1979 بیچ  کے اے جی ایم یو ٹی کیڈرکے آئی پی ایس افسر آلوک ورما نے ایک بیان جاری کرکے کہا کہ 'چینل کے پاس مبینہ خط کی من گھڑت باتیں ہیں، جو میں نے لکھی ہی نہیں ہیں'۔ انہوں نے اسے ان کے اور حکومت کے درمیان دوری پیدا کرنے کی چینل کی سوچی سمجھی بدمعاشی بتایا۔ ساتھ ہی کہا کہ نیوز چینل نے ان کے خلاف 'غلط اور شرارت سے بھر پوررپورٹ' دکھائی ہے۔

غور طلب ہے کہ نیوز رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا کہ وزارت داخلہ نے محکمہ جاتی جانچ کے سلسلے میں ان کے خلاف جو چارج شیٹ پیش کی تھی آلوک ورما نے انہیں واپس لینے کے سلسلے میں صدر رامناتھ کووند کو خط لکھا تھا اور اسے سیاسی انتقام کا نتیجہ بتایا تھا۔

بتادیں کہ سی وی سی کی رپورٹ میں آلوک ورما کے خلاف کئی الزام لگائے گئے تھے۔ آلوک ورما کو سب سے پہلے سی بی آئی ڈائریکٹر کے عہدے سے اکتوبر 2018 میں سی وی سی کی سفارش کے بعد ہٹا دیا گیا تھا۔ اس کے بعد 10 جنوری 2019 کو آلوک ورما کو سی بی آئی کے چیف کے عہدے ہٹاکر فائر سروسز، سول ڈفینس اور ہوم گارڈ کا ڈی جی بنایا گیا تھا۔  وزیر اعظم نریندر مودی، کانگریس لیڈر ملک ارجن کھڑگے اور جسٹس اے کے سیکری پر مشتمل سلیکشن کمیٹی میں یہ فیصلہ لیا گیا تھا۔ اس کے بعد ورما نے انڈین پولیس سروس سے استعفیٰ دے دیا تھا۔

Loading...

Loading...