உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Fuel Price Hike:پھر بڑھ سکتی ہے پٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں، تیل کمپنیوں کو ہورہا ہے نقصان، لوگوں پر پھر گرے گی مہنگائی کی مار

    پھر بڑھیں گی پٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں۔

    پھر بڑھیں گی پٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں۔

    Fuel Price Hike: ماضی میں ہونے والے اضافے کی وجہ سے مہنگائی پر اثر واضح طور پر نظر آرہا ہے۔ معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ مارچ اپریل میں ہونے والے اضافے کا اثر مئی 2022 کے مہنگائی کے اعداد و شمار پر واضح طور پر نظر آرہا ہے۔ ایسی صورتحال میں مزید اضافے سے مہنگائی مزید خطرناک ہو سکتی ہے۔

    • Share this:
      Fuel Price Hike: ایسا لگتا ہے کہ تیل کمپنیاں 6 اپریل سے پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں اضافے پر لگائے گئے وقفوں کو دوبارہ شروع کر سکتی ہیں۔ سرکاری آئل کمپنیوں کے ذرائع کا کہنا ہے کہ بین الاقوامی مارکیٹ میں خام تیل کی بنیاد پر انہیں اس وقت پٹرول پر 10 روپے اور ڈیزل پر 25 روپے فی لیٹر کا نقصان ہو رہا ہے۔ ایسے میں اگر ان دونوں مصنوعات کی خوردہ قیمتیں نہیں بڑھائی گئیں تو تیل کمپنیوں کو بھاری نقصان اٹھانا پڑ سکتا ہے۔

      عوام پر بوجھ پڑنا طئے
      ایسے میں اگر مرکزی حکومت اور ریاستی حکومتیں مل کر چارجز میں کٹوتی کریں تو ہی عام آدمی کو راحت مل سکتی ہے، ورنہ عوام پر بھاری اضافے کا ایک اور بوجھ ضرور پڑے گا۔ سرکاری تیل کمپنیوں نے 22 مارچ سے 6 اپریل 2022 تک گھریلو مارکیٹ میں پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ کیا تھا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Target Killings In Kashmir:امرناتھ یاترا میں سیکورٹی پر آج دہلی میں ہوگا غور

      مہنگائی پر اثر صاف
      ماضی میں ہونے والے اضافے کی وجہ سے مہنگائی پر اثر واضح طور پر نظر آرہا ہے۔ معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ مارچ اپریل میں ہونے والے اضافے کا اثر مئی 2022 کے مہنگائی کے اعداد و شمار پر واضح طور پر نظر آرہا ہے۔ ایسی صورتحال میں مزید اضافے سے مہنگائی مزید خطرناک ہو سکتی ہے۔ یہ بھی معیشت کے لیے اچھی علامت نہیں ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      OIC کے بیان پر ہندوستان کا شدید ردعمل،کہا-’فرقہ وارانہ ایجنڈہ‘ نہ چلائیں

      بڑھے گی مہنگائی
      ایسی صورتحال میں خوردہ قیمتوں پر موجودہ موقوف زیادہ دیر تک برقرار نہیں رہ سکتا۔ تاہم یہ کہنا مشکل ہے کہ ترقی کا چکر کب شروع ہوگا۔ دوسری جانب لاگت میں اضافے کی وجہ سے نجی شعبے کی ریفائنریز نے ملک میں ڈیزل کی فروخت بند کردی ہے کیونکہ ان کی قیمت اور سرکاری تیل کمپنیوں کی قیمتوں میں بڑا فرق ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: