உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    گوتم گمبھیر کو ملا ISIS کا دوسرا دھمکی آمیز ای میل ، کہا : ہم تمہیں مارنا چاہتے ہیں

    گوتم گمبھیر کو ملا ISIS کا دوسرا دھمکی آمیز ای میل ، کہا : ہم تمہیں مارنا چاہتے ہیں (Gautam Gambir/Instagram)

    گوتم گمبھیر کو ملا ISIS کا دوسرا دھمکی آمیز ای میل ، کہا : ہم تمہیں مارنا چاہتے ہیں (Gautam Gambir/Instagram)

    Gautam Gambhir Threatening Email: بھارتیہ جنتا پارٹی کے ممبر پارلیمٹ گوتم گمبھیر نے بدھ کو دوسرا دھمکی آمیز ای میل ملنے کے بعد دہلی پولیس کے پاس شکایت درج کرائی ہے ۔ گمبھیر کے مطابق انہیں دوسرا ای میل “isiskashmir@gmail.com” آئی ڈی سے ملا ہے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : بھارتیہ جنتا پارٹی کے ممبر پارلیمٹ گوتم گمبھیر نے بدھ کو دوسرا دھمکی آمیز ای میل ملنے کے بعد دہلی پولیس کے پاس شکایت درج کرائی ہے ۔ گمبھیر کے مطابق انہیں دوسرا ای میل “isiskashmir@gmail.com” آئی ڈی سے ملا ہے ۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق اس ای میل میں لکھا ہے کہ ہم تمہیں مارنا چاہتے تھے ، لیکن تم کل بچ گئے ۔ اگر تم اپنی زندگی اور اپنے کنبہ سے پیار کرتے ہو تو سیاست اور کشمیر کے معاملہ سے دور رہو ۔ اتنا ہی نہیں اس ای میل میں گمبھیر کے گھر کے باہر کا ویڈیو بھی شوٹ کرکے بھیجا گیا ہے ۔

      اس سے پہلے بدھ کو ہی مشرقی دہلی سے بی جے پی ممبر اسمبلی نے آئی ایس آئی ایس کشمیر کی جانب سے دھکی آمیز ای میل ملنے کے بعد دہلی پولیس کا رخ کیا تھا ۔ دھمکی ملنے کے بعد ان کی دہلی میں واقع رہائش گاہ کے باہر سیکورٹی سخت کردی گئی ہے ۔ افسران نے بتایا کہ پولیس ڈپٹی کمشنر ( وسطی) کو بھیجی گئی ایک شکایت میں کہا گیا ہے کہ منگل کو رات تقریبا نو بج کر 32 منٹ پر گوتم گمبھیر کے آفیشیل ای میل آئی ڈی پر آئی ایس آئی ایس کشمیر کی طرف سے جان سے مارنے کی دھمکی ملی ۔

      افسران نے بتایا کہ ای میل میں لکھا ہے کہ ہم تمہیں اور تمہارے کنبہ کو جان سے مار دیں گے ۔ انہوں نے بتایا کہ شکایت میں معاملہ کا نوٹس لینے ، کیس درج کرنے اور سیکورٹی کے انتظامات کرنے کی اپیل کی گئی ہے ۔ پولیس اسپیشل سیل کی جانب سے گوگل کو خط لکھ کر اس ای میل آئی ڈی کے آپریٹر سمیت دیگر متعلقہ جانکاری مانگی گئی ہے ، جس سے دھمکی آمیز پیغام بھیجا گیا ہے ۔

      اسپیشل سیل کے ایک سینئر پولیس افسر نے بتایا کہ اس سے اس آلہ کے آئی پی ایڈریس کے بارے میں جانکاری مل پائے گی ، جس سے دھمکی آمیز ای میل بھیجا گیا ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: